Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » پوھوزانت » شاعر ملیرٹ ملادادرحمن۔۔۔ مشتاق رسول

شاعر ملیرٹ ملادادرحمن۔۔۔ مشتاق رسول

مادر ملیر صرف اپنی سرسبزی و شادابی کے حوالے سے ہی جانی پہنچانی نہیں جاتی، بلکہ ملیر نے ایسے ذی فہم و ذی شعور بیٹوں کو بھی پیدا کیا ہے، جنہوں نے نہ صرف اپنی اقدار اور تہذیب و تمدن کو عزیز رکھتے ہوئے زندگی کی گوناگوں ضرورتوں کو احسن طریقے سے پورا کیا ہے، بلکہ مختلف شعبہ ہائے حیات میں اپنے کارناموں سے اپنی دھرتی کی پہچان بھی بنے ہیں۔ ملیر کی ایسے قداور شخصیات ہی ملیر کی زینت ہیں۔

ملیر کے متعد بزرگوں کو شاعر کی حیثت سے بھی شہرت ملی ہے۔

ملیر کے کئی ایسے شعراء   ہیں، جن کی شاعری کتابی صورت میں تو موجود نہیں ہے مگر آج بھی لوگ ان کے نام سن کر انہیں بحیثیت شاعر یاد کرکے ان کی شاعری کو زبانی دہرا کر انہیں داد دیتے ہیں۔ ان شعراء   میں ملا داد رحمٰن  بھی شامل ہیں۔

ملا داد رحمٰن نے اپنے والد ملا حسن کی صحبت میں رہ کر شاعری کی دنیا میں قدم رکھا۔  ملا حسن کے بارے میں کہتے ہیں کہ آپ فارسی زبان کے بہت بڑے شاعر تھے۔ آپ کی شاعری زمانہ ماضی میں ریڈیو پاکستان سے گویوں کی آواز میں نشر ہوئی۔ ان کا ایسا ہی ایک شعر ہے:

”بیا بلبل سخن چینم،

دریں دنیا چہ مے بینم،

نگوش ملا من گویم،

ترارا طلب جویم،

یک روز من گردشے رفتم

گلستانء  َ گلے دیدم“

 

ملا داد رحمٰن اپنے والد صاحب کی صحبت کے اثرات لیے بچپن میں ہی شعر و شاعری کی طرف مائل ہوئے۔ ملا داد رحٰمن نے گزرتے وقت کے حالات و افکار اپنے آپ پر بیتے لمحات اور معاشرتی گرد و پیش کی عکاسی کے لیے شاعری کو ہی اپنے اظہار کا ذریعہ بنایا۔

ملا داد رحمٰن اپنی غربت و تنگدستی سے پریشاں نہیں رہے۔ اس حوالے سے ان کے ایک شاعری کے کچھ مصرعے ان کی پرخلوص زندگی اور اللہ سے قربت اور وابستگی کی ترجمانی کرتے ہیں۔

 

”دادو غریبی شان کنت

عرض گَوں وتی رحمان کنت

وت مشکلاں آسان کنت

شاہیں خداء  َ فرمان کنت

دلبر مسرور سامان کنت

ترا دائم وتی مہمان کنت

 

ملا کی شاعری میں لہجے کی نرمی و سادگی تشبیہ اور مثالوں کی نازکی، قدرتی نظاروں کی منظر کشی کے حوالے سے ہر ایک شعر اپنی جداگانہ نزاکت سے پڑھنے اور سننے والے پر ایک گہرا اثر چھوڑ جاتا ہے۔

ملا ایک شعر میں محبوب کی خوبصورتی، مسکراہٹ، دوست کی دوری اور قریب ہونے کو جنت کی خوشنمائی اور دوزخ کی گراں ساعت کو مثال و تشبیہ اور رنگ ریزی کو ایک خوبصورت انداز میں بیان کرتا ہے۔

”دوری تئی او دل رْبا چہ دوزخء  َ کمتر نہ انت،

بے تو منی یک ساعتے چہ قیامتء  َ کمتر نہ انت

بیا تو شپانی ماہ تاب تہاریں بے تئیگا جہاں،

لیلٰی رخء  ِ رڑن تئی چہ ماہء  ِ چاردہیء  َ کمتر نہ انت۔

تیرے ہجر کی ساعتیں عذاب دوزخ سے کم نہیں،

تہمارے بنا میرا اک پل قیامت سے کم نہیں۔

آجا اے میری راتوں کے مہتاب کہ ترے بغیر میرے جہاں میں اندھیرا ہے،

اے ماہ پیکر تمہارے چہرے کی روشنی چودھویں کے چاند سے کم نہیں۔

ملا نے زندگی کے ہر پہلو پر شاعری کی ہے۔ ثقافتی پہلو  کو اپنی شاعری میں سموتے ہوئے وہ شادی بیاہ کے موقع پر رسم و رواجوں کو برقرار رکھنے کی عکاسی اپنی شاعری میں اس طرح کرتے ہیں:

 

جناں شما مچ بئیت طرز ء  ِ جلوسی

کنے ادا رسمء  ِ بلوچی

بیبندیت دجلہء  ِ شاریں عروسی

بنادت گلء  َ کنجء  ِ خاموشی

بیا ات خادمیں خدمت گذاراں

بمین ات عمبریں بْو عطاراں

بہ سینگار ات گلء  َ گل زاراں

گوں عروسی زینتء  ْ نقش نگاراں

مروچی دل منی شادء  ْ قراریں

 

یہ بات بھی غور طلب ہے کہ حسن و عشق حسن و جمالیات، محبوب کی نیم باز آنکھیں، گھنی زلفیں، محبوب کی مسکراہٹ۔لب شکر و شیریں شاعری اور ادب کی زینت ہیں۔ ملا داد رحمٰن نے اپنی شاعری میں شاعری کے لوازمات اور ادبی تقاضوں کاخاص خیال رکھا ہے۔ ملا ایک غزل میں محبوب کی بکھری زلفوں، نیم باز آنکھوں اور محبوب کے نازک ہاتھوں کا ذکر یوں کرتا ہے:

زلفاں مہ شنگین ظالم دنیا تہار بیت،

ظالم مکن چو سینگار دل م? بیقرار بیت۔۔

چم تئی خماراں آسکی ابد چو تیزیں خنجرء  َ،

چارے تو یک نگا? ہر کَس شکار بیت۔۔

نازرکیں دستاں دلبر دئے تو منا گلاسے،

تئی عشقء  ِ شرابء  َ نوشی دادو خمار بیت

 

پْر آشوب شاعر میر گل خان نصیر ملا داد رحمٰن کی شاعری کا ذکر اپنی کتاب بلوچی عشقیہ شاعری صفحہ نمبر 74 اور 75 میں اس طرح کرتے ہیں: ”ملا داد رحمٰن ملیری کو اپنی محبوبہ سے گلہ ہے کہ اسے غم کیوں دیئے ہیں.. کہتا ہے:

 

دلبر تئی بازیں غماں،

کاینت چو ماری لڑاں

گیش انت زہیر دم پہ دمان

برتش منی امن ء  ْ امان

نالاں چو بلبلء  َ نیم شپاں

 

ملا داد رحمٰن اپنی ایک دوسری نظم میں اپنے محبوب کو منانے کے لیے خوشامد کی زبان اختیار کرتا ہے اور بڑی خوبصورتی سے اپنی محبوبہ کو اپنی طرف متوجہ کرتے ہوئے کہتا ہے:

 

جانی منی جان و جگر!

باغانی وش بوئیں ثمر

لیلا نیادیں لب شکر

اچ من مبے تو بے خبر۔۔

 

بلند پایہ شاعر میر گل خان نصیر کے حوالے سے ہمیں پتہ چلتا ہے کہ ملا داد رحمٰن کی شاعری کے مجموعے قلمی نسخے کی صورت میں موجود تھے، جن میں سے ایک مجموعہ 1977ع میں آنے والے سیلاب کی نذر ہوا اور دوسرا دست برد ہوگیا

 

بہرحال الفاظ کی قدر و قیمت سے بے بہرہ اس  معاشرے میں یوسف انیس جیسے قدر دان و احساس مند افراد موجود ہیں جنہوں نے بڑی محنت سے ملا داد رحمٰن کی شاعری کو لوگوں سے  زبانی سن کر چندنیں بادگیر کے نام سے ابابگر کلمتی اکیڈمی کے تعاون سے شایع کرواکر اپنا حق ادا کیا۔ مگر اس زمرے میں ان گنت تخلیق کار ایسے ہیں، جو اشاعت کے حقدار تو ضرور تھے لیکن ان کا فن اس کا محتاج ہرگز نہ تھا، یہی وجہ ہے کہ وہ آج بھی قدردانوں کے دلوں پر اپنے الفاظ کی صورت میں نقش ہیں

 

ملا داد رحمٰن 22 جون 1993ع رحلت فرما گئے مگر ملا کی شاعری آج بھی ملیر کی فضاؤں میں گونج کر کہہ رہی ہے؛ اے لوگو ڈھونڈ لو وہ رفتگان ملیر، جو آپ کی ناقدری کی انتہاؤں میں سپردِ خاک ہوئے۔۔۔

Spread the love

Check Also

قدرتی آفات اور حکمران طبقات ۔۔۔ جمیل بزدار

وہ ندی کے کنارے ایک کچے مکان میں رہتا تھا۔  ندی کا پانی وہ اپنے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *