Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ میر ساگر

غزل ۔۔۔ میر ساگر

ایوانوں کا شور   سنائی دیتا ہے

حیوانوں کا شور سْنائی دیتا ہے

 

زنجیروں کی آوازیں چْھو جاتی ہیں

زندانوں کا شور سْنائی دیتا ہے

 

میرے اندر گْل بْوٹے سے لہکے ہیں

گْلدانوں کا شور سْنائی دیتا ہے

 

اندیشوں کی سانسیں چلنے لگتی ہیں

طوفانوں کا شور سْنائی دیتا ہے

 

روز دیے کی لو سے بھپکی اْٹھتی ہے

پروانوں کا شور سْنائی دیتا ہے

 

شاید دل سے میر کسی نے ہجرت کی

ویرانوں کا شور سْنائی دیتا ہے

Spread the love

Check Also

کاکا صنوبر حسین/شان گل

تہ خوشحال ءَ گھولئے خوشحال افغان اث کہ خان تاں محمودءَ ہاغہ کنئے ہماں مسلمان ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *