Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » Javed Iqbal (page 20)

Javed Iqbal

دفنا دو

شروع شروع کاانسان تو بس ”چُننے والا“ جاندار تھا۔وہ جنگلی بیر اور دیگر پھل چُن کر کھاتا۔ مزید ترقی کی تو پتھر اور ڈنڈے جیسے فرسودہ ہتھیاروں سے شکار بھی کرنے لگا۔ کوئی جائیداد، ملکیت نہ تھی۔ پتھر کا زمانہ، قدیم کمیونزم کا زمانہ۔طویل زمانہ۔ ظاہر ہے ایک مخصوص علاقے میں یہ نعمتیں اُس کی آبادی بڑھتے رہنے کے ساتھ ...

Read More »

1st Page November 2021

Read More »

Back Page November 2021

Read More »

November 2021

Read More »

اللہ بخش بزدار ۔۔۔ دریدہ  ئے ناما

من جیذاں،سوزغاں لکاں گلاباں،پرپغاں رنگاں دریناں زیمراں  لکاں مں انجیراں پتن تاخیں یا زین ئے پلپلاں لکاں پخیراں،رولیاں لکاں مں بالاچے،نقیبوے یا چُکی لولی اے لکاں مں زہریں موتکے لکاں یا نوخیں ہالوے لکاں امیدانی دلے لکاں ودارئے دیر پاندیں پادروش ئے قصواں لکاں گوشئے ہمروش کسے کئے مئیں ہر حرفئے زواں بریث و چماں کور کاں کلی

Read More »

میر ساگر

ساہ سَک با نکھرے نیست شَک بانکھرے   تئی نظر  نیک بات کمّے جَک!  بانکھرے   ما نہ وانوں جْزاں مئے سبق  بانکھرے   پَمّا  تئی  مْسکگے یار!  لَکھ بانکھرے   ما دی حقدار تئی او  مئے حق بانکھرے   کْل شمشت اَنت منا لال! یک بانکھرے   میر   بْرتہ   غماں سبز رک  بانکھرے

Read More »

غزل ۔۔۔ ڈاکٹر منیر رئیسانی

آخری خواب محبت ہم ہیں دیکھ لو ہم کو غنیمت، ہم ہیں   ریزہ ریزہ وجود ہیں لیکن ہم سمجھتے ہیں سلامت،ہم ہیں   رقص ہو یا ہو شعرِ شور انگیز وحشتِ شوق کی قیمت،ہم ہیں   جابجا چپ کی بانسری باجے دم بخود عکس کی صورت،ہم ہیں   ایک چبھتی ہوئی کرچی تو،ہے درد سہتی ہوئی خلقت،ہم ہیں   ...

Read More »

بیا دمانے بِنند گپ و گالے کناں ۔۔۔۔ وھاب شوھاز

بیا  دمانے بِنند  گپ و  گالے کناں وابے نوکیں گؤپاں پچ ھیالے کناں   زانی بندے کناں   کاپر ئے   ساھگا چے ھبر،  نوبتانی  بیا  ھالے کناں   قرنئے دراجیں گمانی گشاں قصّہاں روچاں ماہے کناں ماہء  َ سالے کناں   مئے دلا گیرکاینت دمگ، مچکدگ بیا  کپوتانی  ہمبراہا   بالے کناں   گوں زئیرئے سروزا گوں درپئے  نلا سرشپا  ...

Read More »

غزل ۔۔۔  شکیل حیدر

مدتوں بعد کھلی مجھ پہ حقیقت کیسی دل پہ اتری مرے درد کی آیت کیسی   آج کیوں تیشہ حسرت نے تراشا ہے جنوں آج آنکھوں میں اُتر آئی ہے وحشت کیسی   فی زمانہ نہ کرو ہم سے رفاقت کا سوال جب مفادات الگ ہوں تو رفاقت کیسی   کون اب اس کا خسارے میں خریدار بنے سرکا سودا ...

Read More »

موم بہاتی آنکھیں ۔۔۔  علی زیوف

تیرہ بخت لوگ خستہ مکانوں کی کہگل دیواروں پہ خوشی کی گاچنی پوتنا چاہتے ہیں نہیں دیکھتے موم بہاتی آنکھوں کے اوزانوں میں اداسی قیام کرتی ہے۔ کوبہ سے کتنی دلکشی دل کی غیر ہموار چھت پہ کوٹ کر بھرنے کے لیے بوسیدہ پیراہن کو پیوند لگانے میں قبر کا تختہ بنانے میں لگتی ہے فسانہ بنی فلک بوس عمارتیں ...

Read More »