*

 

 

فاقوں سے تنگ آئے تو پوشاک بیچ دی

عریاں ہوئے تو شب کا اندھیرا پہن لیا

 

گرمی لگی تو خود سے الگ ہو کے سو گئے

سردی لگی تو خود کو دوبارہ پہن لیا

 

بھونچال میں کفن کی ضرورت نہیں پڑی

ہر لاش نے مکان کا ملبہ پہن لیا

 

بیدلؔ لباسِ  زیست بڑا دیدہ زیب تھا

اور ہم نے اس لباس کو الٹا پہن لیا

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*