Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 9)

شیرانی رلی

October, 2021

  • 14 October

    غزل ۔۔۔ ڈاکٹر منیر رئیسانی

    آخری خواب محبت ہم ہیں دیکھ لو ہم کو غنیمت، ہم ہیں   ریزہ ریزہ وجود ہیں لیکن ہم سمجھتے ہیں سلامت،ہم ہیں   رقص ہو یا ہو شعرِ شور انگیز وحشتِ شوق کی قیمت،ہم ہیں   جابجا چپ کی بانسری باجے دم بخود عکس کی صورت،ہم ہیں   ایک چبھتی ہوئی کرچی تو،ہے درد سہتی ہوئی خلقت،ہم ہیں   ...

  • 14 October

    بیا دمانے بِنند گپ و گالے کناں ۔۔۔۔ وھاب شوھاز

    بیا  دمانے بِنند  گپ و  گالے کناں وابے نوکیں گؤپاں پچ ھیالے کناں   زانی بندے کناں   کاپر ئے   ساھگا چے ھبر،  نوبتانی  بیا  ھالے کناں   قرنئے دراجیں گمانی گشاں قصّہاں روچاں ماہے کناں ماہء  َ سالے کناں   مئے دلا گیرکاینت دمگ، مچکدگ بیا  کپوتانی  ہمبراہا   بالے کناں   گوں زئیرئے سروزا گوں درپئے  نلا سرشپا  ...

  • 14 October

    غزل ۔۔۔  شکیل حیدر

    مدتوں بعد کھلی مجھ پہ حقیقت کیسی دل پہ اتری مرے درد کی آیت کیسی   آج کیوں تیشہ حسرت نے تراشا ہے جنوں آج آنکھوں میں اُتر آئی ہے وحشت کیسی   فی زمانہ نہ کرو ہم سے رفاقت کا سوال جب مفادات الگ ہوں تو رفاقت کیسی   کون اب اس کا خسارے میں خریدار بنے سرکا سودا ...

  • 14 October

    موم بہاتی آنکھیں ۔۔۔  علی زیوف

    تیرہ بخت لوگ خستہ مکانوں کی کہگل دیواروں پہ خوشی کی گاچنی پوتنا چاہتے ہیں نہیں دیکھتے موم بہاتی آنکھوں کے اوزانوں میں اداسی قیام کرتی ہے۔ کوبہ سے کتنی دلکشی دل کی غیر ہموار چھت پہ کوٹ کر بھرنے کے لیے بوسیدہ پیراہن کو پیوند لگانے میں قبر کا تختہ بنانے میں لگتی ہے فسانہ بنی فلک بوس عمارتیں ...

  • 14 October

    میر ساگر

    ترانگے   تئی  زْرت  اَندر  بَست  ما اَبجد ئے  ڈَکّے  جَت و  دَر  بَست  ما   اَنترے  اسمے  بَلاہیں   بَست   بِی؟ شاہ ئے   فرمان اَت  قَلندر  بَست ما   چابْکے زرد ا  جت و غم توس اِت اَنت اَژ مژاں  دَر  کپت  لَشکر ‘ بَست ما   شاعری   نْھ  گَڈّگی  لئیبے  نہ اِنت پْر جَت اَنت رَند ا  اے کاپَر بَست ...

  • 14 October

    بھوک ۔۔۔ کوثر جمال

    بھوک کے بیرحم موسم میں پیٹ سانس لینے کا ہنر سیکھ لیتا ہے یہ جینے کے واسطے آکٹوپس کی جون میں آ جاتا ہے جس کے کثیردست و پا فکر و خیال کے پودوں کو کشتِ ذہن سے اکھاڑ پھینکتے ہیں یہ احساس کا گلا گھونٹ دیتے ہیں اور بینائی کی آنکھیں نوچ لیتے ہیں —— پیٹ کا آکٹوپس سانس ...

  • 14 October

    سندھی غزل ۔۔۔ ڈاکٹر شیر مہرانڑیں /شرف شاد

    اپنے اپنے ضمیر کی آواز کون سنتا ہے ضمیر کی آواز   کون سنتا ہے آہ مسکین کی سُنتے سب ہیں امیر کی آواز   کوئی آواز قید ہے شاید وہ سنو تو اسیر کی آواز   ہر طرف نفرتیں ہی پلتی ہیں دو دلوں میں لکیر کی آواز   انقلابیوں کا گیت ہوتا ہے ایک قیدی زنجیر کی آواز

  • 14 October

    غزل ۔۔۔ ثمینہ راجا

    کون کہتا ہے فقیروں کو خزانے دیجے دُور ہٹ جائیے، بس دھوپ کو آنے دیجے وقت کی شاخ سے ٹوٹے ہوئے گل برگ ہیں ہم دُور تک دوشِ ہوا پر ہمیں جانے دیجے سنگ بستہ تو نہیں منزلِ ماضی پہ یہ دل اور غم دیجے اسے اور زمانے دیجے دائمی خواب ہے اور نیند نہیں ہے اَبدی اس مسافر کو ...

  • 14 October

    غلام ۔۔۔  حفیظ لونی

    ہم غلام ہیں فرسودہ نظام کے ہم غلام ہیں آئی ایم ایف کے ہم اتنے بے بس ہیں حفیظؔ ہم مالک پر غلام ہیں چوکیدار کے

  • 14 October

    نا دریافتہ  کْل ۔۔۔۔   کوثر جمال

    قرن ہا قرن بیت گئے تمھاری تلاش کے ہاتھوں میں گوہرِ مقصود نہیں آیا اچھا بتاو کیا تم نے اسے وہاں تلاش کیا جہاں وہ تھی ہاں، وہ حواس کے جنگل میں تھی مگر اس جنگل سے باہر بھی تھی تم اپنے اپنے علاقوں میں اسے ڈھونڈتے رہے وہ کسی قدر ان سبھی علاقوں میں تھی لیکن تم نے تو ...