Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 4)

شیرانی رلی

May, 2022

  • 11 May

    محمود فدا کھوسہ

    دِیا ہوا کا دل میں جب جلا سکو تو ساتھ دو یہ زندگی کا فاصلہ مٹا  سکو تو ساتھ دو   مِرے جو دل کا شوق اب بڑھا ہے یار جس قدر سمجھ سکو یہ حال اگر نبھا سکو تو ساتھ دو   کْھلا کہاں ہے در مِرا نظر کہاں ہٹی مِری گھڑی یہ انتظار کی مٹا سکو تو ساتھ ...

  • 11 May

    First May vibes

    ڈاکٹر منیر رئیسانی   روپے کی قدر گھٹتی جارہی ہے مرے کاندھوں پہ رکھا وزن بڑھتا جارہا ہے مشقت کے کڑے اوقات بے حد ہو رہے ہیں میرا حاصل، مری محنت کی الٹی سمت بڑھتا ہے بہت ہی دور (پر نزدیک) بازیگر ہی ایسے جو مجھ کو لوٹ کر ممنون بھی کرتے ہیں اپنا سنا ہے مجھ کو  وہ مقروض ...

  • 11 May

    غریو عوام ۔۔۔ محمد رفیق مغیری

    دڑداں مانیں غریو عوام نَیں درکار مارا ہمے نظام رمغیں ڈھوریں ڈولا کپتو زندا گزارغیں تھیوغا عوام ظلما زوراخ کھنغیں کپتو لْچاں نیستیں ایذا لغام جنگ و جدل لْٹ و پھل ایذا استیں صحو شام زوراخ وثی زر ئے زورا غریوا کھنغیں کپتو قتلام ڈیہے مڑدم گْڑنغ لافاں دری آں ملغیں ایذا انعام اُڑدو لشکر وزیریں استیں نیستیں ایذا کھس ...

  • 11 May

    فیض احمد فیض

    ہم محنت کش جگ والوں سے جب اپنا حصہ مانگیں گے اک کھیت نہیں، اک دیس نہیں ہم ساری دنیا مانگیں گے   یاں ساگر ساگر موتی ہیں یاں پربت پربت ہیرے ہیں یہ سارا مال ہمارا ہے، ہم سارا خزانہ مانگیں گے   جو خون بہا جو باغ اجڑے،جو گیت دلوں میں قتل ہوئے ہر قطرے کا ہر غنچے ...

  • 11 May

    غلامان غلاماں ہیں  ۔۔۔ ثروت زہرا

    غلامان غلاماں ہیں ہمیں تم آزما لو کہیں محنت کرالو کوئی بھی صورت نکالو غلاما ن غلاماں ہیں   ہماری لوریوں میں روٹیوں کی جاپ آتی تھی جوانی آئی تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس چولھے چکی سے اضافی تھی جو ہم نے قد اٹھایا تو زمان نے بھوک لادی تھی تنیں  یہ گردنیں کیسے؟ کہ جب افلاس نے مہروں کی  علت ہی مٹا ...

April, 2022

  • 23 April

    عالم ئے اِسرار ۔۔۔ اکبر بارکزئی

    کوہ باریں بچکندنت؟ گوات باریں گْڑنک بنت؟ نود باریں سرپد بنت؟ مور باریں سر شودنت؟   باریں پْل ہم گندنت؟ رَنگ ہم نپس کشّنت؟ روچ باریں تْنّگ بیت؟ ماہ باریں جاں کشّیت؟   آس باریں آپْس بیت؟ آپ واب ہم گِندنت؟ باریں سِنگ و ڈوک وڈَل چْک وپیر و ورنا بَنت؟ باریں مْہرگ و مشتک وپت وواب ہم زانَنت؟ باریں ...

  • 23 April

    نظم ۔۔۔ صفدر صدیق رضی

    میں اک قرطاسِ ابیض کی طرح انسان تھا (قرطاسِ ابیض کی طرح شفّاف) جانے کس گھڑی مجھ میں کہیں سے اک فرشتہ اور اک شیطان در آئے سو میں اک مستقل آماجگہ بنتا گیا مدت سے یہ دونوں مرے پیکر میں باہم برسرِ پیکار ہیں آپس میں یوں دست و گریباں ہیں کہ میرے آئینہ خانے میں صدیوں سے شکست ...

  • 23 April

    غزل ۔۔۔ حبیب الرحمان رند

    جی بھر کے جفا کرتے ہو، ہوتے ہو خفا بھی دیتے ہو کیا خوب پہ بے جرم سزا بھی   لبے طور سے اِس دور میں ہر شخص ہے تنہا محفل میں غنیمت ہیں نہ ارباب وفا بھی   بارود کی ہے بُو، نہیں پھول کی خوشبو اک بوجھ میرے ذہن پہ ہے بادِ صبا بھی   ڈر تے ہو ...

  • 23 April

    غزل  ۔۔۔  رخشندہ نوید

    چاند سوچوں کہ ستارے سوچوں جب کِسی شخص کے بارے سوچوں   کُنج گُل جائے ملاقات رکھوں یا کوئی موج، کنارے، سوچوں   کچھ مری اپنی انا حائل تھی کچھ مسائل تھے تمھارے، سوچوں   کیسے کچھ ربط بڑھایا جائے دِل اُسے کیسے پکارے، سوچوں   توُ کہاں ہو گا بھلا اس لمحے جب ہَوا زُلف سنوارے، سوچوں

  • 23 April

    واپسی ۔۔۔  فاطمہ حسن

    وہی کمرہ وہی گھر ہے جہاں خوشیوں بھرے کچھ دن گزارے تھے جہاں چھاؤں ہے اس پودے کی جس کو تم نے سینچا تھا جسے گملے سے تم لائے تھے آنگن میں جسے سب موسموں کو جھیل کر خود کو بچانا بھی سکھایا تھا وہ بچی جو تمھاری گود میں خوش ہوکے سوتی تھی کبھی گھر دیر سے آتے تو ...