Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 2)

شیرانی رلی

April, 2022

  • 23 April

    عالم ئے اِسرار ۔۔۔ اکبر بارکزئی

    کوہ باریں بچکندنت؟ گوات باریں گْڑنک بنت؟ نود باریں سرپد بنت؟ مور باریں سر شودنت؟   باریں پْل ہم گندنت؟ رَنگ ہم نپس کشّنت؟ روچ باریں تْنّگ بیت؟ ماہ باریں جاں کشّیت؟   آس باریں آپْس بیت؟ آپ واب ہم گِندنت؟ باریں سِنگ و ڈوک وڈَل چْک وپیر و ورنا بَنت؟ باریں مْہرگ و مشتک وپت وواب ہم زانَنت؟ باریں ...

  • 23 April

    نظم ۔۔۔ صفدر صدیق رضی

    میں اک قرطاسِ ابیض کی طرح انسان تھا (قرطاسِ ابیض کی طرح شفّاف) جانے کس گھڑی مجھ میں کہیں سے اک فرشتہ اور اک شیطان در آئے سو میں اک مستقل آماجگہ بنتا گیا مدت سے یہ دونوں مرے پیکر میں باہم برسرِ پیکار ہیں آپس میں یوں دست و گریباں ہیں کہ میرے آئینہ خانے میں صدیوں سے شکست ...

  • 23 April

    غزل ۔۔۔ حبیب الرحمان رند

    جی بھر کے جفا کرتے ہو، ہوتے ہو خفا بھی دیتے ہو کیا خوب پہ بے جرم سزا بھی   لبے طور سے اِس دور میں ہر شخص ہے تنہا محفل میں غنیمت ہیں نہ ارباب وفا بھی   بارود کی ہے بُو، نہیں پھول کی خوشبو اک بوجھ میرے ذہن پہ ہے بادِ صبا بھی   ڈر تے ہو ...

  • 23 April

    غزل  ۔۔۔  رخشندہ نوید

    چاند سوچوں کہ ستارے سوچوں جب کِسی شخص کے بارے سوچوں   کُنج گُل جائے ملاقات رکھوں یا کوئی موج، کنارے، سوچوں   کچھ مری اپنی انا حائل تھی کچھ مسائل تھے تمھارے، سوچوں   کیسے کچھ ربط بڑھایا جائے دِل اُسے کیسے پکارے، سوچوں   توُ کہاں ہو گا بھلا اس لمحے جب ہَوا زُلف سنوارے، سوچوں

  • 23 April

    واپسی ۔۔۔  فاطمہ حسن

    وہی کمرہ وہی گھر ہے جہاں خوشیوں بھرے کچھ دن گزارے تھے جہاں چھاؤں ہے اس پودے کی جس کو تم نے سینچا تھا جسے گملے سے تم لائے تھے آنگن میں جسے سب موسموں کو جھیل کر خود کو بچانا بھی سکھایا تھا وہ بچی جو تمھاری گود میں خوش ہوکے سوتی تھی کبھی گھر دیر سے آتے تو ...

  • 23 April

    ملامت ۔۔۔ گوہر ملک

    زندئے پیژگاہا واہگ و ارمان روک بنت موتک کاریت شپ رپتگین ترانگ نوک بنت بے وسی جیڑیت دل زھیرانی پلوا ترونگیں ارسان پہک کنت ارس و پرسیگ کا ملیں زندئے ہر متاہ سکیاں زندئے زیراں امبازاں وشیاں تیلانک دیاں روچ کندیلے کہ مریت سہب ئے دروشما کندگو بچکند موتکو زاری ہچ نہ بیت گوں دلا جیڑاں چوں بہ رکیناں من ...

  • 23 April

    غزل ۔۔۔  عبدالرحمن غور

    تمہاری بزم کا دستور ہم سمجھتے ہیں کوئی تو ہے تمہیں منظور ہم سمجھتے ہیں ہمیں خبر ہے یہ قصرو کاخ ہیں کس کے کہ فرقِ خواجہ و مزدور ہم سمجھتے ہیں صلیب ودار سے اَ بتک لہو ٹپکتا ہے حدیث عیسیٰ و منصور ہم سمجھتے ہیں نہ چُھپ سکے گی کوئی داستان ِ جُرم و سزا ہر ایک جام ...

  • 23 April

    بیدل حیدری

    فاقوں سے تنگ آئے تو پوشاک بیچ دی عریاں ہوئے تو شب کا اندھیرا پہن لیا گرمی لگی تو خود سے الگ ہو کے سو گئے سردی لگی تو خود کو دوبارہ پہن لیا بھونچال میں کفن کی ضرورت نہیں پڑی ہر لاش نے مکان کا ملبہ پہن لیا بیدلؔ لباسِ  زیست بڑا دیدہ زیب تھا اور ہم نے اس ...

  • 23 April

    اک ذرا دیر ۔۔۔ رؤف قیصرانی

    اک ذرا دیر میری دوست بس اک ذرا دیر تیرے نکھرے خیالوں سے اجالوں کی شفق پھوٹے گی تیرے لفظوں کی دھنک رنگ سے اس ابر کے موسم کو قرار آئے گا اک ذرا دیر میری دوست فقط چند ہی لمحوں کا صبر تو نے مرتی ہوئی خواہش کا دھیاں رکھا ہے میرے اندر کی جنوں خیز تڑپ کو بھی ...

  • 23 April

    Aqsa

    In moment still this war Has taken way too far The sight of snow-capped peaks The sound of our Rabab The smell of lavish grass In moment still, this War Has opened up ajar The sight of burning valleys The sound of crashing blasts The smell of ashened grass The moon is at it’s edge O river steep and wide ...