Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی (page 10)

شیرانی رلی

August, 2021

  • 10 August

    افتخار عارف

    جاہ و جلال, دام و درم اور کتنی دیر ریگِ رواں پہ نقش قدم اور کتنی دیر اب اور کتنی دیر یہ دہشت، یہ ڈر، یہ خوف گرد و غبار عہدِ ستم اور کتنی دیر حلقہ بگوشوں، عرض گزاروں کے درمیان یہ تمکنت، یہ زعمِ کرم اور کتنی دیر پل بھر میں ہو رہے گا حسابِ نبود و بود پیچ ...

  • 10 August

    مبارک قاضی

    دنیا دنیادار نہ بیت من چے بہ گشاں یار کہ گوں من یار نہ بیت من چے بہ گشاں   پْشت ءَ  چندے تھلیں ترانگ پش گیج ایت وھد کسی پادار نہ بیت من چے بہ گشاں   مولم وش اِنت گوات سبک آ کشان اِنت دؤر ئے  سرا  آچار نہ بیت من چے بہ گشاں   تو بِلّے  چماں ...

  • 9 August

    خس کم جہاں پاک ۔۔۔ علی زیوف

    محبت کی بھیک مانگتے ہوئے تمہیں چار سال کا عرصہ بیت چکا ہے۔ پھر بھی سلیقہِ گدائی نے تمہارا ہاتھ نہیں تھاما اس خوف سے کہ تمہیں لاج کی پاج رکھنا نہیں آتی۔ تم بھیک میں ملی خوشیاں اک سگریٹ کے پیکٹ یا چائے کی پیالی کے عوض بیچ دیتے ہو۔ رات  پیٹ کا جہنم بھرنے کے لیے تم نے ...

  • 9 August

    ابھی تو ہمارے جاگنے کے دنوں نے آنا تھا ۔۔۔ (آئی اے رحمن) ۔۔۔ کشور ناہید

    رحمان صاحب! جو کچھ آپ نے لکھا اتنا تو فرشتے بھی نہ لکھ سکے ہوں گے وہ تو لوگوں کے گناہ و ثواب لکھتے ہیں اور آپ ان کی داستان لکھتے تھے جن کو نہ قلم بردوش صحافی لکھتے تھے اور نہ مسجدوں میں خطبہ دینے والے آپ کبھی کبھی خدا کی آواز بن کر ہمارے نام کے مسلمان لوگوں ...

  • 9 August

    یہ عید کے دن ہیں  ۔۔۔ فاطمہ حسن

    ملبوس کے رنگوں میں بسی عطر کی خوشبو آنچل میں بندھے چند کھنکتے ہوے سکے کچھ روز انہیں سنگ گذاروں گی خوشی کے یہ عید کے دن ہیں چاہت کی مسرت کی سبھی یادیں ہیں اچھی ان یادوں کے سائے میں ہے اک چھوٹی سی بچی جو مچلی تھی مہندی کے لئے چوڑی سے بہلی کچھ روزاسی سنگ گذاروں گی ...

  • 9 August

    آئینہ خانے میں ایک پتھر ۔۔۔ اسد رضا

    ایک عجیب خواب سے جاگ جاگ جاتا ہوں آئینوں کے گھر میں، آئینوں کے شہر میں اپنے نام کا اک آئینہ جو پاتا ہوں یہ عکس سارے میرے ہیں یا میں بھی ایک عکس ہوں سایہ ہوں، خیال ہوں یا میں دوسرا ہی شخص ہوں دِکھ رہے ہیں ایک سے سارے اور ایک ہی منظر دکھا رہے ہیں یہ سارے ...

  • 9 August

    محمود فدا کھوسہ

    جب زْلف ِ یار شیخ کی دستار پر گری برق ِ بلاَ سی صْورت ِ ناچار پر گری   منصور یاد آئے جو جَذب ِ دْروں کے ساتھ اِک برق بن کے میری نظر دار پر گری   دوچَند میں خرید کے یْوسف کو لے چلی ان کی نظر نہ اپنے خریدار پر گری   دنیا میں امن کیسے ہو ...

  • 8 August

    غزل ۔۔۔ امداد حسینی

    کیا پوچھو ہو:“کون ہو آپ؟“ ”آپ ہمارے مائی باپ!“۔   پھانسی پہ چڑھانا ہے کیا؟ لیتے ہو جو گردن کی ناپ!۔   ناچوں میں بھی ٹانڈؤ ناچ، دینا تو مڑدنگ کی تھاپ!۔   آپ کریں جو پاپ وہ پْن، ہم جو کریں وہ پْن ہے پاپ!۔   پاگل ہیں انہیں بکنے دو، بکتے ہیں جو اناپ شناپ!۔   گوٹھ ہیں ...

  • 8 August

    آئی بھولی بالڑی ۔۔۔ نور العین سعدیہ

    رُت ساون دی کالڑی آلی بھولی بالڑی گَرج گَرج آئی بدریا جُھولا جُھولے سانوری اپنے پیا دی بانوری   سپنی وانگوں تکدی تکدی تینوں نہ تھکدی نیناں وچ اُتاردی پانی اوس پروار دی سہیلڑی رانجھن یار دی   میری بات ماہی نال پے گئی رانگلی چُنری ہو گئی کوئی دیوو نی گوٹا لا چڑھ چبارے گُٹکدی   رُت ساون دی ...

  • 8 August

    غزل ۔۔۔ میر ساگر

    ایوانوں کا شور   سنائی دیتا ہے حیوانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   زنجیروں کی آوازیں چْھو جاتی ہیں زندانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   میرے اندر گْل بْوٹے سے لہکے ہیں گْلدانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   اندیشوں کی سانسیں چلنے لگتی ہیں طوفانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   روز دیے کی لو سے بھپکی اْٹھتی ...