کہانی

امیج

میرا کوئی امیج نہیں۔ میں کسی وقت، کسی بھی لمحے کچھ بھی کر سکتی ہوں۔”، اس نے اپنی ہی کہی ہوئی بات کو دہرایا۔ رات تین بجے وہ بے چین ہو کر اٹھی اورکھڑکی کے قریب آ گئی۔ اس کھڑکی سے نظر آنے والے نظارے دن کی روشنی میں اس ...

مزید پڑھیں »

کونج

چیری کے شگوفوں جیسے لب ادھ کھلے، چمکیلی آنکھوں سے جن میں جیسے کانچ کوٹ کر بھر دیا گیا ہو۔ ستارہ اک ٹُک نوری کو دیکھتے ہوئے، روٹیاں اپنی چنگیرپر رکھتی جا رہی تھی۔ مہر رنگی بادامی آنکھوں، مشکی رنگت والی نوری پسینے سے شرابور روٹی تندور سے نکالتی اور ...

مزید پڑھیں »

چیخ سے چیخ تک

صبح صادق کا وقت ہے، آسمان کے سینے پر چھائے بادل اپنی سرخی سے سورج کی آمد کی اطلاع دے رہے ہیں۔ وہ حویلی میں ادھر سے ادھر بے چینی سے پھر رہی ہے اور ایسا لگ رہا ہے کہ اس پر ایک عجیب خوف و ہراس کا غلبہ ہے۔ ...

مزید پڑھیں »

ایک عجیب کہانی

آسٹین کے شمال میں ایک معزز خاندان رہتا تھا ۔ یہ خاندان جان اسمودرز ، اُس کی بیو ی اور پانچ سالہ بیٹی پر مشتمل تھا۔ ایک رات کھانے کے اُن کی بیٹی کے بیٹ میں شدید مروڑ اُٹھی ۔ جان اسمودرز جلدی سے دوا لانے کے لیے شہر کی ...

مزید پڑھیں »

ننھے نصیر کی پریشانیاں

"ابّا کے ساتھ سودا سلف لانا” رات کےکھانے کے بعد امّاں اور ابّا مہینے کے اخراجات کا حساب کرنے بیٹھ گئے۔ ابّا بولے، "میں آج تک سمجھ نہیں سکا کہ میں جو پیسے تمہیں دیتا ھوں، وہ آخر جاتے کہاں ہیں ؟” امّاں بولیں، "جب آپ ایسی باتیں کرتے ہیں ...

مزید پڑھیں »

بتائو ناں!

ایک لات نے مجھے منجی سے نیچے ہی نہیں گرایا بلکہ سوہنے خوابوں کی دنیا سے کریہہ حقیقی دنیا میں لا پھینکا. میں جلدی سے اپنی پیٹھ سہلاتا اور لنگڑاتا ہوا اپنی بوری اٹھا کر گھر سے بھاگ نکلا. روٹی تو ویسے بھی ملنی نہیں تھی کیا فائدہ تھا خالی ...

مزید پڑھیں »

آخری پتا

یہ 1890 کی دہائی کی بات ہے کہ نیو یارک کے علاقے ” گرین وچ ویلیج ” میں بہت سے مصور رہا کرتے تھے۔۔۔ سُو اور جونسی بھی مصور تھیں۔۔ یہ دونوں لڑکیاں مئی کے مہینے میں ایک دوسرے سے گرین وچ ویلج کے ایک ریستوران میں ملی تھیں۔۔۔ ” ...

مزید پڑھیں »

دھند

چاچا خیر دین آج بہت افسردہ بیٹھا ہوا تھا، بات بھی پریشانی کی تھی، صبح سے رات ہوگئی تھی مگر پچھلے دو دن کی طرح آج بھی کوئی گاہک نہیں آیا تھا ۔۔۔ چاچا خیردین یہی سوچ رہا تھا کے کاش اگر ایک بھی گاڑی صاف ہونے والی آجاۓ تو ...

مزید پڑھیں »

آفاقی کہانی

یہ پھڈہ سالوں سے چل رہا رھا تھا۔ بچپن سے لے کر آج تک وہ اس شدید کوشش اور خواہش میں مبتلا رہی کہ وہ اپنے لہو میں گردش کرتی اس طاقتور اور لازوال کہانی کو پنے پر اتار سکے۔ لیکن نٹ کھٹ کہانی کبھی ہاتھ تو کبھی پیر کی ...

مزید پڑھیں »

چورہ

منی گِس ءَ چہ کمّے پَشت اَست یک چورویں جنکے آئی ءِ پِت ءُ مات ھردوکاں چیزے وھد بیت کہ امروز ی یل کتگ ءُ رسترانی بازار ءَ ایوک کتگ جِنکوک ءَ چہ درکسّانی ءَ وانگ ءِ واھگ بیتگ بلے بژن اِنت کہ تنگدستی ءَ چہ آئی ءِ اے واھگ ...

مزید پڑھیں »