کہانی

قصہ

  روش شتوں ناواشام بیساں شف تارمہ بیغاں حالاندایغئے، سیاھے شف ناز بی بی آ دل آ بتر تڑسیناغئے۔ آہی دل آ اے شف چو دھکاواں بھیراں دہکاناں جانغئے۔ استی اے تڑس دے ہچو ناغومانینئے پر ناز بی بی جوانیاں سییاں کہ گھوڑوئے کوفیساں بھانگاں۔ آسییاں کہ بھانگاں روش ایشیاں ...

مزید پڑھیں »

گم شدہ گاﺅں کا باشندہ

جاتے ہوئے دسمبر کی خون جما د ینے والی سرد رات تھی۔ ہر چیز کو دھند نے یوں لپیٹ رکھا تھا کہ زندگی کی رمق اپنی اپنی پناہ گاہوں میں دُبکی پڑی تھی۔ گہری خاموشی کا راج تھا۔ سنّاٹا گلی گلی سسکاریاں لے رہا تھا۔ ماحول میں بس ہوا کی ...

مزید پڑھیں »

بارش ، خواب اور سمندر

میں نے خواب میں دیکھا، سمندر میرے کمرے میں داخل ہو گیا ہے اور میں مچھلیوں کے بیچ انہی کی طرح تیر رہی ہوں۔ کیا میں واقعی مچھلی بن گئی ہوں؟ ۔مگر مچھلیاں تو مجھ سے منہ موڑ کر اپنی راہ پر چلی جا رہی ہیں، انہیں میرے ہونے کا ...

مزید پڑھیں »

قصے توں پہلے دا قصہ

وقت دی لحظیں پہریں وچ ونڈ توں پہلے آندیاں ویندیاں رتاں ای وقت گزرݨ دے حساب دا وسیلہ ہن ہر رت نویں رنگ گھن تیں آندی ہئی تیں ویندی رت کجھ چنڳیاں کجھ مندیاں یاداں دان کر ویندی ہئی نویں رت دی سدھ وݨ ہک ڈوجھے کوں ڈیندے ہن کہیں ...

مزید پڑھیں »

چندن راکھ

  ایکٹ (1) صحن میں تنہا ایزی چیئر پرنیم دراز آکاش پر ٹمٹماتے تارے گن رہی تھی۔ نپے تلے اُٹھتے قدموں کی آہٹ کانوں میں گونجی۔ اپنی انگلیوں کا دباؤ اپنی کنپٹیوں پر محسوس کیا۔ درد ہوک کی طرح اُبھرتامٹتا تھا۔ ”یہ گھر ہے کہ کنجڑ خانہ!“۔ اس نے چونک ...

مزید پڑھیں »

آنے والا کل

”ایک بھی آواز نہیں ………… بچے کو کیا ہوا؟“   زرد شراب کا پیالہ ہاتھ میں لیے سرخ ناک والے کُنگ نے یہ کہتے ہوئے اگلے گھر کی طرف سر کو جھٹکا دیا۔ نیلی کھا ل و ا لے آ ہ و و نے اپنا پیالہ نیچے رکھا اور د ...

مزید پڑھیں »

چندن راکھ

چندن راکھ   ایکٹ (1) صحن میں تنہا ایزی چیئر پرنیم دراز آکاش پر ٹمٹماتے تارے گن رہی تھی۔ نپے تلے اُٹھتے قدموں کی آہٹ کانوں میں گونجی۔ اپنی انگلیوں کا دباؤ اپنی کنپٹیوں پر محسوس کیا۔ درد ہوک کی طرح اُبھرتامٹتا تھا۔ ”یہ گھر ہے کہ کنجڑ خانہ!“۔ اس ...

مزید پڑھیں »

محبت فروش

  اے ذ ینیی۔۔۔ اے ذ ینیی۔۔۔۔ زنیرہ زنیرہ۔۔۔۔۔۔۔۔ امی کی ساری تلملاہٹ میرا نام پکارنے میں ہی سمٹ آتی ہے۔ جی امی۔۔۔۔۔۔ آتی ہوں۔۔۔۔رَرا ٹی وی۔ کی آواز مدہم کر دے۔ تیرے ابا اونگھنے لگ گئے ہیں۔ کچن کا بلب جلتا ہی رہنے دو۔ اماں کچن کے کیڑے مکوڑے ...

مزید پڑھیں »

سٹرائیک

  نیپلز میں ٹرام کے ملازمین نے سٹرائک کر رکھی تھی۔ ”ریویرادیؔ کیا یا“کے ایک سرے سے دوسرے سرے تک خالی ٹراموں کی ایک قطار لگی ہوئی تھی اور کنڈکٹروں اور ڈرائیوروں کی۔۔ ان زندہ دل، باتونی اور پارے کی طرح بے تاب اور پھر تیلے نیپلزیوں کی ایک بڑی ...

مزید پڑھیں »

دو فرلانگ لمبی سڑک

کچہریوں سے لے کر لا کالج تک بس یہی کوئی دو فرلانگ لمبی سڑک ہو گی ہر روز مجھے اسی سڑک پر سے گزرنا ہوتا ہے کبھی پیدل کبھی سائکل پر سڑک کے دونوں طرف سوکھے سوکھے اداس سے درخت کھڑے ہیں ان میں نہ حسن ہے نہ چھاؤں. ٹہنیوں ...

مزید پڑھیں »