مضامین

سیاہ ترین رجعت کا دور

1908سے لے کر 1911تک کے برس روس کے رجعت کی حتمی درندگی کے سال تھے ۔ بادشاہ نے انقلابیوں کے خلاف انتقامی کاروائیوں کی حد کردی ۔ انہیں سٹری ہوئی جیلوں میں اُن کی Capacityسے کئی گنا بڑی تعداد میں ٹھونس دیا گیا تھا ۔ موت کی سزاﺅں کی طویل ...

مزید پڑھیں »

ماہنامہ سنگت جولائی کا اداریہ

جھوٹ موٹ کی رونق پسماندہ ممالک میں بجٹ بھی دیگر بہت سی بے کرامت اور بے اثر رسومات میںسے ایک ہے ۔ گوکہ کپٹلزم اُسے ایک بڑا ایونٹ بنانے کے لیے پروپیگنڈہ کے سارے دروازے کھول دیتا ہے ۔ پری بجٹ سیمنار کرائے جاتے ہیں، خزانے کے آئی ایم ایفی ...

مزید پڑھیں »

جام درک Jam Durrak

جام کے کلام میں عنایت ، تغزل اور نغمگی تو ہے ہی ۔ مگر وہ امیجری بھی غضب کی کرتا ہے ۔ اُس کی شاعری میں بجلیاں کڑکتی نہیں ہنستی ہیں۔ اُس کا دل دُھند میں ماہ پری مانگتا ہے ۔ اس کی گھوڑی کی دم زامر کے پودے کی ...

مزید پڑھیں »

”دم گھٹ رہا ہے ، ماں“

اداریہ سنگت جولائی 2020 کورونا نے دنیا میں تباہی مچارکھی ہے۔ روزانہ بے شمار لوگ مرنے لگے، خاندان برباد ہوئے ۔پسماندگان کی چیخوں نے دھرتی ہلا کر رکھ دی ۔ موبائل فون تعزیتوں کا لاﺅڈ سپیکر بنے ۔اور تازہ قبروں سے قبرستانوں کے پیٹ نو مہینے جتنے ہوتے گئے ۔ ...

مزید پڑھیں »

فرحت پروین کی کہانیاں

”منجمد“ سے ”کانچ کی چٹان“ تک بچپن میں بزرگوں نے کہانیاں سنا سنا کر ایسی عادت ڈالی کہ آج تک سوتے وقت کہانی کی کتاب ہاتھ میں نہ ہو تو نیند آنکھوں سے روٹھی رہتی ہے۔ ایسی راتوں میں کہانی کی طلب شبِ فراق کے معنی سمجھا دیتی ہے کہ ...

مزید پڑھیں »

عربی ادب میں الف لیلہ، ایک مطالعہ

الف لیلہ، تعارف و پس منظر: الف لیلہ کا عربی ادب میں وہی مقام ہے جو عالمی ادب میں ہومر کی ’اوڈیسی‘ کا ہے۔ اسے عربی کا کلاسیکی شاہکار کہا جاتا ہے۔ اس کا پورا نام ’الف لیلة و لیلة‘ ہے۔ عربی میں الف‘ ہزار کو کہتے ہیں اور لیلة‘ ...

مزید پڑھیں »

راج ہنس کا گیت

وہ شام بہت خوبصورت تھی ۔ ڈھلتے سورج کے رنگ سفید بادلوں کو رنگوں سے رنگین کر رہے تھے ۔ یہ سفید بادلوں کے تیرتے ہوئے گالے جانے کہاں سے اور کیوں ڈھلتے سورج کے نزدیک آجاتے ہیں۔ شاید اپنے آپ کو رنگوں سے آراستہ کرنے کے لیے ۔ یا ...

مزید پڑھیں »

فلیسہ

ٹِن ن ن۔۔ نوٹیفیکشن کی گھنٹی اور وائبریشن پر میں نے فون ایپ میں موجود میسیج بنا چشمے کے بدقت پڑھنے کی کوشش کی۔ اوبر کا میسیج تھا آپ کو کہاں جانا ہے؟ شالیمار ٹائون۔ میں آپ کی دی لوکیشن پر موجود ہوں۔ آ جائیے اچھا۔ میں سب کو خدا ...

مزید پڑھیں »

وطن اور محبت کا شاعر — مست توکلی

  شاہ محمد مری کہتا ہے کہ روزِ قیامت اس کے داہنے ہاتھ پہ اس کی مست توکلی پہ لکھی کتاب ہو گی۔ وہ سچ کہتا ہے کہ یہ کتاب خود شاہ محمد مری کے جنون کی داستان ہے۔ یہ اس کے نامہ اعمال کی سب سے قیمتی متاع ہے۔ ...

مزید پڑھیں »

اماں جنتے

  کپکپاتے ہاتھ، چہرے پر جھریوں کا جال، منحنی ساجثہ، میں نے اس پر طائرانہ نگاہ ڈالتے ہوئے پوچھا۔ ”اماں! نام کیا ہے! کام کر لوگی؟“۔ سوچا کہ یہ بوڑھی لاچارسی عورت میری کیا مدد گار ہوگی۔ گھر کے بظاہر معمولی کام بھی جان مانگتے ہیں اور یہ نحیف جان ...

مزید پڑھیں »