مضامین

پہلی نظم

ہونٹ کے زاویوں میں بھٹکتے ہوئے تم نے کتنے کونے دیکھے بے معنی آہٹوں بے شناخت چہروں میں تم نے۔۔۔کیا کچھ ڈھونڈا ؟ تم کہاں کہاں گئیں ، انسانی عظمتوں کا جھوٹا لبادہ اوڑھ کر مگر اس پہ اپنے ہی لفظوں سے پیوند لگاتی رہیں حواس کے یہ شعبدے تمہارے ...

مزید پڑھیں »

اگر مجھے مرنا پڑا

(فلسطینی شاعر اور استاد رفعت الھریری کی نظم ٰIf I must die کا اردو ترجمہ جنھیں غزہ میں ایک ہوائی حملے میں شہید کر دیا گیا ) اگر مجھے مرنا پڑا تو تمھیں زندہ رہنا ہی ہوگا میری کہانی سنانے کو میری چیزیں بیچ کے کپڑے کا ایک ٹکڑا خریدنے ...

مزید پڑھیں »

جان اور خان

پارو جب بھی دیکھتی جان اور خان آپس میں ایسے جڑے نظر آتے کہ انھیں الگ سے دیکھنا ممکن نہ ہوتا تھا۔ گاﺅں میں ایک قدیم حویلی تھی ، بڑے بڑے کمروں والی ، حویلی کی موٹی دیواروں پر دیار کی بھاری شہتیروں کی چھتیں تھیں ۔ اس حویلی میں ...

مزید پڑھیں »

زمین اور بدن کے فاصلے

”سنو،تمہارے سینے سے لگنا مجھے بہت اچھا لگا“ ”کیسی بے شرمی کی باتیں کرتی ہو یار۔ ایسی باتیں نہیں کرتے۔۔اور ہاں، ہمارے درمیان ایسا کچھ بھی نہیں ہے۔۔“ ان پیغامات کے تبادلے کے بعد ایسی خاموشی کہ جس کے بعد کچھ سوچنے کا حوصلہ نہ تھا۔ مسافر تو ہر چھوٹے ...

مزید پڑھیں »

غزل

خواب گروی رکھ دیے آنکھوں کا سودا کر دیا قرض دل کیا قرض جاں بھی آج چکتا کر دیا غیر کو الزام کیوں دیں دوست سے شکوہ نہیں اپنے ہی ہاتھوں کیا جو کچھ بھی جیسا کر دیا کچھ خبر بھی ہو نہ پائی اس دیار عشق میں کون یوسف ...

مزید پڑھیں »

نیا رُخ

برا وقت بری باتیں اور برا موسم آج کل بڑی تیزی دکھانے لگے ہیں،گھر محلہ،شہر اور ملکی حالات تیزی سے بدلتے جارہے ہیں۔ بریکنگ نیوز نا ہو تو پریشانی ہوتی ہے اگرکچھ دن سناٹا اور خاموشی ہوتوذیادہ خوف محسوس ہوتا ہے تازہ ترین بریکنگ نیوزیہ تھی کہ ہماری اسٹریٹ کے ...

مزید پڑھیں »

زھیرانی زھرگ

دنیا ئے کجام ہم راج بہ بیت آئی مادری زبان چہ ایندگہ پدے ہیل برتگیں زباناں آنہیا را گیشتر دوست تر او وش تر بیت چیاکہ اے زبان کہ ہما مادری یا ماتی زبان ئے گش انت، گوں ایشی مئے ماتی مہر بندوک انت اے مئے یک راج ئے جہت ...

مزید پڑھیں »

لالاں

شام کے وقت لالاں نے خوف زدہ آنکھیں اٹھا کر اِدھر ادھر دیکھا۔ پورے گھر میں دھماچوکڑی مچی ہوئی تھی ، ہر کوئی ہنسی قہقہوں میں مشغول تھا۔کون کیا کررہا ہے ، کون کیا نہیں کررہا ؟ اِس کی کسی کو کیا پروا۔ لالاں نے موقعہ تاڑ ا، دیوارچڑھ کر ...

مزید پڑھیں »

غزل

سید علی عباس جلالپوری کے نام. . . . . روح عصر کے خالق تو نے ہم پر یہ احسان کیا خرد افروزی سے مشکل منزل کو آسان کیا جبر کی ساری زنجیروں کو اک اک کر کے کاٹیں گے آزادی کی خاطر مرنا جینا دین ایمان کیا علم حواس ...

مزید پڑھیں »

*

بلے ڈولدار انت پری گوں کنجلاں ھچے نہ انت نزئے تو حورے بگندئے منی دلاں ھچے نہ انت من گشاں ھر چیز کہ است انت درست ھدائے قدرت انت تو گشئے وھم ءُ گمان ات آزماں ھچے نہ انت وت نزاناں من کجام شخص ئِ سرا باور بہ باں بلکن ...

مزید پڑھیں »