مضامین

غزل

  مرگِ  شہرِ   دانش  کا   مرثیہ   لکھا    جائے اور کیا  ہے  لکھنے  کو  اور  کیا  لکھا   جائے کچھ بھڑاس  تو  نکلے  دل  کی  چاہے  جو بھی ہو وہ  برا  لکھا  جائے   یا    بھلا   لکھا    جائے جشنِ  مرگِ  اسرافیل ہم  منائیں  گے، پہلے بے   حسی   کے  عالم  کا   ماجرا   لکھا  جائے ...

مزید پڑھیں »

بشارت

  دن گزارا ہے سزا کی صورت رات آئی شب یلدا کی طرح صحن کی آگ میں جلتے ہوئے شعلوں کی تپش منجمد ہوتے ہوئے خون میں درآئی ہے یادیںیخ بستہ ہواؤں کی طرح آتی ہیں آتش رفتہ و آیندہ میں رخشاں چہرے برف پاروں کی طرح دل کے آئینے ...

مزید پڑھیں »

ہماں روشا

  ھماں روشا کہ میرا بذ بُڑتہ شہیں مُریذئے راستیں ٹونکاں مناں گیریں دُراھیں شفچراں مُچی کثہ گوئشتہ ما دانا عاقلیں ، بینا مئے فہم ئے لوغ دیما زیند موت ئے راز سجدہ کنت مئے شاندا آزماں چری زمیں لُڈی زرانی چول ھامی بنت نفا نُکسان ئے لیکوّ مئے درا ...

مزید پڑھیں »

سرِ گنگ زارِ ہوس

  دل کہ پندارِ عرضِ طلب کے عوض، رہنِ آزار تھا ، تم نے پوچھا؟ جب سرِگنگ زارِ ہوس، حرفِ جاں بار تھا ، تم کہاں تھے؟ سنگ و آہن کے آشوب میں، ہم سپرزادگاں خودپنہ تھے تو تڑپانہ کوئی صدا آشنا اپنے احساس کے کوہ قلعوں میں عمر آزما ...

مزید پڑھیں »

غزل

  چم ہر وختا پہ دیذارا شذیّاں جانی من وثی زیندا پہ تئی ناما کثیّاں جانی ہچو ناراض مہ بی ساہا بکو گؤر بیاراں تو نہ زانئے کہ من اولا شہ جثیّاں جانی آہ نیم راہائیں، درگاہا دِہ سر بی آخر روشئے تو حقاں دیئے پیشی پذیّاں جانی تو مناں ...

مزید پڑھیں »

کچی بستی

یہاں سے نکلو یہاں سے نکلیں۔۔۔کہاں پہ جائیں؟ کہیں بھی جاؤ، یہاں سے نکلو مگر ہمارے تو گھر یہی ہیں۔۔!۔ تہمارے گھر تھے، پر اب نہیں ہیں ہمارے دستِ ہوس کی دستک تمہاری بستی پہ ہوچکی ہے کواڑ کھولو، اٹھاؤ گٹھڑی، یہاں سے نکلو مگر۔۔۔ اگر مگر کچھ نہیں چلے ...

مزید پڑھیں »

غزل

  کون سا آپ کے گھر جائیں گے؟ راہ ہے ہم بھی گزر جائیں گے! اشک ہوں، مے کہ لہو، جام اپنے شام آئے گی تو بھر جائیں گے! اور جانا ہے کہاں اے جاناں تم جدھر جاؤ اْدھر جائیں گے!۔ مَل کے چہرے پہ لہو کی سرخی اْن کے ...

مزید پڑھیں »

زیندئے پری

  مں کہ بالی خیالانی آوار باں دیریں ڈیہانی جیذانی شونقاں شلاں گِنداں! زیندئے پری کندغیں، لُڈغیں دست پُلیں، گُلیں پاذ، ابریشمیں دیم ماہ گوانگیں دیذ ایماں بریں نوذ زانت ئے،قلم شائرئے عالم ئے نُور حرف ئے گُشئے ہر گُرے شنزغیں نارسائی غم ئے ٹونک پچار نے مہرئے واپار نے ...

مزید پڑھیں »

اُمید دے دے کر _ترسانا

  سیانے کہتے ہیں اور سچ ہی کہتے ہیں کہ ظلم اور استحصال پر مبنی بورژوا ڈیموکریسی میں بالادست طبقے سے عوام کا اعتبار اٹھ جاتا ہے. سیاست اور معیشت پر مسلط استحصالی اور سامراجی عناصر کو عوامی رنگ میں بدلنے کے باغیانہ جذبات ابھر آنے لگتے ہیں. غیرمنظم لوگ ...

مزید پڑھیں »

وے کیہڑا ایں

میرِیاں آندراں نال منحبی اُندا میرا دِل داون آلے پاسے رکھیں تے اکھاں سرہانے بنّے میں سرہانے تے پُھل کڑھنے نیں دھرتی دی دھون نیویں ہووے تے اوہدے تے اسمان نہیں چکا دَئیدا بابا کوئی کِیڑا کڈھ کُرونڈیا ہودے تاں مینوں لڑا دئیں میرا ای اے نا تُوں آپے ای ...

مزید پڑھیں »