مضامین

ریلوے مزدور راہنما لعل خان

  یکم اپریل1924……..12مئی1966   انقلاب کا کل وقتی کارکن میاں محمود اپنی کار پر مجھے،سی آر اسلم ،اوراسلم ملک کو لاہور سے اسلام آباد لے جا رہا تھا۔وہ راستے میں جہلم سے چار میل مغرب میں کالا گوجراں نامی گائوں کی قبرستان کی طرف مڑا۔ لعل خان کی قبر پہ ...

مزید پڑھیں »

اک ذرا دیر

  اک ذرا دیر میری دوست بس اک ذرا دیر تیرے نکھرے خیالوں سے اجالوں کی شفق پھوٹے گی تیرے لفظوں کی دھنک رنگ سے اس ابر کے موسم کو قرار آئے گا اک ذرا دیر میری دوست فقط چند ہی لمحوں کا صبر تو نے مرتی ہوئی خواہش کا ...

مزید پڑھیں »

تجوری کی سفاک بادشاہت

  فلاسفرکارل مارکس  نے سرمایہ داری نظام کا بہت باریکی سے تجزیہ کیا اوراُس کے خلاف ’’ادبی شاہکار‘‘ لکھی: کپٹل ۔ پڑھنے کے لائق ہے ۔ مارکس کو پونے دوسو سال گزرگئے ۔اور اُس وقت کپٹلزم ابھی اپنی طفلی حالت میں تھا۔ وہ نظام جوان ہوتا گیا، اورآج وہ اپنی ...

مزید پڑھیں »

غزل

  تمہاری بزم کا دستور ہم سمجھتے ہیں کوئی تو ہے تمہیں منظور ہم سمجھتے ہیں   ہمیں خبر ہے یہ قصرو کاخ ہیں کس کے کہ فرقِ خواجہ و مزدور ہم سمجھتے ہیں   صلیب ودار سے اَ بتک لہو ٹپکتا ہے حدیث عیسیٰ و منصور ہم سمجھتے ہیں ...

مزید پڑھیں »

ملامت

  زندئے پیژگاہا واہگ و ارمان روک بنت موتک کاریت شپ رپتگین ترانگ نوک بنت بے وسی جیڑیت دل زھیرانی پلوا ترونگیں ارسان پہک کنت ارس و پرسیگ کا ملیں زندئے ہر متاہ سکیاں زندئے زیراں امبازاں وشیاں تیلانک دیاں روچ کندیلے کہ مریت سہب ئے دروشما کندگو بچکند موتکو ...

مزید پڑھیں »

بلوچستان سنڈے پارٹی

آج 8 مئی صبح 11 بجے  پرفیشنل اکیڈمی کوئٹہ میں بلوچستان سنڈے پارٹی  منعقد ہوئی ۔   شاہ محمد ، وحید زہیر، پروفیسر جاوید اختر ، کلثوم بلوچ، عابدہ رحمان ،جوہر بنگلزئی، محمد علی، گل حسن مری،  علی عارض، عابدمیر، محمد نواز مری  و دیگر نے شرکت کی۔ عنوان ہمیشہ کی ...

مزید پڑھیں »

*

    فاقوں سے تنگ آئے تو پوشاک بیچ دی عریاں ہوئے تو شب کا اندھیرا پہن لیا   گرمی لگی تو خود سے الگ ہو کے سو گئے سردی لگی تو خود کو دوبارہ پہن لیا   بھونچال میں کفن کی ضرورت نہیں پڑی ہر لاش نے مکان کا ...

مزید پڑھیں »

غزل  

  چاند سوچوں کہ ستارے سوچوں جب کِسی شخص کے بارے سوچوں   کُنج گُل جائے ملاقات رکھوں یا کوئی موج، کنارے، سوچوں   کچھ مری اپنی انا حائل تھی کچھ مسائل تھے تمھارے، سوچوں     کیسے کچھ ربط بڑھایا جائے دِل اُسے کیسے پکارے، سوچوں   توُ کہاں ...

مزید پڑھیں »

مست تئوکلی

    تو لونگ کی ایک جھاڑی ہے جو گہری گھاٹیوں میں اُگی ہے جس کی خوشبو ُمشک کی طرح چاروں طرف پھیل رہی ہے   غیرمستقل دریاﺅں ، چٹیلے میدانوں ، نا ہموار وادیوں اور برہنہ پہاڑوں سے مرتب سرزمینِ بلوچستان کا شاعر مست توکلی مری قبیلے کی شیرانی ...

مزید پڑھیں »

نظم

    میں اک قرطاسِ ابیض کی طرح انسان تھا   (قرطاسِ ابیض کی طرح شفّاف)   جانے کس گھڑی مجھ میں کہیں سے   اک فرشتہ اور اک شیطان در آئے   سو میں اک مستقل آماجگہ بنتا گیا   مدت سے یہ دونوں مرے پیکر میں باہم برسرِ ...

مزید پڑھیں »