شاعری

شاہ مرید منظر در منظر

( پہلا منظر ) حانی زرّیں دور تھا وہ حانی اب جب یاد کروں تو روتا ہوں ڈاڈر ارض ِ پاک تھا گویا سیوی جنّت کا نقشہ تیر اندازی کی مشقیں تھیں گُھڑ تاچی کے میلے تھے اُونٹوں کی نا ختم قطاریں آگے آگے چلتی تھیں تیغوں کی بَجتی شہنائی ...

مزید پڑھیں »

***

مہرءِ باغانی کبوتر توپکاں ریسینتغاں کونج بیٹاں نندغ اِثاں مڑدماں ریسینتغاں مں ترا دیثہ مدامی آس و ہنگر دروشمءَ وھاو وھش اِیں زندگی تئی دروشماں ریسینتغاں کدہے آفءِ بدلءَ نی وفایاں تو مہ لوٹ تو ھماں کسو گو دستاں الکہاں ریسینتغاں پر ھوانکہ گفتغاں ما ایکویں جائے نماز مئے رنگیں ...

مزید پڑھیں »

ایک یونانی عورت کے لیے

ایسی سرد سویر تھی پیڑوں رستوں اورکونوں، کھدروں میں جہاں کہیں پانی نے رُک کر سانس بھری اب کانچ کے قتلے پڑے ہوئے تھے بس سٹاپ کے بائیں جانب ننھی کرنوں نے اب تک ڈھلوان چھتوں کو چھوا نہیں تھا موٹی اور بدرنگ سی جیکٹ پہنے کھچڑی بالوں والی پستہ ...

مزید پڑھیں »

میر، ادیرہ ئے میر

میر، ادیرہ ئے میر مرچی اے ” بیران جاہا“ کہ کسے نہ گواہیت پُر بوتگنت وشیں بو آئی حسثکیں نشانی شک نقشانی، چوکو ہنیں نام و توار ا تئی کورو تامور، ادیرہ چو مرمریں سنگ ئے مُہریں قلاتا کہ انگت نہ پُر شتگ بلے درفش ئے واک ئے شتگ من ...

مزید پڑھیں »

روشنی کے معبدوں میں بیٹھی ہوئی عورتیں

ہماری آنکھوں میں جہاں کبھی خواب اترتے تھے اب وہاں کانٹوں کا بسیرا ہے جن کی مسلسل چبھن اور رِستے لہو نے ہمیں ہمارے غلط فیصلوں کی ہر پل سزا دی ہے۔ ہماری شیریں سخنی کا ایک زمانہ گواہ تھا مگر اب زہر اگلتے لفظوں سے ہماری زبانیں نیلی پڑ ...

مزید پڑھیں »

پابلو نرودا کی نظم

تم دھیرے دھیرے مرنے لگتے ہو گر سفر نہیں کرتے گر مطالعہ نہیں کرتے گر زندگی کی آوازیں نہیں سنتے گر خود کو نہیں سراہتے تم دھیرے دھیرے مرنے لگتے ہو جب خود توقیری کو قتل کر تے ہو جب دوسروں کو اجازت نہی دیتے کہ وہ تمھاری مدد کر ...

مزید پڑھیں »

زندگی اور شاعری کا مکالمہ

مجھے شاعری زندہ دیکھنا چاہتی ہے مگر میری روح جو سانس کی ہمزادہے وہ میرا بوجھ اٹھا اٹھا کر تھک چکی ہے پھر بھی مجھ سے سوال بہت کرتی ہے مجھے جب انسان سایوں کی طرح نظر آتے ہیں مجھے مشورہ دیتی ہے جاﺅ چشمہ لگاﺅ اب مجھے انسانوں کا ...

مزید پڑھیں »

زمین کا بچہ

جب وہ روئے گا اس کی آنکھوں میں آنسو ہوں گے اور ہونٹوں پر ہنسی اس کی پتنگ کی ڈور اس کے ہاتھوں سے چھوٹ گئی ہوگی میں اس کے لئے نئی پتنگ نہیں بناﺅں گی اس نے ٹوٹے ہوئے شیشے کو تھام لیا ہوگا میں اس کے ہاتھوں سے ...

مزید پڑھیں »