شاعری

ان کہی داستانیں

کھمبیوں کو چھوکر آتی ہوا جب نؤں کوٹ کے قلعے کے پاس ماضی کی مہک ساتھ لیکر قلعے کا دروازہ کھٹکھٹاتی ہے تو اس وقت کوئی انوکھی بات فضاؤں میں گردش کرنے لگتی ہے قلعے بھی ان کہی داستانوں کے امین ہوتے ہیں جن میں ادھوری بات کا سحر بیساختہ ...

مزید پڑھیں »

پہاڑوں کے نام ایک نظم

  (شاہ محمد مری کی ایک کتاب پڑھ کر) روایت ہے پہاڑوں نے کبھی ہجرت نہیں کی یہ بارش برف طوفاں سے نہیں ڈرتے یہ خیمے چھوڑ کر اپنے نہیں جاتے کبھی نامہرباں افلاک پانی بند کردیں تو نہ بارش کے خدا کا بت بناکر پوجتے ہیں اور نہ سبزہ ...

مزید پڑھیں »

غزل

ایوانوں کا شور   سنائی دیتا ہے حیوانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   زنجیروں کی آوازیں چْھو جاتی ہیں زندانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   میرے اندر گْل بْوٹے سے لہکے ہیں گْلدانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   اندیشوں کی سانسیں چلنے لگتی ہیں طوفانوں کا شور سْنائی ...

مزید پڑھیں »

شئیر

  گہے روش روشن پہ اے روزگار گہے شپ کہ وفسی جہاں برقرار گہے سیل وشادی گوں دوستاں اوار گہے روث وفسی مں قبرے تہار گہے گوئہروساڑتی زمستاں اوار گہے سبزگلزارعجب خوش بہار یکے میوہ شیریں یکے زہردار زمیں یک نمونہ و میوہ ہزار کبھی دن ہے روشن کہ چلے ...

مزید پڑھیں »

آئینہ خانے میں ایک پتھر

ایک عجیب خواب سے جاگ جاگ جاتا ہوں آئینوں کے گھر میں، آئینوں کے شہر میں اپنے نام کا اک آئینہ جو پاتا ہوں یہ عکس سارے میرے ہیں یا میں بھی ایک عکس ہوں سایہ ہوں، خیال ہوں یا میں دوسرا ہی شخص ہوں دِکھ رہے ہیں ایک سے ...

مزید پڑھیں »

جُست بکن

  تو کہ سَر زُرتہ وتی دست ئے دلا جُست بکن!۔ تو وتی سینگ ئے پُر مہریں گُلا جُست بِکن!۔ تو وتا جُست بِکن!۔ تو مناجُست بِکن!۔ ہر کساجُست بِکن!۔ جُست بِکن!۔ جُست بِکن!۔ تو وتی کوہ وگَراں جُست بِکن!۔ کوچگ و مچگدگاں جُست بِکن!۔ کور و گیابان و ڈلاں ...

مزید پڑھیں »

غزل

کیا پوچھو ہو:“کون ہو آپ؟“ ”آپ ہمارے مائی باپ!“۔   پھانسی پہ چڑھانا ہے کیا؟ لیتے ہو جو گردن کی ناپ!۔   ناچوں میں بھی ٹانڈؤ ناچ، دینا تو مڑدنگ کی تھاپ!۔   آپ کریں جو پاپ وہ پْن، ہم جو کریں وہ پْن ہے پاپ!۔   پاگل ہیں انہیں ...

مزید پڑھیں »

خس کم جہاں پاک

محبت کی بھیک مانگتے ہوئے تمہیں چار سال کا عرصہ بیت چکا ہے۔ پھر بھی سلیقہِ گدائی نے تمہارا ہاتھ نہیں تھاما اس خوف سے کہ تمہیں لاج کی پاج رکھنا نہیں آتی۔ تم بھیک میں ملی خوشیاں اک سگریٹ کے پیکٹ یا چائے کی پیالی کے عوض بیچ دیتے ...

مزید پڑھیں »

*

دنیا دنیادار نہ بیت من چے بہ گشاں یار کہ گوں من یار نہ بیت من چے بہ گشاں   پْشت ءَ  چندے تھلیں ترانگ پش گیج ایت وھد کسی پادار نہ بیت من چے بہ گشاں   مولم وش اِنت گوات سبک آ کشان اِنت دؤر ئے  سرا  آچار ...

مزید پڑھیں »