شاعری

اللہ اللہ تئی امن

اللہ اللہ تئی امن تئی اکبری نامیں مزن تہ لاشریک بے تمن تہ لامکان بے وطن تہ بے مثال بے بدن نئیں آف واڑتئے نئیں نغن خسا نہ دیزا تئی حسن تئی قدرت آں گل اے چمن پیدا خزے شاہیں شہن فہ عالم آ بیز ضمن آخت وہی آڑتئی سمن ...

مزید پڑھیں »

یا حداوند و کردگار پاکیں اے جہاں پُر حوف و حطرناکیں جنگل و  وادی او پِڑن ڈاکیں مانینِش شیر و گژدم سوزاکیں ھژدہ ہزار مہلوک سر بُر ئے حاکیں بکترین انساں شاہ ِ لولاکیں باشعورین او چُست و چالاکیں تابعیناں گوں مئے حضور پاکیں چندے ولی اَنت او مرد اَنت ...

مزید پڑھیں »

غزل

زِندگی لئیوے ِ دِہ نَیں، بارے دِہ نَیں!۔ ھا ھمنکَر کَستریں کارے دِہ نَیں!۔   قَولئے پھروشغ، اَؤلا مَرک اث مڑدمئے نی ھمے عَیبے دِہ نَیں، مِیارے دِہ نَیں!۔   مَں مَروشاں جْزغایاں ایوکا سَنگتا َ مورے دِہ نَیں، مارے دِہ نَیں!۔   مہر داثیں، مہر گِفتیں ھر کَسا بے ...

مزید پڑھیں »

شپے ما کاتکیں وَختے

شپے ما کاتکیں وختے عجب جاہ اَت شرابی قدّحے رِتکیں   نگاہاں یکّ و دومی آ ہزاراں داسپانانی ہمک  پیچاں گوں الوت کْت بَڑاں اَرسے تلاوت کْت   شپے ما کاتکیں وختے سواداں موسمانی رنگ باہینت اَنت درہیں پیادگ جَنائینت اَنت ما نشت و کْوزگانی اَنگ ٹاہینت اَنت   گْلاباں ...

مزید پڑھیں »

*

جانتا ہوں کہ وہ وقت آئے گا جب مری شاعری کو اچانک کبھی چاند آکاش گنگا میں نہلائے گا جانتا ہوں کہ وہ وقت بھی آئے گا جب زباں کا تعصب نہ ہو گا کہیں میری خوشبو سے ہر اک مہک جائے گا جانتاہوں کہ وہ وقت بھی آ ئے ...

مزید پڑھیں »

پْٹ منی بیہوبورئے ڈولنت

  دل منی سوزیں بڈنڑے دانی بْت پہ بالاذا نہیل بیثہ دل دنی بازیں اٹکلاں زانی روح چو برین آسکئے ڈولیں ڈوبرئے نیاما َ تھاں رنگا مانی جزغا لوٹی مست ہم گاما جوسراں دیثیں سملئے بانہی درژبر و میوہ شام بیہو اے ساڑتتیں سوما آف برانی. ما کثیں دیوانے مریذحانا ...

مزید پڑھیں »

شپے ما کاتکیں وَختے

شپے ما کاتکیں وختے عجب جاہ اَت شرابی قدّحے رِتکیں   نگاہاں یکّ و دومی آ ہزاراں داسپانانی ہمک  پیچاں گوں الوت کْت بَڑاں اَرسے تلاوت کْت   شپے ما کاتکیں وختے سواداں موسمانی رنگ باہینت اَنت درہیں پیادگ جَنائینت اَنت ما نشت و کْوزگانی اَنگ ٹاہینت اَنت   گْلاباں ...

مزید پڑھیں »

ان کہی داستانیں

کھمبیوں کو چھوکر آتی ہوا جب نؤں کوٹ کے قلعے کے پاس ماضی کی مہک ساتھ لیکر قلعے کا دروازہ کھٹکھٹاتی ہے تو اس وقت کوئی انوکھی بات فضاؤں میں گردش کرنے لگتی ہے قلعے بھی ان کہی داستانوں کے امین ہوتے ہیں جن میں ادھوری بات کا سحر بیساختہ ...

مزید پڑھیں »

پہاڑوں کے نام ایک نظم

  (شاہ محمد مری کی ایک کتاب پڑھ کر) روایت ہے پہاڑوں نے کبھی ہجرت نہیں کی یہ بارش برف طوفاں سے نہیں ڈرتے یہ خیمے چھوڑ کر اپنے نہیں جاتے کبھی نامہرباں افلاک پانی بند کردیں تو نہ بارش کے خدا کا بت بناکر پوجتے ہیں اور نہ سبزہ ...

مزید پڑھیں »

غزل

ایوانوں کا شور   سنائی دیتا ہے حیوانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   زنجیروں کی آوازیں چْھو جاتی ہیں زندانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   میرے اندر گْل بْوٹے سے لہکے ہیں گْلدانوں کا شور سْنائی دیتا ہے   اندیشوں کی سانسیں چلنے لگتی ہیں طوفانوں کا شور سْنائی ...

مزید پڑھیں »