شاعری

ماں کے نام

میری آرزو ہے ماں کے ہاتھ کی پکی روٹی ماں کے ہاتھ کی بنی کافی ماں کے ہاتھ کا لمس بچپن میرے اندر پلتا ہے جیسے کل آج کا دودھ پی رہا ہے میں زندہ رہنا چاہتا ہوں محض اس لیے کے ماں کے آنسوؤں کے بغیر موت شرمندگی کی ...

مزید پڑھیں »

ایوان عدالت میں (نذیر عباسی کی شہادت پر کہی گئی ایک نظم)

پتھرائی ہوئی آنکھیں پتھراۓ ہوۓ چہرے پتھرائی ہوئی سانسیس چمڑے کی زبانوں پر پتھرائی ہوئی باتیں فریاد کٹہرے میں رو رو کے تڑپتی تھی قانون کے رکھوالے کل لے کے گئے جس کو اب اس کو یہاں لائیں وہ نعش تو دکھلائیں پتھراۓ ہوۓ چہرے پتھرائی ہوئی آنکھیں چمڑے کی ...

مزید پڑھیں »

‎غزل

سامنے اک دوسرے کے کوئی بھی آتا نہیں ‎پھول اور خوشبو کے نظّارے میں آئینہ نہیں ‎پڑھ لیے ہیں غور سے یادوں کے مٹتے حاشیے ‎ داستانوں میں کسی کا نام بھی لکھا نہیں ‎ دور جانا چاہتا ہوں دل کے قبرستان سے ‎پر یہاں سے سیلِ یادِ رفتگاں جاتا ...

مزید پڑھیں »

غزل

(یہ غزل  ہیمنگوئے  کے  مشہور ناول  دی اولڈ  مین  اینڈ  دی  سی‘  سے  متاثر  ہو  کر  لکھی ہے)۔ ارنسٹ  ہیمنگوئے  کے  لیے دکھ  سکھ  دونوں  جھیل  چکے تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ساحل   پہ   اکثر    ملتے    تھے   ،    بوڑھا   اور  سمندر وقت کی  کھڑکی  میں  بیٹھی تھیں حیرانی  کی  جل  پریاں دو  شہزادے  ساتھ  کھڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ماتھے  پر  لہریں  تھیں  جیسے   اور  لکیریں   پانی  میں دو   ملتے   جلتے   چہرے   تھے  ،   بوڑھا  اور  سمندر سدا  بہار  جوانی   جانے  کب   لہروں  سے   نکلے  گی سب حیرت سے سوچ رہے تھے ،  بوڑھا اور سمندر  ! سورج  اور  سیاروں  نے  جب  پہلی  پہلی  ہجرت  کی اک  دوجے  میں  ڈوب  چکے  تھے ،  بوڑھا  اور  سمندر صبح  سویرے   دونوں  مل   کر  اپنے  آنسو   پیتے   تھے رات کے  سارے  دکھ سانجھے  تھے ،  بوڑھا  اور سمندر  صدیوں  کی  رفتار  کو  اک  لمحے  کی  تھکن  نے  زیر  کیا وقت سے ٹھوکر  کھا کے گرے تھے  ،  بوڑھا  اور سمندر شام  کو  جب  طوفاں  تھما  تو  دیکھا  بستی  والوں  نے ریت  پہ  دونوں مرے  پڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر

مزید پڑھیں »

غزل

(یہ غزل  ہیمنگوئے  کے  مشہور ناول  دی اولڈ  مین  اینڈ  دی  سی‘  سے  متاثر  ہو  کر  لکھی ہے)   ارنسٹ  ہیمنگوئے  کے  لیے دکھ  سکھ  دونوں  جھیل  چکے تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ساحل   پہ   اکثر    ملتے    تھے   ،    بوڑھا   اور  سمندر وقت کی  کھڑکی  میں  بیٹھی تھیں حیرانی  کی  جل  پریاں دو  شہزادے  ساتھ  کھڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ماتھے  پر  لہریں  تھیں  جیسے   اور  لکیریں   پانی  میں دو   ملتے   جلتے   چہرے   تھے  ،   بوڑھا  اور  سمندر سدا  بہار  جوانی   جانے  کب   لہروں  سے   نکلے  گی سب حیرت سے سوچ رہے تھے ،  بوڑھا اور سمندر  ! سورج  اور  سیاروں  نے  جب  پہلی  پہلی  ہجرت  کی اک  دوجے  میں  ڈوب  چکے  تھے ،  بوڑھا  اور  سمندر صبح  سویرے   دونوں  مل   کر  اپنے  آنسو   پیتے   تھے رات کے  سارے  دکھ سانجھے  تھے ،  بوڑھا  اور سمندر  صدیوں  کی  رفتار  کو  اک  لمحے  کی  تھکن  نے  زیر  کیا وقت سے ٹھوکر  کھا کے گرے تھے  ،  بوڑھا  اور سمندر شام  کو  جب  طوفاں  تھما  تو  دیکھا  بستی  والوں  نے ریت  پہ  دونوں مرے  پڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر عابد  رضا دوسری  غزل  بھی  یونہی  ارسال  کر  رہا  ہوں۔  آپ  کو  پسند  آئے تو  اگلی  بار  کے  لیے  رکھ  لیجیے۔ صبر  کے  دشت  میں  اُگ  آئی  ہے  فریاد  کی  رات جانے  کب  گزرے  گی  اس   قریۂِ   برباد   کی  رات آسمانوں     سے     برستے     ہوئے   ...

مزید پڑھیں »

مسرت

اٹھارویں صدی کا جام ( درک) محبوبہ کو دیکھ کر: موژیں دل منی باغ بیثا یک شاخا ہزار شاخ بیثا ہر شاخا وتی گل بیثا گلاں تازغیں رنگ بیثا میرا موجی دل باغ باغ ہوگیا ہر شاخ کے ہزار شاخ ہوگئے ہر شاخ کا اپنا پھول ہوگیا پھول تازہ رنگوں ...

مزید پڑھیں »

کھیترانڑیں شاعری

بارکھان بلوچستان تا علاقہ ئے ہیچ کھیترانڑ پیا جالیدائے کھیترانڑ مری بگٹی تا بھائے وختوں لیع بلوچستان تی پیا جالیدائے چاکر بارکھانوں جیع وخت گزرائے کھیترانڑ تا لشکر چاکر ساں گیڈ گیائے بارکھان بلوچستان تا علاقہ ئے ہیچ کھیترانڑ پیا جالیدائے کھیترانڑ تا مسئلہ زبان تائے ہیئع پاروں نوری نصیر ...

مزید پڑھیں »

نظم

ہم نے سنا ہے خواب دیکھنے پر سوال کرنے پر دلیل دینے پر پابندی ہے، ہم نے سنا ہے یہاں اپنے حقوق مانگنا اپنے عقائد پر عمل کرنا جرم ہے ہم نے سنا ہے یہاں بات کرنا سچ کو دھرانا خدمت کرنا کتابیں لکھنا کتابیں پڑھنا جھوٹ سے انکار کرنا ...

مزید پڑھیں »

امید کا مشکیزہ

آس، امید کا پانی بھر کے اک مشکیزہ روز سویرے پیٹھ پہ لادے میں باہر آ جاتا ہوں ٹوٹے پھوٹے دل کے ٹکڑے گارا کر کے پھر سے ان کی شکل بنانے جوڑ لگانے آ جاتا ہوں درد مٹا کے دل بہلانے آگ بجھا کے پھول کھلانے دکھتے دل پہ ...

مزید پڑھیں »

دلِ بے خبر، ذرا حوصلہ !

کوئی ایسا گھر بھی ہے شہر میں، جہاں ہر مکین ہو مطمئن کوئی ایسا دن بھی کہیں پہ ہے، جسے خوفِ آمدِ شب نہیں یہ جو گردبادِ زمان ہے، یہ ازل سے ہے کوئی اب نہیں دلِ بے خبر، ذرا حوصلہ! یہ جو خار ہیں تِرے پاؤں میں، یہ جو ...

مزید پڑھیں »