شاعری

پھیکی چائے بنانے والیاں

  ہمیشہ پھیکی چائے بنانے والیاں جب اپنا گھر سجالیتی ہیں تو حد درجہ سنگدل ہوجاتی ہیں۔ وہ بہووﺅں کے لیے ماچسوں کی تیلیاں بھی گِن گن کے رکھتی ہیں کبھی کبھی آنے والے بیٹیوں کے بچّے فرمائشیں کریں تو ناک بھوں چڑھائے بغیر پوری نہیں کرتیں اور رات دن ...

مزید پڑھیں »

کافی

  اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے سِر اَکھیں پَندھ دی خَواری ھے اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے پِیا کِیچ ڈِئسیم چُودھاری ھے اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے پُنوں نِندراِچ سِیج وِساری ھے اِیہو عَشق وَڈی سَرشاری ھے اِیہا دَلڑی جَگ سَچیاری ھے اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے کُوئی دُنیا عَجب ...

مزید پڑھیں »

۔۔۔۔۔

جھیل کنارے ساتھ ہمارے پریوں نے شب باشی کی چاندی جیسی رات سجی تھی رات بھی پورن ماشی کی لمبے ہجر کے بعد ملیں تو اک چپ بولنے لگتی ہے جانے کب تک سناٹے کی ہم نے سمع خراشی کی یاد ہے اس دن جب ہم بیٹھے سائے میں عشق ...

مزید پڑھیں »

اے جہان نوں بدل کنئگ لوٹیت

  اے جہان نوں بدل کنئگ لوٹیت کہنیں دوداناں یل کنئگ لوٹیت دانکہ اوستانی گؤرم سر لیٹیت سنگے آپ ءَ چگل کنئگ لوٹیت چوکہ من ھلکءِ مردماں گِنداں نی کہیر برّ ءِ پَل کنئگ لوٹیت اڈ کنیں لیبوئے پدا بیا اِت کودکیں زِرد گل کنئگ لوٹیت سِتکءُ ایمانءِ دہرءَ چکاس ...

مزید پڑھیں »

Reply

  سوری یار! تمہاری ای میل کا reply کرنے میں دیر ہوگئی دراصل وقت ہی نہیں ملا وقت اب بازار میں بھی تو ناپید ہے بلیک پر پوچھو تو بھی میسر نہیں آج تھوڑا سا بچا کھچا وقت ہاتھ آ گیا، تمہیں reply کرنا بھی یاد آ گیا یار! اتنی ...

مزید پڑھیں »

محنت کشوں کے لیے

  کرتے رہنا سہل ہمیشہ اِن کی ہر تدبیر بہت محنت اور مشقت والے ہاتھوں کی توقیر بہت اپنے لفظوں اور خوابوں کے ریشم سے اے کوزہ گرو اِن کے گرد بنائے رکھنا جذبوں کی زنجیر بہت اک صدمے سے دوجےغم تک کس کو یہ معلوم نہیں کھیل کیا کرتی ...

مزید پڑھیں »

غزل

دھوپ نکلی دن سہانے ہو گئے چاند کے سب رنگ پھیکے ہو گئے کیا تماشا ہے کہ بے ایام گل ٹہنیوں کے ہاتھ پیلے ہو گئے اس قدر رویا ہوں تیری یاد میں آئینے آنکھوں کے دھندلے ہو گئے ہم بھلا چپ رہنے والے تھے کہیں ہاں مگر حالات ایسے ...

مزید پڑھیں »

راکھ

  تخلیق کائنات کی پہلی رات تم نے سفید کپڑے پہنے تھے یا سیاہ نہیں معلوم بس اتنا یاد ہے میری راکھ سے محشر کی بو آ رہی تھی اور غزل کی نبض خوشگوار درد کی مانند زبان کی جلد کے نیچے، ورم کررہی تھی اور گھڑی کی سوئی ازل ...

مزید پڑھیں »

پھر موسمِ گل رختِ سفر باندھ رہا ہے

  پھر موسمِ گل رختِ سفر باندھ رہا ہے پھر قافلہ کاندھوں پہ یہ گھر باندھ رہا ہے بدلے سے مجھے لگتے ہیں قدرت کے ارادے دستار کسی اور کے سر باندھ رہا ہے یہ کون اندھیروں میں چھپا کھیل رہا ہے ماتھے پہ میرے شمس و قمر باندھ رہا ...

مزید پڑھیں »