شاعری

بساط

بساط کیا ہے؟ کسی بھی مہرے کی؟ فربہی، ڈیل ڈول، جْثہ؟ عمل کی قوت؟ بضاعت و کارکردگی؟شکل؟ چھب؟ تناسبِ؟ خطاب، اعزاز، کلغی، وردی،نجابت و نسل و جاہ و منصب کہ نا تراشیدہ، نیچ، اسفل، غلام، گھسیارے، امکے ڈھمکے؟ چلو، چلیں، دیکھیں کیا بچھایا گیا ہے۔۔۔ اپنی بساط پر آج کے ...

مزید پڑھیں »

۔۔

اساں پاندھی سچ دے سفریں دے, سچ بول سگیں تاں رّل آ. سک نال صلاح کر سانول کوں , جے گول سگیں تاں رّل آ. ساڈے رلدیں روحیں نال جیکر , روح رول سگیں تاں رّل آ. ایں راہ تیں سالک ساہ لگدے , ساہ گھول سگیں تاں رّل آ.

مزید پڑھیں »

کواڑ بند ہیں!

سب دریچوں میں گرد ٹھہری ہے مدتوں سے ۔۔ سبز شاخوں کی سب رگوں میں اکیلے پن کا زہر بسا ہے۔۔۔۔ چراغ اوندھے ہیں ، آبخوروں میں آب اترے زمانہ گزرا۔۔ تم آج آئے ہو! جبکہ میرے بالوں میں مکڑیوں نے ٹھکانہ کر کے۔۔ میری پلکوں پہ جال بن کے ...

مزید پڑھیں »

غزل

ستا د‌ ښائست او ګل ورین نظر بلا واخلم وږمه وږمه شمه او سپړ شم چي نوم ستا واخلم چي شم ورپېښ کله په کرکه او په مينه باندي پرېږدم تياره لمن خوره کړم او رڼا واخلم وایه چي څنګه به شي ورک زما د زړه غمونه وي ستا فراق ...

مزید پڑھیں »

*

چو بے ترک ءُ الگار ھمچو کہ من صدایاں گرفتار ھمچو کہ من بہ بِی ہر کسے یار ھمچو کہ من مہ بِی کس سُبکسار ھمچو کہ من اے زِر چو منا ساکت ءَ ساکت اِنت وتی اندر ءَ گار ھمچو کہ من شپے گوں وتا دارگی اِنت منا شپے ...

مزید پڑھیں »

سَنیہا

اُٹھی سَئیݨ سُوہݨی ذدا ڈیکھ تاں سہی تیڈے چندربھاگے دے پاݨیاں وچ ول رتول جھال پئی ڈیندی اے ول عورت دا اتھاں قتل تھیا اے ول مرد کوئی ازلی چُپ اچ ھن ول وُسوں کوں کوئی نانگ لڑئے ول دھی توں منہ لکیندے َپئین ول عزت دے نانویں سولیاں ھن ...

مزید پڑھیں »

۔

عظمت رفتہ کے ویران مناروں میں بسے عہد گم گشتہ کی خاک سنبھالے ہوئے لوگو آئینے! جن میں نظر آتا ہے تمہیں ماضی اپنا ماضی! جو امروز سے آگاہ ہے نہ فردا سے جڑا ماضی! جو ایام گذشتہ کی مئے سے ہے معمور ماضی ! جو سالہا سال سے ماضی ...

مزید پڑھیں »

جہیز میں کتاب تھی

جہیز میں کتاب تھی کتاب میں فرائض و حقوق زوجیت کے سب اصول تھے نکتہ نکتہ بات تھی بات تھی کہ اونٹنی کی پشت پر بھی حکم ہو۔۔۔۔۔ تو بس رضا و رغبت ہی میں بیبیوں کی بخشش و نجاب ہے نہ میرا کوئی ذکر تھا نہ میری کوئی بات ...

مزید پڑھیں »