شاعری

سرمدی آگ تھی

  سرمدی آگ تھی یا ابد کاکوئی استعارہ تھی، چکھی تھی جو کیسی لوتھی!۔ خنک سی تپک تھی تذبذب کے جتنے بھی چھینٹے دئے اوربڑھتی گئی دھڑکنوں میں دھڑکتی ہوئی سانس میں راگ اورسرْ سی بہتی ہوئی پھول سے جیسے جلتے توے پرہنسیں ننھے ننھے ستاروں کے وہ گل کھلا ...

مزید پڑھیں »

کاروکاری

  “چھوٹا ہِک معصوم بال ایاناں، دِل بدھ پیو دے نال الانا، ابا سئیں توں رنج نہ تھیویں، گال میڈی تے انج نہ تھیویں، میکوں ہِک وِسواس پیا کھاوے، مسئلہ میکوں سمجھ نہ آوے، بھیرو بھین کوں رل مِل ساریں، گِچھی گْھٹ تے کیوں چا ماریے، بیٹھی ہوئی او وان ...

مزید پڑھیں »

ایک اور نظم!

  آ بھی جاؤ کہ آج اکیلا ہوں آگئی ہو تو بیٹھ بھی جاؤ اور پھر بیٹھ بھی گئی ہو تم تو کوئی بات بھی کرو مجھ سے کھٹی اِملی سی بات ہو کوئی سندھڑی آم جیسی میٹھی بات تلخ کوئی شراب کی سی بات دودھ سی اْجلی اْجلی کوئی ...

مزید پڑھیں »

نا دریافتہ  کْل

قرن ہا قرن بیت گئے تمھاری تلاش کے ہاتھوں میں گوہرِ مقصود نہیں آیا اچھا بتاو کیا تم نے اسے وہاں تلاش کیا جہاں وہ تھی ہاں، وہ حواس کے جنگل میں تھی مگر اس جنگل سے باہر بھی تھی تم اپنے اپنے علاقوں میں اسے ڈھونڈتے رہے وہ کسی ...

مزید پڑھیں »

غزل

  گرد، صحرا، غم، بگولے، پیاس، ہجراں اور ہم ہر طرف  تنہائی کی چیخیں اداسی آنکھ نم اور  کتنا   انتظارِ  صبح   کرنا  ہے   ہمیں اور کتنی دیر  ٹھرے گی  یہاں یہ شامِ غم اِک ادا  کافی ہے  میرے  ہوش اڑانے کے لئے آنکھ سے ساغر سےلب سے یاپلادے جامِ جم ...

مزید پڑھیں »

منی عہدئے غمئے قصہ

دو دانکاں گوں نہ بیت پہمگ نہ گوں لبزاں کماہگ بیت منی عہدئے غمئے قصہ کہ سک دراج اِنت او دردانی مزن ھورے زہیر و ترانگ و اشکندی ایں واھگ دلانی زگریں ھونانی نشاناں او کپوتی نالگ و کونجانی الہاناں کجام آبانی ترکیبا بنزّاراں ادا مہرئے چنال اِش گڈّتگ دیر ...

مزید پڑھیں »

منی عہدئے غم ئے قصّہ

  دو دانکاں گوں نہ بیت پہمگ نہ گوں لبزاں کماہگ بیت منی عہدئے غمئے قصہ کہ سک دراج اِنت او دردانی مزن ھورے زہیر و ترانگ و اشکندی ایں واھگ دلانی زگریں ھونانی نشاناں او کپوتی نالگ و کونجانی الہاناں کجام آبانی ترکیبا بنزّاراں ادا مہرئے چنال اِش گڈّتگ ...

مزید پڑھیں »

*

ساہ سَک بھانکرے نیست شَک بھانکرے   تئی نظر  نیک بات کمّے جَک!  بھانکرے   ما نہ وانوں جْزاں مئے سبق  بھانکرے   پَمّا  تئی  مْسکگے یار!  لَکھ بھانکرے   ما دی حقدار تئی او  مئے حق بھانکرے   کْل شمشت اَنت منا لال! یک  بھانکرے   میر   بْرتہ   غماں ...

مزید پڑھیں »

گال

تھرا گوں ٹونکے کنوخثاں بل ترا کہ دیثوں مناں شمُشتہ ترا کہ دیثوں زوان پرشتہ ترا کہ دیثوں جہاں شمُشتہ مئیں دل ہمیشی نواں ہمنگا گشوخثاں کہ مں باز تنگاں تئ لئیو بٹاں مں گوئشتغث چے اغاں کہ گوشتوں مناں شمُشتہ تئ بے وفائ او بے رخی ئے گلا مئیں ...

مزید پڑھیں »

غزل

ساعت نا مہرباں کا خوف ہے ایک مرگِ ناگہاں کا خوف ہے   رنج پھولوں کے بکھرنے کا نہیں ہم کو خوشبو کے زیاں کا خوف ہے   لوگ بازی ہار بیٹھے جان کی آپ کو اپنی دکاں کا خوف ہے   کارِ ہستی ہو یا کارِ نیستی آپ کو ...

مزید پڑھیں »