شاعری

آگ اور برف کے درمیاں

  دھواں ہے یا بادل یہاں سر کے پچھلی طرف کوئی شے پھیلتی ہی چلی جا رہی ہے تناؤ۔۔۔۔ مسلسل تناؤ۔۔۔ ہٹاؤ مرے سامنے سے یہ لوگوں کا لشکر۔۔ یہاں بھیڑ کتنی ہے۔۔۔۔ ہنستا ہے کوئی۔۔۔ مرا غم تماشا نہیں میں اگر چیخ دوں تو زمیں اپنی باہیں مرے واسطے ...

مزید پڑھیں »

ایک کُتا جو مر چُکا ہے

  میرا کُتا مرچکا ہے اور اپنے باغیچے میں زنگ زدہ مشین کے پہلو میں اُسے دفن کر چُکا ہوں ایک دن میں بھی اس کے ساتھ وہیں جا ملوں گا وہ تو اپنے کھردرے بالوں ، بدتمیز رویوں اور بہتی ناک کے ساتھ چلا گیا اور مادہ پرست میں، ...

مزید پڑھیں »

انتساب

آج کے نام اور آج کے غم کے نام آج کا غم کہ ہے زندگی کے بھرے گلستاں سے خفا زرد پتوں کا بن زرد پتوں کا بن جو مرا دیس ہے درد کی انجمن جو مرا دیس ہے کلرکوں کی افسردہ جانوں کے نام کرم خوردہ دلوں اور زبانوں ...

مزید پڑھیں »

شاعر انساں ہی تو ہوتے ہیں۔۔

  دلخراش کنچنائی فصیلوں سے گزرتے ہوئے ہمیں سنائی دیتی ہیں۔ دم بھرتی بھاری سسکیاں، پڑھنے پڑتے ہیں سوانحئ مضامین، دیکھنا پڑتا ہے آبلوں سے پھٹے پیروں سے رِستا ہوا ٹنکچر۔۔۔۔!! زیست کی آہ و بکا میں رات کی راگنی کو جھٹک کر دھان پان لگانے والوں کے سر پر ...

مزید پڑھیں »

زبان دراز عورت

فتح مندی کے نشے میں سرشار وہ بولا اب تُم میری ملکیت ہو! تمہارے شناختی کارڈ پر اب میرا نام ہو گا میرے نام سے پہچانی جاؤ گی وہ بولی کوئی کاغذ کوئی پتّر کوئی لکھت پڑھت یہ ملکیت کس دستاویز کی رُو سے ہے؟ دکھا دو مان لوں گی ...

مزید پڑھیں »

جُھوٹے بہانے چھوڑ جاؤ

میں جانتی ہوں کہ وقت بہت آگے نکل گیا ہے اور میں بہت پیچھے رہ گئی ہوں مجھے اس بات کا کوئی بھی شکوہ نہیں ہے کہ تُم کُچھ بھی کہے سُنے بغیر جا چُکے ہو پر یہاں بہت کُچھ چھوڑ گئے ہو وہ بھی اپنے ساتھ لے جاتے تو ...

مزید پڑھیں »

شئیر

  سمّو ژہ زین ءِ پیِپلاں یکّے سمّو شہ درشکانی براں یکّے سمّو یک شیشہ یے شرابانی سمّو یک سروانے تلارانی سمّو یک سُہر پُلّے انارانی سمّو یک ڈیوایے تہارانی یا جڑی بوٹی یے رگامانی ریٹویں چم گوں کاگدیں رکّاں تیز اَنت چو کنڈیاں بہوکیناں شرّ اَنت چو کتّار بستگیں ...

مزید پڑھیں »

بیا او مرید

بیا او مرید، بیا او مرید، بیا او مرید دیوانگیں بیا بیا کہ دیوانے کنوں، مولانگ و مستانگیں سوتکگ ترا عشقءِ زراب، مارا غماں کرتگ کباب تو ھانلءِ درداں زرئے، ما پہ وطن جانانگیں چاکر تئی دوستءَ پلت، چما دگہ ڈنگاں وطن تو سر پہ شیدائی شتئے، ما پیھناں زنداگیں ...

مزید پڑھیں »

خالی پن میں نیند کی خواہش

  غشی نیند کی کہکشاؤں میں پرویش کرنے کیلئے مدار متعین نہیں کر سکتی۔ ہم اوندھے منہ رینگ کر بھی تیرتے سورج سے آگے نہیں نکل سکتے۔ ہمارے نشان مٹاتا ہوا چاند منزلیں سر کرتے ہوئے کھجور کی پرانی شاخ جیسا ہو جاتا ہے۔ رات دن پہ سبقت نہیں لے ...

مزید پڑھیں »

قبرستان کے مجاور

  سیاہ، اجاڑ،بکھرے بالوں کو میرے ماتھے سے سمیٹ کر ساس نے کہا جب ساٹھ سال کی ہوگی تب سمجھوگی ایک گھر کے لیے کیا کیا قربانیاں دی جاتی ہیں بے تاب، خودسر، باغی آنسوﺅں کو میرے رخساروں سے پونچھ کر سسر نے کہا جب ساٹھ سال کی ہوگی تب ...

مزید پڑھیں »