شاعری

مراجعت

  میں انسان ہوں اور میں انسان ہونے سے گھبرا گیا ہوں ……۔ میں گھبرا گیا ہوں بہت چلچلاتی ہوئی دھوپ سے ……۔ شور کرتے ہوئے شہر سے…۔ بھوک سے……۔ اور گلے میں پھنسے آنسوؤں کی چبھن… درد کی لہر سے جو مسلسل مرا جسم جکڑے ہوئے ہے کروں کیا ...

مزید پڑھیں »

*

دمے دمے بی مائخاں, دمے دمے تہاربی. شفےآ ماہ درکفی, شفے شفے آ گاربی. منی او شومیں قسمتئے, ھمیرگیں برًیں سیادیے, برے گشئے کہ دژمنیں برے برے آیار بی. تھئ راہ سرا مں رُستغاں او سوزیں تاخ کَشتغاں, من آں ھمے! اے قیس نیں! شہ سوزاں ھشکیں دار بی. میار ...

مزید پڑھیں »

ترا گیراروں ما گیراروں

آں وخت کہ ڈُکھے موکل کنت آں وخت کہ دڑدے ساہی داث تئی یادانی بشّام شلِیث ترا گِیراروں ما گیراروں اے زیند مُراذانی گویے مئے پھاذاں ڈاونڑ پَٹّانی کھئی دستانی کھئی رکھانی ترا گیراروں ما گیراروں ہر وخت کہ ظُلمے بے رائیں مئے مِہرانی سرا چھاری بیث تئی چھمّانی دیپھان ...

مزید پڑھیں »

ریاستِ مدینہ ؟؟؟

  شدید سردی میں کتنے لاشے برائے تدفین منتظر ہیں حضورِ والا ! مَحَل کی گرماہٹوں سے نکلیں چلو تحفظ نہیں، دلاسا تو دینے جائیں وہ بیٹیاں، بہنیں اور مائیں شدید صدمے سے منجمد ہیں، وہ منجمد ہیں، جنابِ عالی ! (نہ ہاتھ میں تیر و تیغ کوئی، نہ لب ...

مزید پڑھیں »

سنو سوگوارو!

  اٹھاؤ تابوت سوگوارو! تمھارے پیارے تو سوگئے ہیں نصیب میں ان کے تھی وراثت وہی شہادت گلے کٹا کر ملی ہے ان کو لٹادو اب تو لحد میں تاکہ سکون پائیں جو زندگی میں نہیں ملا تھا انھیں خبر کیا کہ کون آیا تھا پرسا دینے کہ آنے والے ...

مزید پڑھیں »

پانچ سالہ ملکی منصوبہ بندی

  ہمیں شہدا ءکے لیے ترانے لکھنے کے لیے مشق کرنی چاہیے۔ ہمیں نوحوں اور تعزیت کے نئے الفاظ تحریر کرنے کے لیے لغت تراشنی پڑے گی موت کا بگل بجانے والے کارندوں کی شناخت کے لئے اشتہار تقسیم کرنی پڑیں گی ہمیں لٹھے کے سفید تھانوں کے بھاوءبڑھانے پڑیں ...

مزید پڑھیں »

وئیرہاؤس

  پو پھٹی، جاگا سویرا، ڈوبتے تاروں کی زنجیریں ہلیں سوئیاں بھاگیں گھڑی کی، حاضری کے کارڈ لرزے، چھ بجے۔۔۔ چھ بجے اور ہائی وز پہنے قطاریں چل پڑیں بھاری بوٹوں میں چھپائے جھلملاتے نرم خواب موٹے دستانوں کے اندر چبھتی گانٹھوں اور گھنٹوں کا حساب چل پڑے ہیں وقت ...

مزید پڑھیں »

دوستی ختم نہیں ہو سکتی

  دوستی حُبّ خدا ہوتی ہے دوستی دستِ دعا ہوتی ہے دوستی صرف وفا ہوتی ہے دوستی سب سے جُدا ہوتی ہے دوستی کر کے بُھلانا مشکل دوستی کر کے نبھانا مشکل دوستی سارے زمانے سے کہاں دوستی ہاتھ ملانے سے کہاں دوستی صرف جَتانے سے کہاں یہ تو روحوں ...

مزید پڑھیں »

ہم جدا نہیں ہوتے

  کوئی زنجیر بے آواز نہیں ہوتی لیکن یہ صورت قابلِ یقین ضرور ہے کہ اسے سننے والا موجود نہیں ہوگا آوازوں کے شہر میں خاموشی کی حیثیت کسی بے گناہ قیدی کی بے بسی کے مترادف ہے ہمیں بھی بازگشت سنائی دیتی ہے ہمارے وصال کی اس کے بعد ...

مزید پڑھیں »

2020کا المیہ ۔تیسری دنیا میں

ا س سال کرونا نے ہر معیشت کو روند کے رکھ دیا ہے نہ کوئی ٹھیلے والا اور کہیں بار آباد ہے مجبوری میں گھر سے نکلنے کی آزادی ہے جب کوئی کام کار ہی نہیں یورپ میں لوگ بالکونی میں کھڑے گٹار بجا رہے ہیں جیسے ملکوں میں کیا ...

مزید پڑھیں »