شاعری

*

  تِرا خیال بہت دیر تک نہیں رہتا کوئی ملال بہت دیر تک نہیں رہتا اُداس کرتی ہے اکثر تمھاری یاد مجھے مگر یہ حال بہت دیر تک نہیں رہتا میں ریزہ ریزہ تو ہوتا ہُوں ہر شکست کے بعد مگر نڈھال بہت دیر تک نہیں رہتا میں جانتا ہُوں، ...

مزید پڑھیں »

*

تیرے اِرد گِرد وہ شور تھا، مِری بات بیچ میں رہ گئی نہ میں کہہ سکا نہ تُو سن سکا، مِری بات بیچ میں رہ گئ میرے دل کو درد سے بھر گیا، مجھے بے یقین سا کر گیا تیرا بات بات پہ ٹوکنا، مِری بات بیچ میں رہ گئی ...

مزید پڑھیں »

*

جَمے گی کیسے بِساطِ یاراں کہ شِیشَہ و جام بُجھ گئے ہیں سَجے گی کیسے شَبِ نِگاراں کہ دِل سَرِ شام بُجھ گئے ہیں وہ تِیرگی ہے رۂ بُتاں میں چراغِ رُخ ہے نہ شمعِ وَعدَہ کِرن کوئی آرزُو کی لاؤ کہ سب دَر و بام بُجھ گئے ہیں بہت ...

مزید پڑھیں »

*

  بیاکہ استاراں جتگ پُل من شپ ئے گیوارا ماھکانا چو وتی آپ رواں شنگینتہ اِے تئی مھپرئے شنزگ چو سمین مسکینا تو نزانئِے چے درینے ماں دلاں شنگینتہ چندی کسانا پہ بچکندگ و نیم چمی او ناز چندی کسانا پہ بروانئے کماں شنگینتہ کئِے درءَ روت مروت گواڈگ و ...

مزید پڑھیں »

بُوہڑ

  ڈاکٹر شاھ محمد مری نانویں ڈاکٹر کاکا ! بَہوں پھیریں تَرسلے وِچوں وَلدا مُونجھے تھی ویندے ھئیں جِیویں جو کوئی سَانجھے ڈُکھ ھِن جِیویں جو کوئی سُکدے رُکھ ھُن وَل وی دنیا سَاڈے کِیتے کِھیڈ تَماشا تاں نئیں اَساں اِینکوں اپݨا جََاݨ کیں بہوں مُحبتاں نال وسایا اے بَندے ...

مزید پڑھیں »

"تانبے کی عورت” سے کچھ اشعار ……………

ہتھوڑے کے ہاتھوں میں سونے کے کنگن جچے کیوں نہیں اور تانبے کی عورت تپی، تمتائی، مگر مسکرائی، جمی ہی رہی کیوں پگھل نہ سکی پاؤں جلتے رہے، وہ کڑی دھوپ میں بھی کھڑی ہی رہی اس کے آنے تلک لوٹ جانے تلک نہیں اس کو سچ مچ کسی بات ...

مزید پڑھیں »

مست تئوکلی

  کبھی سمّو کی خواب آلود آنکھوں سے گری تھی جو تجلی تیرے سینے پر اگر وہ طور پر گرتی تو جل کر راکھ ہوجاتا وہ کیسا حسن آفاقی تھا جس تمثیل کی خاطر نجانے کیسے کیسے حسنِ فطرت کے فسوں انگریز نقشے کھینچتا تھا تُو تری رمز آشنا آنکھوں ...

مزید پڑھیں »