شاعری

بیوہ سڑکیں انتظار کرتی ہیں

  قرنوں سے قائم کشادہ سڑکیں کل کی بنی چند گلیوں سے سہم گئی ہیں مرے شہر میں اب یہ دستور نافذ ہے کوئی موڑ اور چوک پہ کھڑا نہ ہوا کرے گا مکان سے نکلتی بالکونی پر یا م±حلے کے تھڑے پہ کوئی نہ بیٹھا کرے گا گفتگو فقط ...

مزید پڑھیں »

نامکمل، غیر مختتم دائرے

معاشی، معاشرتی اور تہذیبی تضادات دائرے بناتے ہیں ہم تنگ دائروں میں گھومتے رہتے ہیں دائروں کا غیر مختتم سفر سوچ کی ہر سطح ایک دائرے کے مانند بھوک کے دائرے خوف کے دائرے انا اور تشہیر کے دائرے بے یقینی کے دائرے موت کی وحشت کے دائرے دائرے ، ...

مزید پڑھیں »

شئیر

  روچے کہ من تو یارتیں یک دومی آ گموارتیں مہرئے ذراَ گم گارتیں دل پہ دلاَ بے سارتیں ہر چے کہ تو واہارتیں بے مہتلی من بیارتیں۔ نوں آ دماناں تو شموش آ پیشی تراناں تو شموش عہد و کراراں تو شموش پلیں نیاداں تو شموش وھدےکہ دل پلگارتیں ...

مزید پڑھیں »

نظم

  عجب احساس ہے جو ساری دنیا کے دلوں میں پل رہا ہے اشارہ مل رہا ہے کہ دنیا ایک نکتے پر اکٹھی ہو رہی ہے مرے پوروں پہ دنیا کا بٹن ہے میں جب چاہوں اسے تو اپنی انگلی پر نچائوں ، میں چاہوں گھر میں بیٹھے ، جتنا ...

مزید پڑھیں »

🌹

Flash 01 شاغے آپ ءَ ترینزان اِنت آچارے گوں دَؤران اِنت شئے ءَ ڈاڈر یل داتہ شئے ءَ رِنداں زَھر چِتہ حانی وخت ءَ بُورینتہ حانی مُونجاں پِیر کُتہ کِیّا عہداں بر گَشتہ کِیّا عہدی مَردے نئیں کِیّا دوستاں بے حال اِنت سمّو مست ءَ ڈُوباریت گالے کُونجاں شَکسائیت رَکّاں ...

مزید پڑھیں »

فنا کی چاپ

۔سنو!!جنگل کی بھیانک راتیں مسافروں کو بے سمت بے خلاء بے ردا, بے لباس گہری چپ کے لبادے اداسی کے چھن چھن بجتے نقرئ زیور پہنا جاتیی ہیں گہری چپ باتیں کرتی ہے صندل تعویذ بازوؤں کا گھیرا تنگ کردیتے ہیں ایسی طلسم راتیں گھاتیں کرتی ہیں…. سنو!!!!! کہیں قریب ...

مزید پڑھیں »

پھیکی چائے بنانے والیاں

  ہمیشہ پھیکی چائے بنانے والیاں جب اپنا گھر سجالیتی ہیں تو حد درجہ سنگدل ہوجاتی ہیں۔ وہ بہووﺅں کے لیے ماچسوں کی تیلیاں بھی گِن گن کے رکھتی ہیں کبھی کبھی آنے والے بیٹیوں کے بچّے فرمائشیں کریں تو ناک بھوں چڑھائے بغیر پوری نہیں کرتیں اور رات دن ...

مزید پڑھیں »

کافی

  اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے سِر اَکھیں پَندھ دی خَواری ھے اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے پِیا کِیچ ڈِئسیم چُودھاری ھے اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے پُنوں نِندراِچ سِیج وِساری ھے اِیہو عَشق وَڈی سَرشاری ھے اِیہا دَلڑی جَگ سَچیاری ھے اِیہو عِشق وَڈی سَرشاری ھے کُوئی دُنیا عَجب ...

مزید پڑھیں »

۔۔۔۔۔

جھیل کنارے ساتھ ہمارے پریوں نے شب باشی کی چاندی جیسی رات سجی تھی رات بھی پورن ماشی کی لمبے ہجر کے بعد ملیں تو اک چپ بولنے لگتی ہے جانے کب تک سناٹے کی ہم نے سمع خراشی کی یاد ہے اس دن جب ہم بیٹھے سائے میں عشق ...

مزید پڑھیں »