شاعری

سیاسی لغت

ہم جیسے ملکوں میں اضافہ صرف غربت اور آبادی میں ہوتا ہے تعلیم بالغاں کا سبق پڑھ کر کچھ الفاظ سیکھ جاتے ہیں ح سے حکومت ظ سے ظلم اور ط سے طاقت یہ حکومت ،ظلم اور طاقت کی تکون، گرتی پڑتی ع سے عوام کے ذریعہ ڈوبتی اُبھرتی رہتی ...

مزید پڑھیں »

غزل

هچ ذات ، هچ زریات نیست مَرگا ء کد و باندات نیست تو آسـر ئے گـپ ءَ کن ئے بنی آدما بندات نیست آسـے کـجام پـاندا بلیـت اِے آبریچـاں گْوات نیست تئی نام ئے ناما نْدر بیت مارا چُشیں سوگات نیست چاگرد چو کور و موسی آ هچ آه نیست ...

مزید پڑھیں »

شناختی کارڈ

لکھو! میں ایک عرب ہوں اور میرا شناختی کارڈ نمبر ہے پچاس ہزار ابھی میرے آٹھ بچے ہیں بہار کے بعد نواں آئے گا تمھیں غصہ تو نہیں آرہا؟ لکھو! میں ایک عرب ہوں اپنے آٹھ بچوں کے لئے میں مزدوروں کے ساتھ پتھر توڑ کر روٹی لاتا ہوں پتھر ...

مزید پڑھیں »

کسان !

جھٹپٹے کا نرم رَ و دریا، شفق کا اضطراب کھیتیاں، میدان ، خاموشی ، غروبِ آفتاب دشت کے کام ودہن کو ، دن کی تلخی سے فراغ دور دریا کے کنارے دُھندلے، دُھندلے سے چراغ زیر لب ، ارض وسمامیں، باہمی گفت وشنود مشعلِ گردوںکے بُجھ جانے سے اک ہلکا ...

مزید پڑھیں »

ایک ٹریپیز پر

ہم تین لڑکیاں یا شاید چار ایک ٹریپیز پر ایک تماشے سے پہلے ہی پیچھے ہٹ گئی یا شاید دو، ایک بلندی سے گر کر پاش پاش ہوئی یا شاید ایک سے زیادہ اور میں آخری ٹریپیز کے لیے میں نے اپنی تربیت بہت خوب کی میں نے خود کو ...

مزید پڑھیں »

مارکس، اے دانائے راز

السلام اے مارکس، اے دانائے راز​ اے مریض انسانیت کے چارہ ساز​ ​ نخلِ خوشحالی کی بیخ و بُن ہے تو​ عقدہ ہائے زیست کا ناخُن ہے تو​ ​ تجھ سے قائم دہر میں محنت کا حق​ تجھ سے امرت، گرم ماتھوں کا عرق​ ​ اے دبیرِ دہر و پیرِ ...

مزید پڑھیں »

مارکس، اے دانائے راز​

السلام اے مارکس، اے دانائے راز​ اے مریض انسانیت کے چارہ ساز​ ​ نخلِ خوشحالی کی بیخ و بُن ہے تو​ عقدہ ہائے زیست کا ناخُن ہے تو​ ​ تجھ سے قائم دہر میں محنت کا حق​ تجھ سے امرت، گرم ماتھوں کا عرق​ ​ اے دبیرِ دہر و پیرِ ...

مزید پڑھیں »

مارکس، اے دانائے راز​

السلام اے مارکس، اے دانائے راز​ اے مریض انسانیت کے چارہ ساز​ ​ نخلِ خوشحالی کی بیخ و بُن ہے تو​ عقدہ ہائے زیست کا ناخُن ہے تو​ ​ تجھ سے قائم دہر میں محنت کا حق​ تجھ سے امرت، گرم ماتھوں کا عرق​ ​ اے دبیرِ دہر و پیرِ ...

مزید پڑھیں »

نظم

جب احتجاج کرتے میرے ہم وطنوں کا ہجوم گزر چکا تو میں نے اس جگہ کی مٹھی بھر مٹی اٹھا لی مٹی میرے ہم وطنوں کے آنسوو¿ں سے نم تھی جہاں جہاں سے وہ گزرے تھے وہاں وہاں اک اک زرّہِ خاک میں وہ اپنا دکھ چھوڑ گئے تھے میں ...

مزید پڑھیں »

حدی خوان ٹھہرو !

حدی خوان ٹھہرو ! میں حانی ‘ حدی خوان ! مندو کی بیٹی حُدی خواں! تُم نے مُبارک کے بیٹے کی مَہری کو دیکھا؟ وہ بدبخت پاگل جواری کو دیکھا؟ حدی خوان شے کی سواری کو دیکھا؟ مری اور دیکھو! میں حانی ‘ حدی خوان ! مندو کی بیٹی سعیدوں ...

مزید پڑھیں »