مصنف کی تحاریر : علی زیوف

خس کم جہاں پاک

محبت کی بھیک مانگتے ہوئے تمہیں چار سال کا عرصہ بیت چکا ہے۔ پھر بھی سلیقہِ گدائی نے تمہارا ہاتھ نہیں تھاما اس خوف سے کہ تمہیں لاج کی پاج رکھنا نہیں آتی۔ تم بھیک میں ملی خوشیاں اک سگریٹ کے پیکٹ یا چائے کی پیالی کے عوض بیچ دیتے ...

مزید پڑھیں »

چور اور بہادر سپاہی

  وہ چور تھا،ایک عقل مند چور۔وہ جب کم سن تھا تب اس نے نابینا گداگروں کے کشکولوں سے پیسے چرائے۔جب جوان ہوا تب اس نے دل چُرائے اور جب بڑھاپے کے قریب ہوا تو اسے پتہ چلا کہ کہیں نوفل کا محل بھی ہے،جہاں پندہ سوبرس پرانی ابوجہل کی ...

مزید پڑھیں »

*

دنیا دنیادار نہ بیت من چے بہ گشاں یار کہ گوں من یار نہ بیت من چے بہ گشاں   پْشت ءَ  چندے تھلیں ترانگ پش گیج ایت وھد کسی پادار نہ بیت من چے بہ گشاں   مولم وش اِنت گوات سبک آ کشان اِنت دؤر ئے  سرا  آچار ...

مزید پڑھیں »

توکلی مست

  شعراء چونکہ فطرت کا عکاس ہوتے ہیں اس لئے شعراء کو ہرزمانے اور ہر معاشرے میں نمایاں اور خاص مقام حاصل رہا ہے۔ اس انفرادیت اور خصوصیت کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ شعراء اپنے مذہب ،اپنی ثقافت اپنے وطن اور عوام کے ترجمان بھی ہوتے ہیں۔دوسرے لفظوں ...

مزید پڑھیں »

دوپہر

  سورج دوپہر کے نیلے آسمان میں پگھلا جارہا ہے۔ اور اپنی گرم، قوس قزح کے رنگوں کی شعاعیں زمین پر اور سمندر پر بکھیر رہا ہے۔ نیم خوابیدہ سمندر میں سے رنگ بدلتے ہوئے بلور کا سا کہرا اٹھ رہا ہے نیلگوں پانی فولاد کی مانند چمک رہا ہے ...

مزید پڑھیں »

مائیکروفکشن کیا ہے؟

         مائکرو فکشن جو کہ فلیش فکشن کی ذیلی شاخ سمجھی جاتی ہے  مغرب میں اس سے مراد وہ مختصرترین تخلیقی بیانیہ جو ایک صفحے سے کم پر مشتمل ہو مائیکرو فکشن کہلائے گا – فلیش فکشن یعنی ہزار  سے کم الفاظ پر مشتمل کہانیوں کی روایت ...

مزید پڑھیں »

شاہ لطیف ،واکا اور بلوچ سماعت

  (یہ مقالہ کراچی یونیورسٹی میں پڑھا گیا) خواتین وحضرات۔ شاہ لطیف نے کہا تھا:۔ موہنجو وَس واکا بُدھنڑ کم بروچ جو یہ ’’واکا‘‘ ایک دلچسپ لفظ ہے ۔ میری قومی زبان بلوچی میں یہ ڈاھ ، واھُو، گوانک اور ہکّل ہے ۔ اردو میں سمجھیے یہ اطلاع ہے ، ...

مزید پڑھیں »

پاگل

  اس کارنگ پیلا پڑ گیا تھا اور چہرا اڑا اڑا سا کوئی اس کو پتھر مارتا اور کوئی اس کا مذاق اڑاتا سب اس کو ستا کر لطف اٹھا رہے تھے پاگل اپنے آپ کو چھڑانے کی کوشش نہیں کر رہا تھا پتھر کے ہر وار پر وہ کہتا ...

مزید پڑھیں »

افغانستان میں کنٹرولڈ میڈیا

کابل پر قابض ہوجانے کے بعد 1997میں جب طالبان نے ’’امارات اسلامی افغانستان‘‘ کے قیام کا اعلان کیا تو اس بندوبست کو پاکستان کے علاوہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات نے بھی ایک باقاعدہ حکومت کے طورپر تسلیم کیا تھا۔اقوام متحدہ میں تاہم افغانستان کی نمائندگی برہان الدین ربانی ...

مزید پڑھیں »