مصنف کی تحاریر : اسرار احمد شاکر

تسلی کے دو بول

”آہ ! میں مرنے لگا ہوں!اب میرا وقت قریب آن پہنچا ہے۔“ فقیرے نے کراہتے ہوئے ادھر ادھر جھانکنے کی کوشش کی تاکہ کسی کومدد کے لیے پکار سکے ۔مگر تب وہاں اس کے پاس اپنی بڈھی کے خیالوں کے سوا تیسرا کوئی نہ تھا۔موت کے خوف ،وسوسوں اور واہموں ...

مزید پڑھیں »

ضرورت!!!

مجھے افسانوی باتیں کرنی نہیں آتیں پر میرا تمہارا کنکشن افسانوی ہے ہاتھ وہ نہیں لکھتا جو ذہن سوچتا ہے ذہن اور قلم کا درمیانی راستہ آساں نہیں ہوتا مصلحتوں کے پہاڑ اور تحفظات کے سمندر عبور کرنے پڑتے ہیں تُم کتاب کا کور دیکھ کر مضمون بھانپ لیتے ہو ...

مزید پڑھیں »

غزل

  مکیں ادھر کے ہیں لیکن ادھر کی سوچتے ہیں جب آگ گھر میں لگی ہو تو گھر کی سوچتے ہیں کہ جب زمین ہی سیلِ بلا کی زد میں ہو تو پھر ثمر کی نہیں پھر شجر کی سوچتے ہیں اُڑے تو طے ہی نہ کی حدِ آشیاں بندی ...

مزید پڑھیں »

اعلانِ وفا

  مُجھے تو یہ لگتا تھا کہ تم بے قیمت ہو کہ ترے مہر و وفا کے کوئی نہ دام بھر سکتا معلوم نہ تھا کہ کھنکھناتے سِکوں کے دو ٹکوں میں بِک جاو گی رُخساروں کی سُرخی مدہوش جوانی لبوں کی لالی زلفوں کا سایہ باہوں کا قاتل گھیرا ...

مزید پڑھیں »

ملک محمد علی بھارا

ملتان اور گردونواح میں جس نسل کے اذہان پر 1960ء اور 1970ءکی دہائیوں میں عصری شعور نے دستک دی ان میں سے شاید ہی کوئی ہو جو کامریڈ ملک محمدعلی بھارا کے نام اور جدوجہد سے واقف نہ ہو۔ ایک سچے ا ±جلے زمین زادے اور ترقی پسند شعور کے ...

مزید پڑھیں »

حمیرا صدف

براھوی، بلوچی اوراردو زبان کی ایک خوش فکر وخوش خیال شا عرہ وادیبہ حمیرا صدف کی نظمیں پڑھنے اورانکے بارے میں جاننے کا اتفا ق ہوا۔ انکی نظمیں پڑھتے ہوئے مجھے ڈا کٹر شاہ محمد مری کی کتاب یاد آگئی "بلوچ سماج میں عورت کا مقام ” ۔شا ہ محمد ...

مزید پڑھیں »

سمّو ولی بننے سے پہلے

  سمّو مست توکلی کی محبوبہ تھی۔ مست کے عشق اور اس کی شاعری نےسمو کو چار چودہار مشہور کردیا۔ مگریہ نام ویسے بھی بلوچوں میں ایک مقبولِ عام نام ہے ۔ میں اس نام کا لفظی مطلب ڈھونڈنے نکلا۔ اس کا مطلب ظہور شاہ ہاشمی نے اپنی ڈکشنری میں ...

مزید پڑھیں »

ہفت روزہ عوامی جمہوریت کی تاریخ

  28اکتوبر1972کا شمارہ ایک اہم موضوع سے شروع ہوتا ہے : پاکستان کی نظری اساس۔یہ موضوع اس لیے اہم تھا کہ بہت فنکاری اور قوت کے استعمال سے ہماری ساری تاریخ تبدیل کی گئی تھی۔ ہماری تاریخ ایک اچھی بھلی سامراج (انگریز) دشمن جدوجہد کی تاریخ رہی ۔ہم سب جانتے ...

مزید پڑھیں »

اس کے نام…………!

  میں نے خوشبو کو بھی چھو کے دیکھا میں نے مٹھی میں کرنیں سمیٹیں میں نے بھوسے لیئے چاندنی کے میں نے سورج میں سائے کو دیکھا میں ہوا سے کروں گفتگو بھی میں صداﺅں کا ہر روپ دیکھوں میں نے سوچوں کے نغمے سنُے ہیں میں نے لفظوں ...

مزید پڑھیں »