مصنف کی تحاریر : میرساگر

حدی خوان ٹھہرو !

حدی خوان ٹھہرو ! میں حانی ‘ حدی خوان ! مندو کی بیٹی حُدی خواں! تُم نے مُبارک کے بیٹے کی مَہری کو دیکھا؟ وہ بدبخت پاگل جواری کو دیکھا؟ حدی خوان شے کی سواری کو دیکھا؟ مری اور دیکھو! میں حانی ‘ حدی خوان ! مندو کی بیٹی سعیدوں ...

مزید پڑھیں »

ایک نظم

پہلا منظر کچھ لوگوں نے جلا دیا تھا ایک بدن کو سبب تو کچھ معلوم نہیں تھا آگ کے شعلے بھڑک رہے تھے اور چیخوں سے لپٹ رہے تھے ایک ہجوم تھا چاروں جانب لیکن کوئی بچاتا کیسے سب ہی کو تو فکر تھی اس کی ویڈیو اور تصویریں لےکر ...

مزید پڑھیں »

Do More(کچھ اَور) یا ہجرمسلسل

چاروں اَور خوشی کی چُنری پربت ہاتھ بڑھاتے ہیں بادِ صبا ہے مستی میں بادل بھی اب دوست ہوئے دستر خوان سجا رہتا ہے رونق ِشہر بحال ہوئی رستے بھی دشوار نہیں لیکن چُبھتا رہتا ہے دل میں گڑا مسلسل تیرے ہجر کا کانٹا !!

مزید پڑھیں »

میکسم گورکی

آج، دنیا پر سب سے زیادہ اثر انداز ہونے والے ناولوں میں سے ایک ’’ماں‘‘ کے خالق میکسم گورکی 28 مارچ 1868ء کو پیدا ہوئے اور 28 جون 1936ء کو وفات پائی۔ روس کے اس انقلابی شاعر، ناول نگار، افسانہ نگار، ڈراما نویس اور صحافی نے اپنی تحریروں سے دنیا ...

مزید پڑھیں »

ماہنامہ سنگت مئی کا اداریہ

بلوچستان کے مزدوروں کا گرینڈ الائنس ہر سال کی طرح اس بار بھی ماہنامہ سنگت کا ”مزدور ایڈیشن “ آپ کے ہاتھ میں ہے ۔اِس بار اس کا شونگال البتہ اُن ہزاروں مزدوروں کے اجتماع نے لکھوادیا جو کہ بلوچستان بھر سے کوئٹہ کے ”ریڈ زون“میں جمع ہوئے اور بارہ ...

مزید پڑھیں »

سائبان شیشے کا

آج ۔۔۔ ” اپنا گھر “ میں اہم کوائف کا انداج کرنے والی اُس لڑکی کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے اس کی آنکھوں میں آنسو بار بار امڈ آتے تھے اور وہ اپنے آنچل سے کبھی ناک اور کبھی آنکھیں رگڑ رگڑ سرخ کیے جارہی تھی۔۔ کہ ۔۔۔قاتل تو ...

مزید پڑھیں »

بادِ نو بہار

اس نے دیکھا کہ جن حویلیوں کے در دیمک کھا گئی ان کی خستہ اینٹوں سے نئی کونپلیں جنم لے رہی تھی۔برسوں پہلے جہاں صور پھونک دیا گیا تھا وہاں سے قلقاریوں کی صدائیں سنائی دے رہی تھیں۔بے رنگ دریچوں پر لٹکے پھٹے ہوئے پردوں کے پیچھے سے جو اداس ...

مزید پڑھیں »

فوسل

یاد ہے؟ جب میں نے ایک بچے کی طرح تمہاری طرف ہاتھ پھیلائے تو تم نے کچھ کہا اور میں اچانک ہزاروں سال بوڑھا ہوگیا اس فوسل کی طرح جسے یاد بھی نہیں کہ وہ کہاں جیا اور کیسے مرا؟!

مزید پڑھیں »

عورت

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے قلب ماحول میں لرزاں شرر جنگ ہیں آج حوصلے وقت کے اور زیست کے یک رنگ ہیں آج آبگینوں میں تپاں ولولۂ سنگ ہیں آج حسن اور عشق ہم آواز و ہم آہنگ ہیں آج جس میں جلتا ہوں اسی آگ ...

مزید پڑھیں »

اندھا خواب

لفظوں کا ایک دوسرے سے ملنا محبت ہے ۔ نہیں! دل دھڑکنے کانام محبت ہے نہیں! پانی بہہ جانے کا نام محبت ہے نہیں! بھوک مٹ جانے کا نام محبت ہے نہیں! رات بھر نیند سے بیداری کا نام محبت ہے نہیں! ستاروں کی چمکتی کرن کانام محبت ہے نہیں! ...

مزید پڑھیں »