مصنف کی تحاریر : شاہ محمد مری

احمد خان کھرل

  مراد کے اس گوریلا حملے اور اُس کے نتیجے میں استعمار کے بدصورت نشان برکلے کی موت کے متعلق وہاں بہت خوبصورت لوک گیت موجود ہیں۔ ایسی مزیدار فوک شاعری جو شہر کے مڈل کلاس، بورژوا دانشور، اور یونیورسٹیوں کے دانشوروں کی بد ذائقگی کے سبب انہیں نصیب نہیں۔ ...

مزید پڑھیں »

انگریز دور کے بلوچستان میں کپٹلزم

سامراجی ملک برطانیہ کی طرف سے بلوچستان کی زبردست لوٹ کھسوٹ کی گئی۔پھر، اُس کے پروردہ دیسی فیوڈل حکمرانوں نے بھی ایسی بے درد لوٹ مچائی کی جس کی مثال اس سے قبل موجود نہ تھی۔ ہم پہ بہت بنیاد پرست، نسل پرست اور سفاک حکمران مسلط رہے۔برطانوی سامراج نے ...

مزید پڑھیں »

امداد حسینی کی شاعری

  (دھوپ کرن کے تناظر میں) امداد حسینی کی شاعری تعکف و تصنع سے دور ایک سچے جذبوں کی ترجمان شاعری ہے۔ ان کے اشعار محض خانہ پری کے لئے نہیں، بلکہ اپنے طرز احساس، رنگ فکر، اور پیرائیہ اظہار میں نئے سماجی عوامل کی صورت گری کرتے ہیں۔ ایک ...

مزید پڑھیں »

غزل

ستارہ وار جلے پھر بجھا دیئے گئے ہم پھر اس کے بعد نظر سے گرا دیئے گئے ہم عزیز تھے ہمیں نوواردان کوچۂ عشق سو پیچھے ہٹتے گئے راستہ دیئے گئے ہم شکست و فتح کے سب فیصلے ہوئے کہیں اور مثالِ مالِ غنیمت لُٹا دئیے گئے ہم زمینِ فرش ...

مزید پڑھیں »

بیاتئی دستاں رژاں

  توشہ لوغا درابیا کہ مں نشتغا راہ چاراں تئی، مں دِہ یاراں تئی توکہ بھِتانی پُشتا وثا دارغئے بھِتاں نیستیں زواں گونتہ ٹوکے کننت نئیں کہ ساہ مان نِش کہ تئی دستا گِرنت نئیں کہ گوشے پہ آواز دار نت ہمے نئیں کہ پاذے ہمیشاں کہ سِرنت گُرے گونتہ ...

مزید پڑھیں »

امین کھوسہ

ایک طویل عمر پانے والے شخص کے بطور محمد امین کھوسہ کی شخصیت پہلودار رہی ہے۔ اور چونکہ وہ بہت متحرک اور پارہ صفت شخص تھا، اس لیے اس کی زندگی کا ہر پہلو بھر پور رہا ہے۔ وہ رج کے ملّا رہا۔ وہ ایک بے مثال سامراج دشمن تھا، ...

مزید پڑھیں »

روس کا فروری انقلاب

  1917کا سال پہلی عالمی سامراجی جنگ کا چوتھا سال تھا۔ یہ جنگ خندقوں، بارودی سرنگوں، ٹینکوں، جہازوں، اور زیریلے دروغ کی جنگ تھی۔ فروری1917کا مقبول ابھار ایک آتش فشانی منظر نامہ تھا۔ ایسے ابھرا کہ ساون کے بادل کی طرح حکمرانوں کو سنبھلنے بھی نہ دیا۔ لیکن کیایہ محض ...

مزید پڑھیں »

چوکور دائرے

جس وقت اُس نے دیوار پھلانگی، تو اُس سڑک پر تاریکی کے ساتھ ساتھ ہو کا عالم تھا،جس پر ابھی کچھ دیر قبل، وہ اپنی پوری قوت جمع کر کے سر پٹ دوڑ رہا تھا،باوجود اس کے کہ اس کی ایک ٹانگ کسی سخت چیز کی شدید ضرب سے زخمی ...

مزید پڑھیں »

ایک ”لٹ“ کی یاد میں  

  ہماری کوئٹہ کی بولی میں ”لٹ“ ایک عجیب و غریب لفظ ہے۔ لفظی ترجمہ یوں ناممکن ہے کہ ”لٹ“ ایک مخصوص طرز زندگی کا نام ہے۔ یہ وہ حال مست اور مال، جان اور نام سے بے پروا نوجوان ہے جو کسی ترنگ کے زیر اثر روش عام کو ...

مزید پڑھیں »

آنسووْں سے بنے

  آنسووْں سے بنے ہوےْ ہم لوگ ٹھیس لگ جائے تو ندی کی طرح پہروں بہتے ہیں اپنی آنکھوں میں !۔ کوئی چھیڑے تو کچھ نہیں کہتے صورتِ گل ہوا سے کیا شکوہ شام کی آنچ سے الجھنا کیا ہاں مگر سانس میں کوئی لرزش مدتوں ساتھ ساتھ رہتی ہے ...

مزید پڑھیں »