مصنف کی تحاریر : دانیال طریر

من تو شدم۔۔

  کتنے دن سے ہونٹ صحرا کی سلگتی ریت کے اوپر پڑے ہیں جل رہے ہیں اب انہیں جھرنے پہ رکھ دو کھردری بوری پہ دیکھو جسم کب سے چھل رہا ہے روئی لے کر برف کی اک نرم سا بستر بنادو کتنی مدت سے نہیں سویا سلا دو روح ...

مزید پڑھیں »

ماہنامہ سنگت کا ایڈیٹوریل

ایک گیا ، دوسرا آیا بلوچستان کے کسی فرد کے لیے وفاقی سطح پر پارلیمانی حکومت کے ”بس اور بے بسی “کا حالیہ سارا منظر نامہ حیران کن نہیں ہے ۔ اس لیے کہ جو کچھ وہاں، یا ملک کے کسی دوسرے صوبے میں ہورہا ہوتا ہے ، اُس کی ...

مزید پڑھیں »

ماس جلنے کی بو ۔۔۔۔

  پاس سے دور تک سانس سے سانس تک مستقل ماس جلنے کی بو آتی ہے ۔ شہر کی تنگ گلیوں تلے پاُپیا دہ گریبان کھولے ہوئے تیرگی دندنانے لگی روشنی !گمشدہ آشتی کے خدا کو کہیں ڈھونڈنے ڈھونڈتے تھک گئی وہ خدا! جس کے ناموس کے نام پر ہم ...

مزید پڑھیں »

اسیرِ فسانہ

قرنوں کا سفر تھا اور زیست کرنے کی لگن بھی سو رفتہ رفتہ محنت کی شکتی نے ایک چوپائے کے ہاتھوں کو کارِ مسافرت کے آ  ہنی پنجے سے چھڑا لیا   چوپایہ کہ اب وہ چوپایہ نہیں تھا اس کے عمودی جسم اور اٹھی نگاہوں کے اسیر ہوئے زمین ...

مزید پڑھیں »

غزل

  ہے کیسے کیسے خزانے چھپائے تودہئِ ِخاک ملا کسی کو نہ کچھ ماسوائے تودہئِ خاک تمہارے ساتھ تو ہوتی تھی بات پھولوں کی تمہارے ذکر پہ کیوں یاد آئے تودہئِ خاک وہ مسکراتے ہوئے لب وہ مہرباں آغوش لپٹنا چاہوں تو اب ہاتھ آئے تودہئِ خاک یہ ساعتِ گزراں ...

مزید پڑھیں »

غزل

نہ ینت ابرْو چھڑی اَنت میر توبہ آعین اَنت،ہتھکڑی اَنت میر توبہ   گلاب اَنت آ کہ لنٹ اَنت کے بہ ڈسّیت آ گپ انت پْلجھڑی انت میر توبہ   ھَوَے دل گوں وتی قولاں جَنَات ئے نہ سبزیں اَگّڑی اَنت میر توبہ   کن اَنت ھِرّ او  جَنَنت کستانی ...

مزید پڑھیں »

ابوذر غفاریؓ کے لیے ایک نظم

  سلام اُن پر درود اُن پر وہ ؐکہہ رہے تھے زمیں نے بوجھ ایسے آدمی کا نہیں اٹھایا جو تم سے سچا ہو اے ابوذر وہ ؐکہہ رہے تھے فلک نے سایہ نہیں کیا ایسے آدمی پر جو تم سے سچا ہو اے ابوذر سبھی یسارویمین تصدیق کر رہے ...

مزید پڑھیں »

غزل

  مرگِ  شہرِ   دانش  کا   مرثیہ   لکھا    جائے اور کیا  ہے  لکھنے  کو  اور  کیا  لکھا   جائے کچھ بھڑاس  تو  نکلے  دل  کی  چاہے  جو بھی ہو وہ  برا  لکھا  جائے   یا    بھلا   لکھا    جائے جشنِ  مرگِ  اسرافیل ہم  منائیں  گے، پہلے بے   حسی   کے  عالم  کا   ماجرا   لکھا  جائے ...

مزید پڑھیں »

بشارت

  دن گزارا ہے سزا کی صورت رات آئی شب یلدا کی طرح صحن کی آگ میں جلتے ہوئے شعلوں کی تپش منجمد ہوتے ہوئے خون میں درآئی ہے یادیںیخ بستہ ہواؤں کی طرح آتی ہیں آتش رفتہ و آیندہ میں رخشاں چہرے برف پاروں کی طرح دل کے آئینے ...

مزید پڑھیں »

ہماں روشا

  ھماں روشا کہ میرا بذ بُڑتہ شہیں مُریذئے راستیں ٹونکاں مناں گیریں دُراھیں شفچراں مُچی کثہ گوئشتہ ما دانا عاقلیں ، بینا مئے فہم ئے لوغ دیما زیند موت ئے راز سجدہ کنت مئے شاندا آزماں چری زمیں لُڈی زرانی چول ھامی بنت نفا نُکسان ئے لیکوّ مئے درا ...

مزید پڑھیں »