مصنف کی تحاریر : خلیل جبران

پوشاک

                         او یک جولاھگے آتکہ او گؤئشتئی:۔ مار  پوشا کہ  باروا  ڈس۔ او آنہیا جواب داثہ:۔ شمے پوشاک شمئے زیبائی ئے مزائیں بہرے لکینی، گڑہ دِہ کو جھائینا نہ لکینی۔ او حالانکہ شما پوشاکہ لافا رازداری ئے آزادی ءَ پولیں، شما اشی اندرا یک لغام او زنجیرے گندیں ارمان کہ ...

مزید پڑھیں »

آئی ایم ایف کی نگرانی میں بحران

  پاکستان میں حکمران طبقات ایک بار پھر لڑ پڑے ۔اور اُن کی یہ آپسی لڑائی صرف نظر آنے والے ادارے یعنی پارلیمنٹ تک محدود نہیںہے ۔ یہ مناقشہ تواقتدار کے ہر ایوان اور ہر ادارے میں سنجیدگی اور سنگینی سے جاری ہے ۔ کمال یہ ہے کہ کشمیر پہ ...

مزید پڑھیں »

ہم

    ہم محنت کش جگ والوں سے جب اپنا حصہ مانگیں گے اک کھیت نہیں، اک دیس نہیں ہم ساری دنیا مانگیں گے   یاں ساگر ساگر موتی ہیں یاں پربت پربت ہیرے ہیں یہ سارا مال ہمارا ہے، ہم سارا خزانہ مانگیں گے   جو خون بہا جو ...

مزید پڑھیں »

غریو عوام

  دڑداں مانیں غریو عوام نَیں درکار مارا ہمے نظام رمغیں ڈھوریں ڈولا کپتو زندا گزارغیں تھیوغا عوام ظلما زوراخ کھنغیں کپتو لْچاں نیستیں ایذا لغام جنگ و جدل لْٹ و پھل ایذا استیں صحو شام زوراخ وثی زر ئے زورا غریوا کھنغیں کپتو قتلام ڈیہے مڑدم گْڑنغ لافاں دری ...

مزید پڑھیں »

First May vibes

  روپے کی قدر گھٹتی جارہی ہے مرے کاندھوں پہ رکھا وزن بڑھتا جارہا ہے مشقت کے کڑے اوقات بے حد ہو رہے ہیں میرا حاصل، مری محنت کی الٹی سمت بڑھتا ہے بہت ہی دور (پر نزدیک) بازیگر ہی ایسے جو مجھ کو لوٹ کر ممنون بھی کرتے ہیں ...

مزید پڑھیں »

زندگی کی یہ بھی اک تصویر ہے

خشک و چٹیل دشتِ ناپیدا کنار اور اس میں جھونپڑیوں کی قطار کڑکڑاتی دھوپ تپتا ریگ زار ہر طرف چھایا ہوا گرد و غبار چند جانیں نیم عریاں بے قرار صاحبانِ جاہ و دولت کے شکار سر چھپائےجھگیوں میں اشکبار موت کی کرتے ہیں اپنی انتظار لوگ کہتے ہیں کہ ...

مزید پڑھیں »

غلامان غلاماں ہیں

    غلامان غلاماں ہیں   ہمیں تم آزما لو   کہیں محنت کرالو   کوئی بھی صورت نکالو   غلاما ن غلاماں ہیں       ہماری لوریوں میں روٹیوں کی جاپ آتی تھی   جوانی آئی تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   اس چولھے چکی سے اضافی تھی   جو ہم نے ...

مزید پڑھیں »

حرامزادہ

  مشانے خواب میں دیکھا کہ اس کا داد اباغ میں سے ایک چھڑ ی کاٹ کر اسے گھماتا ہوا غصے سے لال پیلا اُس کی طرف بڑھتا چلا آرہا ہے ۔ ” ادھر آﺅ ، اد ھر آﺅ، میخائلو فومچ“۔ دادا نے انتہائی سخت گیر اور روکھے انداز سے ...

مزید پڑھیں »

ایک ٹیچر

بولان میڈیکل کالج کوئٹہ کے پروفیسر ڈاکٹر غلام سرور گرانی  انتقال کرگئے۔ ان کی عمر لگ بھگ 95 برس تھی۔ وہ اس کالج کے بانی ٹیچرز میں تھے۔  اناٹومی پڑھاتے تھے۔ ہردلعزیز اور ہنس مکھ استاد تھے۔ صرف ٹیچر نہیں وہ تو اپنے سٹوڈنٹس کے سرپرست بھی تھے۔ ان کے ...

مزید پڑھیں »