غزل

ھماں کہ حال پاری اث، تی رنگیں امبرا روشے
شثغیں زندگانی ءِ نہ گڑدی دبّرا روشے

اے گیذی تہ گزانا رو، یا دورا گوں یا وئیلا گوں
کئے مانڑیں دئوری ایں روشے، کئیث وئیلے کئی سرا روشے

گشی کئے عشق اڑزانیں مرید و مست و مجنایاں
تری پاشواذی آ گنوخے در درا روشے

سمینا آڑتغو داثہ مناں حالے صبوحے آ
تئہ جک ئے وَ اواری آ درنگی زامر ا روشے

یہ مہتابے گشی شئیراں گنوخیں عاشقے بھیرا
کہ شئیراں شذ ہچی نہ رو اے گشتہ رسترا روشے

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*