غزل

نَیں نصیوا کہ گِندغابیائے،تو وثی ڈیہئے مڑدمے دیم دئے
یا وثی جِیغئے زامریں پھلّے یا وثی دست ئے چھَلّوے دیم دئے

ہر کَسے گِنداں زھرنیں مرشاں، دیم شہ دنزان و مژاں گاریں
یا منی ڈیہہ ئے مڑدماں کھَندیں یا مناں دِیریں الکہے دیم دئے

درشک بےتاخاں،مال بے ھونیں،مں پریشاناں،ھاخ ھیرانیں
ڈیہہ منی ڈکّالاں جثہ بَرّاِنت، شَکلیں آف بَندیں جڑے دیم دئے

پَلوے گرمیں آھڑئے لکّاں ،پَلوے تھنائی کشغ اِنّوں
پہ دلا بیلی یے مقیمی اِیں ،پہ سرا سبزیں کھوکھرے دیم دئے

ھِچ دمے آجوئی نہ دیثہ ما اژ غم و دڑدئے سیاہ گریں جیلا
یا ھذا دیم دئے تَنگویں روشے یا ھذا موژانی شفے دیم دئے

اَشکثَئوں ناخو ئِے دفا، گوئشتئی، شئے نغن دیمی منزلا ایریں
کوٹغے پَرما ایرکَن دیما اے جہانا دِہ چیارکھے دیم دئے

اے جہاں زوراخاں بڑتہ زوری، مں گو اے ناترساں مِڑِغایاں
یا کہ تہ ایرکف بیا اشہّ درَنگا یا وثی رَنگیں سنگتے دیم دئے

چھو کہ پِیرانی بَچّ دِہ پِیراں، چوکہ سڑدارئے بَچّ سڑداریں
برّ مہ کھَن کمبیرئے ِ کہولا تَو مں مِراں دومی شائرے دیم دئے

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*