ہژدمی برومئیر

۔
اسمبلی اندرا او پریسہ لافا پرولتاریہ ئے لیڈر یک پہ یکی آ عدالتہ قربان جاہاں آرغ بنت و اِشانی ہندا زیات بے باوریں مڑدم اسمبلی و پبلی کیشنانی اندرہ کا ینت۔ پرولتاریہ ئے یک بہرے وثار نظریاتی تجربہ آنی اندرہ سٹی،”ایکسچینج بنکانی او مزدور ایسوسی ایشنانی“ اندرہ سٹی،بزاں آں ہمنگیں تحریکے لافا روغئیں کہ اوذا پجثئو آں کہنیں دنیا اندرا لوڑ گوڑ کنغہ خیالا ژہ انکارہ کنت ۔ ہماں لوڑ گوڑ کہ وث کہنیں دنیائے سجہ ایں زبردستیں وسیلہ آں اوارکثی آ کنے جا بی۔ او سماجہ مُسکاژہ بالکل ذاتی بھیرا وثی ہستی ئِے محدود دیں حالتانی اندرا ڈولے نہ ڈولے وثی جانہ چوڑائینغہ کوشیشہ کنت ۔ لازمی نتیجہ اے بی کہ آں ہر دھکے پروشہ واڑت۔ معلوم بی کہ ہمے پرولتاریہ اندرا نَیں اکھریں ناغے استیں کہ وثی اولی ڈولیں انقلابی مزں شانی آ دوار بہ گیڑت ، نہ ہمکریں ہمتے استنیں کہ وثی تازہ ایں سنگتانی شریخی آ نوخیں طاغتے دستا بیاری ۔ ہمے حالت جاری بی داں وختیکہ ہماں کُل کلاس کہ ہما ہاں گوں اشیا جونہ لافا مقابلہ کثغ اث،وث بے دم بنت او دریپا ٹا کناناں کفنت۔ خیر کم از کم اکھر تہ بیثہ کہ پرولتاریہ مزائیں جہانی تاریخی جہد ئِے اعزازاں ژہ دستاں شوذی ۔چڑو فرانس نہ بلکنا دراہیں یورپ جون ئے زمیں چنڈا لڑزینتہ۔ حالانکہ بڑزی کلاسانی ریسینغ او جنغ و شکست اکھر ارزاں بہائی آ گرغ بنت کہ وث سوب مندیں دُھرا بے شرمی آ گوں ودھینغ و بیاں کنغ ئے ضرورت کفی کہ بلاّں آں ہم مزنیں واقعہ شمار کنغ بہ بنت،او پرولتاری پارٹی آ ژہ پروش واڑتغیں پارٹی ہر چی کہ دِیر کنزی، رندا ہمے پروش اغدہ زیات شرمناک بیاناں رونت ۔
راست اشیں کہ جون ئے یاغیانی پروشا ہماں زمین تیار کثہ کہ آنہی چکا بورژوائی رپبلکہ ماڑی جکینتہ بیئے،پر بہ یک وقت اے دِہ ڈسثئی کہ یورپہ اندرامرشی ”رپبلک یا بادشاہی“ ئے بحث نہ ایں بلکہ ٹوک دوہمی اے۔ اے پروشا اے ڈسثہ کہ بورژوا رپبلکہ مطلب ایذااشیں کہ یک کلاسے دوہمی کلاسانی سرا بے حدیں ڈکٹیٹری آ چلائینی۔ اشیا اے ثابت کثغ اث کہ کہنیں سولائزیشن ئِے واژھیں ملکانی اندرا،اوذکہ کلاسانی ساخت باز دیماشتی ایں،پیداوار ئے حالت ماڈرن اَنت او دانش اے سندھو آ داں پجثی اَیں کہ صدیانی اثر ئِے سجہ ایں روایتی خیال حل کثو گارکثغنت،اوذا رپبلکہ مطلب چھڑو بورژوا سماجئے انقلابہ سیاسی دروشم ایں،نہ کہ زیندھ ئے قدامت پسندیں دروشم۔ پہ مثال قطبی امریکہ ئے اواریں ریاستانی اندرا تو نڑیں کہ کلاس استنت پردانڑتی فکس نہ ینت بلکنا دھروذ بہندہ اندرا وثی عنصراں بدل کن انت و یک دوہمی اندرا مٹّائیناناں رونت ۔ ہموذا پیداوار ئے ماڈرنیں وسیلہ بجائے یک جکثغیں جامدیں بے ناغیں سرسیں آبادی اے آ گوں ہم آہنگ بیغا،مڑدمانی یا پورہا تیانی کمی ئے پیلہ کنغا پہ کارا کنغاینت ، او ہموذ کہ بالآخر میٹیریل پیداوار ئے پُرجوشیں تحریک ،کہ دانڑتی پروث نوخیں دنیائے ٹاھینغی اینیں،اکھر دزگٹیں کہ کہنیں بلا او جناّنی دنیا ئے ختم کنغا پہ نَیں وخت استنی اونَیں موقع وگیغ۔
جون ئے روشاں سجہ ایں کلاس و پارٹیاں اوار بیثئو پرولتاری کلاسہ خلا فا ”پارٹی آف آرڈر “ ٹاہینتہ کہ اشی حیثیت”انارکی پارٹی“ ایغ اث،سوشلزمہ پارٹی ایغ اث او کمیونزمہ پارٹی ایغ اث۔آنہاں سماج ژہ سماجئے دژمناں” بچائینتہ“۔ آنہاں وثی فوجا را کہنیں سماجئے ٹوک بزاں” ملکیت ،خاندان، مذہب، قاعدہ قانون“ ئے لفظ پجھاڑتغیں لفظانی بھیرا داثعنت۔ او انقلاب مخالفیں مجاہد گوں اے نعرہا شاکار تغنت ” اے صلیب ئے سایا سوب شمئے غیں“۔ ۔شماں ساعتا ہروختیکہ ہمے بیرکہ شیرامچ بیثغیں بازیں پارٹیاں ژہ یکے جون ئے یاغی آنی مقابلہا کڑوبیثہ کہ بلاّں انقلابی جنگہ پڑا وثی جندہ طبقاتی فائدہ آں پہ قبضہ آ بہ کنت تو آں گوں اے نعرہا پروش دیغہ بی:”ملکیت، خاندان،مذہب ،قاعدہ قانون“۔ ہر دھکے کہ حاکمانی اثر کم بیاناں روث،ہر دھکے کہ زیات عامیں مفادانی ہندا خاصیں مفاد بڑز دست بنت تو گشغہ بی کہ سماج بچائینے جیثہ۔ تو نڑیں سادہ ایں بورژوا مالی ریفارم ئِے تقاضا بہ بی ، یا معمولڑی ایں لبرلزمئِے لوٹ بہ بی، یا سادڑائیں رسمی ایں رپبلکن ازم ئے طلب بہ بی،یا ہورگیں جمہوریت ئِے لوٹ بہ بی ہمے کل ” سماجہ چکا حملہ“ گشغ او بدنام کنغہ بنت او ”سوشلزم“ ئَے سیاہغ دیغ بی ثش۔ او آخر ا ،”مذہب او قانون قاعدہ “ ئے ملاّ او چوکیدارانی جند روحانی تخت و ممبراں ژہ دڑوّاں جناناں ایرگیژغ بنت، نیم شفاں اوچنڑاں ژہ درا گیہلینے جنت،جیل خانہ ئے گاڈی آں ماں کنغ بنت اوجیلا ماں کنے جنت یا جلا وطن کنغ بنت۔ آنہانی مندر دراہینغ و گوں زمیں آ اوار کنغ بنت،آنہانی دف سِیل مُہر کنغ بنت،آنہانی قلم بھورینے جنت،آنہانی قانون پنا پنا کنغ و دِنّے جنت ،مذہب ،ملکیت،خاندان او قاعدہ قانونہ نام چکا۔ قاعدہ قانون ئے عاشقیں بورژوا انتہا پسند وثی بالکونی آنی چکاژہ شراب واڑتغیں سپاھیانی ٹولیانی دیسی ایں توپکاں گوں جہلہ پرینغ بنت،آنہانی پناہ گاہ دراہینغ بنت،آنہانی لوغ مسخرا او کند کندا پہ بمبگوار بنت …. …. ملکیت، خاندان، مذہب او قاعدہ قانونہ نامہ چکا۔ آخر ا ،بورژوا سماج ئے گندھ و گرائیاں ژہ قاعدہ قانون ئے پاکیں فوج ٹاہینے جی اوہیرو کراپولنسکی(لوئی بونا پارٹ) وثار”سماج ئے بچا ئینوخہ“ حیثیتا توئی لری ئے بادشاہی تختہ نیا ذینی۔

ریفرنسز

1۔ رومی تاریخ زانت کیساریسکی بیانیں کہ شہنشاہ کانسٹن ٹائن اول وختیکہ وثی دژمن میکیسن تیسہ چکا سوب بیوخ اث، آزمانہ چکا یک غیبی صلیبہ نشانے دیثہ کہ چکا نوشتہ اثی:”ہمے صلیبہ شیرا سوبہ کٹئے “۔

ماہتاک سنگت کوئٹہ

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*