شاہ لطیف

شاہ لطیف ئَے وختاں سندھ ئِے سماجی حالت شوئین اثنت ؟ ۔ ہمشی دل ہیکمیں جواب تہ مار شاہ ئِے شاعری ء ژہ دِہ رستہ بی ، پرشاعری بیان ئَے بھیر او جذا جذائی آ کپتغیں سماجی بُن بہرانی یکجا کنغ باز گرانیں۔ گرانیں اے خاطرا کہ شاہ ہماں زمانغ ئِے سماجی حالتاں ہماں ڈولے کہ یکو متاثر کناناں بڑتہ ، او ہمے تاثر شاہ ئِے دل و دیذ ءَ شاعری ڈولا ہماں ہماں بھیرءَ کہ خارجی و داخلی محرکانی یکجائی سمجھثہ ، ہمانہی سراغ جنغ وث یک ڈولیں تخلیقی کارے ۔ ہمے عمل بالکل ہمے ڈولین اے، چوکہ یک مڑدے اوٹغ ء نیا ماجکّی او کسن مزنین موجانی گرغہ کوشیشا کنت۔
ڈاکٹر سورلے آ سندھ ئِے سماجی زیندھ چو بیان کثہ:
”سندھ ئِے زیندھ یک تالابے ڈولایث کہ آنہی اندرا وخت وختے آ درا ژہ یک سنگے چغل دیغ بیث۔ ہماں چاٹالا رند کمیں لہر پیدا بنت او گڑہ اغدہ خاموشی بی“۔
ڈاکٹر سورلے آ ہمے ٹوک سندھ ئِے ہماں سماجی زیندھہ باروا گوئشتہ آں کہ شاھہ وختانی اث۔ اے ہماں وخت اث کہ سندھہ اندرا مغل بادشاہانی قسمت بڑزغاں دہ پجثئو جہل کفغا یث۔ کمڑو وختا رند ہمے وش بخشی کلہوڑا خاندانہ پلوا آتکغ اث۔ جاگیرداری ،زمینداری او پیری مریذی ہمے زمانغ ئِے سماجی بُن بہر اثنت ۔ جاگیرداری ئےِ حقدار ہماں بیثنت کہ یا تہ سرکشیں قبیلہ آں ژہ بیثے ننت یا ہماں مڑد کہ فوجی کارنامہ آنی سببا جمعی زیندھہ چکا حاوی بیثغ اثنت ۔ بازیں مثال ہماں درباری آنی اَنت کہ جوائیں درباری بیغ ئِے سببا گراں بہا ایں جاگیر ڈھثغ اثنتش ۔ بادشا ہانی چاپلوسی کنوخانی چکا دو ڈولا مہربانی بیث۔ یکے تہ آنہاں انعام رست ،او دوہمی ڈول اش اث کہ آنہاں جاگیر ملث انت ۔ہمے جاگیرانی چکا ہچ ڈولیں ٹیکس نیستہ۔ ہرجاگیروالائے وثی علاقہ ئِے وث مختاریں سڑدارے ٹھث۔ ہمانہی چکا اغر کسے حاکمی استہ تو ہماں سلطان ایغ اث کہ دلّی تخت ئَ نشت ، یا گڑہ ہماں گورنر ئِے کہ علاقائی صورتا مقرار بیث۔ جاگیروالایانی عادت و خصلت ہمنگا ٹھیثنت آں کہ بادشاہ ایغ اثنت ۔ لوغ اِش مں مزں شانیں ماڑیان اث، ماذن وہشترانی دارغ ، سیل و سوادھ و شکار ، او لوغہ اندرا عیش کنغ۔ غریب و پذکپتغیں عوام وثی مرضی آ گوں گزر کث اش، خوشامدی ایں درباری داشتنت اش کہ آنہانی اندرا سازندہ ، کند ینوخ، سائیں بھوتار گشوخ ،او ہمے ڈولیں دوہمی مخلوق اوارثنت ۔ آنہاں ژہ وہش بیث انعام داثنتش ۔ ہماں زمانغ ئِے جاگیردار او نیم جاگیرداریں سماج ئِے نشانی ہمے کستر مستریں عیش پسند ی اثنت ۔ ۔ جاگیرداراں ژہ ابیدہماں زمیندار دِہ استثنت کہ آنہاں ڈغار معاوضہ چکا دیغ بیث۔ ہمے معاوضہ سالانہ مال گزاری صورتہ گرغ بیث۔ زمیندارانی عادت دِہ جاگیردارانی ڈولین اثنت۔
جاگیرداری او زمینداری آ پذ پیری مریذی اث ۔چوکہ مں پیشا گوئشتہ کہ سندھہ اندرا مسلمانانی زمانغ ئِے بنداتی وختا عربی او عجمی علاقہانی کرامت داریں بزرگ آتکئو آباد بیثغ اثنت ۔ ہمے ڈولیں بزرگانی اندرا مزنیں اُشمار سیدانی اث۔ شاہ لطیف ئِے پث و پیر ک ہرات ئِے سیداثنت۔

سید خاندان ئِے پث و پیر کاں جہلی سندھا مزائیں شرفے ملثہ۔ آنہانی اثربڑزی سندھہ چکا دِہ ودھاناں شتہ۔ او گڑہ دراہیں سندھا آنہانی بزرگی او کرامتانی قصہ واپر تغنت۔ سندھہ اندرا سید خانوادہاں ہماں عزت کہ رستہ آنہی سبب یکے تہ ایش اث کہ حاکم طبقہ ئِے دست آنہانی چکا ایراث ، دوہمی اش اث کہ ہمانہانی بازیں مڑدم شخصی صورتا عبادت ، علم او جوائیں عادتانی اندرا باز دیما اثنت۔
چیارمی صدی ہجری آ ژہ رندی کڑدے صدیاں دَہ ہماں سید کہ سندھا آتکغنت ہماہانی درجہ ولی او بزرگانی اث۔
پر، پذا دوہمی سیاسی و سماجی ادل بدلانی سببا بازیں سیذانی اندرا ہماں بزرگی شتہ کم بیاناں کہ شمانہاں آں عزتمنداثنت ۔ مخلوق ہمانہانی رسمی دینداری ئِے دانڑتی دِہ منوخ اثنت۔ پر ہماں دراہیں جوانہہ کہ شماہاں آں پیرو مرشد اثنت، دنیائی لالچ و حرص ء اندرا بدل بیاناں شتغنت ، او عیش و نام و ناموز ئے ِوسیلہ ٹھیثغ انت۔
شاہ لطیفہ زمانغا سندھ ئِے سماجی زیندھہ چکا مزں مزنیں جاگیرداراں ژہ ابید سیذ ، پیر، پہ نامیں صوفی، او قلندرانی پیلویں اثراَت او ہمے اثر ئِے مذہبی حیثیت اث۔ ہماں زمانغ ئِ پیرانی واہگ ایش اث کہ آنہانی مریذ اشمار ا ودھاناں بروانت ، او آں چھڑواے نہ کہ وثی مریذاں ژہ ٹُک و پیراہی ڈولا زیاتاں زیات فائدہا زیر نت بلکنا ہمانہاں وثی دلہ ڈولا گزر دِہ کننت۔ یک پیرے آ دوہمی پیر ء مخالفت کث، او وثی مریذانی دستاں ہمانہی جہل جنغ جوائیں ٹوکے گنڑاثی ۔ہمے ڈولیں مخالفت شاہا دہ بھوکثغنت ۔ حالانکہ آنہیا سفکیں کار بذگوئشتغنت ، کہ پذ کپتغیں ، غریبیں او بودلائیں عوام اوہام پرستی پلو ا بڑت وثی فائدہ زڑت اِش۔
شاھہ وختاں سندھ ءپ سماج پئَے بنیاد ایگریکلچر ہ چکا اث ۔ مخلوق موڑی سر میتگ و درشینہ آباداث کہ ہموذا راہک ، پہوال ، کسائیں دکاندار، ماہی گیر او دوہمی پیشغانی پذکپتغیں مڑدم اثنت۔ شاہ ئےِ شاعری اندرا ہمے پیشغانی مڑدمانی پچاراستیں ۔ ہمے پچار ہماں عادت و خصلتاں ژہ پُریں آں کہ آنہانی پیشغانی اثنت ۔ پہ مثال ہر ہندے کہ شاہا لوہارانی پچار کثہ ہموذا ہتھاڑی، بھٹی، او، سندانا ٹوک ضرور رسی ۔ہمے ڈولا دوہمی پیشغانی مخلوق کہ شاہ ئَ شاعری اندرا موجودیں ہماں کلانی تفصیل اوذا استیں۔
سندھ ئِے درشینی علاقہانی پذکپتغیں عوام سماجی صورتا بازیں مجبوریاں گوں دیمو دیم اثنت۔ گڑہ دِہ آنہاں دینی ٹوکانی اکھر خیال اث کہ ہماں سجہ ایں رسم وراجانی پابندی کث اش آں کہ آنہاں وثی پث و پیرکاں ژہ ڈھثغ اثنت ۔ پہ مثال ، شریعت ئِے فرضاں ابید آنہاں وثی ولی آنی زیارتاں چادر پرینت انت، پیرئِے ہر حکم دلا ژہ من اِتش ، دعا تعویذ او خیرات و پیراہی ئِ برکتانی چکا ایمان اثش ۔ او ہردولیں ڈکھ پہ اے خاطر ا داشتنت اش کہ ہمے کارانی خلافا ٹوک کنغ مرشذ ئِے رنجا کنغ اث ۔ آنہاں یک پلوے تہ وہشی وہشی آ گوں جاگیردارانی عیشہ خاطر سختیں پورہات برداشت کثنت او دوہمی پلو ئَ وثی نیز گاریں حالتا دِہ پیر ئِے ٹک وپیراہی داثنت۔
بزنس موڑی سر بقالاں کث۔ درشین ئِے کستریں دکاناں بہ گر تاں شہر ئِ مزائیں دکاناں باز طریقہ او سلیقہ آ گوں وثی کار بار کث اش ۔ ہمے سبب اث کہ سندھ ئِے بزنس چکا ہمانہانی قبضہ اث۔
بقالانی دینی او سماجی رسم او رواج مسلماناں ژہ باز جذا اثنت۔ گڑہ دِہ سندھہ بقالانی مزائیں خاصیتے اش اث کہ آں دوہمی علاقہانی بقالانی ڈولا مسلماناں ژہ ہز ء نہ خن انت۔ مسلماناں گوں آنہانی رووآغ او تعلق جوآن اثنت ۔ مسلمانیں پیر فقیر ہمنگہ منت انتش چوکہ مسلماناں من اثنت ۔ ہمے رنگا ہماں سادھو، ملنگ او بھگت دِہ من اثنت اش کہ قطبی ہندا و دوہمی دیر دراژیں علاقہانی ژہ سندھا کاتکنت ۔ ہمے سبب ایں کہ جوگی گیری او بھگتی ئِے تحریک سندھا باز مقبول بیثغ انت۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*