شاہ عبدالطیف بھٹائی بایوگرافی

شاہ عبدالطیف بھٹائی 1960ء ضلع حیدر آباد ئِے تحصیل ہالاء پیدا بیثہ ۔ آنہی پث سید حبیب شہر ہالا حویلی ئَ آباداث او آں ہمے علاقہ ئِ بزرگ ایں مڑدے اث۔
مشہوریں کہ سید حبیب ئَ سروپذی ئَ 3 سیر کثہ ۔ پراولاد نیست اثی ۔ آنہی ئَ وثی ہمے بے اولادی پچارگوں یک بزرگے ئَ کثہ کہ نام عبدالطیف اثی ۔ آنہی ئَ دعا کثہ کہ انشاءاللہ تئی مراذ پیلہ بی ۔ہا، تہ وثی بچ ئَ چکا منی نام عبدالطیف ایرکن ۔آں ھذائی حکم ئَ گوں بے مثالیں مڑدے بی۔
سید حبیب ئے اولی زالا ژہ بچے پیدا بیثہ ۔ ہماں بزرگ ئَ خواہش ئَ چکا آنہی نام عبدالطیف ایر کنغ بیثہ ۔ پر ہماں چورو کسن سالی ئَ سوب بیثہ۔ اغدہ ہماں زالاژہ دوہمی بچ پیدا بیثہ تو آنہی نام اغدہ عبدالطیف ایر کثئی ۔ ہمے بچ رندا شتﺅ ہماں بزرگ ئَ گوئشتن ئَ ڈولا جائی کہ بے مثالیں مڑدے بیثہ۔
شاہ بھٹائی ئِ پث وپیرک ژہ سیذانی ایک مزائیں خاندانے ئَ اثنت ۔ آنہی شجرہ حضرت علی ؓ او ھذائی رسول حضرت محمد مصطفی (ص) ئَ داں پُجی ۔ امیر تیمور ئَ وختاں ہرات ئِ بزرگ سید میر علی باز جوائیں ،او ہماں علاقہ ئِ باز عزتنا خیں مڑدے اث۔ 1398ئَ وختیکہ امیر تیمور ہرات ئَ آتکہ تو سید صاحوئَ آنہی او آنہی سنگتانی باز چیٹ کثہ او باز زر آنہی ئَ داتئی ۔ تیمور ہمے چیٹ وخدمتاژہ باز وہش بیثہ او آنہیا سید صاحب او آنہی دو بچ ابو بکر او حیدر شاہ وثی خاصیں مصاحب ٹاہینتﺅ ہندوستانا آڑتغنت۔ ایذا آڑتﺅ آنہیا میر ابو بکر سندھ ئِ علاقہ سیوستان (سیوہن ) ئِ حاکم کثہ ، او سید امیر علی او حیدر شاہ وثی پجی ئَ داشتغنت ۔ رندا سید حیدر شاہ دِہ وثی عاریفیںپثاو تیمور ئِ اجازتا گوں چروگڑدا کناناں سندھ ئَ آتکہ ۔ او ہالا ئِ علاقہ ئَ شاہ محمد زمیندار ئِ مہمان بیثہ ۔ شاہ محمدئَ آنہی ہمکر خدمت کثہ کہ وختی ایں سلام دعا ، باز ڈونگھائیں دوستی ئَ بدل بیثہ۔ چیزے روش ئَ رند آنہی ئَ وثی جنک فاطمہ ئِ سیر ہمانہی ئَ گوں کثہ ۔ پچیکہ آنہی ماث ئَ نام دِہ فاطمہ اث ہمے خاطر ا سیر ئَ رند ہمے نام سلطانہ کنغ بیثہ ۔ سید حیدر شاہ گوئش کہ 3سالا داں ہالا ئَ جاہ منند بیثہ۔ گڑہ وثی عاریفیں پث ئِ موث ئَ حال اَش کثﺅ ہر ات ئَ لڑثہ تہ آنہی لوغی لاف پُراث ۔ لڑغ ئَ وختا گوئشتئی کہ اغر مئیں لوغا بچے بیثہ تہ آنہی نام میر علی بی ، او اغر جنکے بی تو آنہی ناما فاطمہ ایر کنیں ۔ بچے پیدا بیثہ او سید صاحو ئِ گوئشتن ئَ سرا آنہی نام میر علی ایر کنغ بیثہ ۔ میر علی ئِ خاندانا باز مزائیں کمال والائیں بزرگ پیدا بیثغ انت، ہمے بزرگانی اندرا شاہ عبدالطیف ئَ ابید شاہ کریم ، سید ہاشم او سید جلال خاصین اثنت ۔
شاہ لطیف ئِ پیدا بیغا ژہ کڑے روشا رند آنہی پثاوثی ابا ڈاڈائی شہر اِشتﺅ کوٹری ئَ لڈثﺅ آتکہ ۔ شاہ لطیف پنچ شش سال ئَ عمر ہا آخوندنور محمد ئِ مشہوریں مدرسہ ئَ پڑھغا پہ دیم دیغ بیثہ ۔ مشہوریں کہ شاہ صاحبا الف ئَ دیما پڑھغ ئَ ژہ جو اوداثہ، پر مناں ہمے ٹوک ئَ سراہچ باورنہ یئے ۔ شاہ ئِ کلاما کہ گندئے تہ سما کفی کہ آنہی ئَ چھڑو وثی زبان ئَ چکا کمان نہ یث بلکنا عربی فارسی، ہندی او دوہمی علاقائی زبان دِہ جوانی ئَ کاتکنتی ، بلکہ ہمے زبانانی لٹریچر ا گوں دہ جوانی ئَ ولداث ۔ آنہی ئَ وثی شاعری اندرا ہر ہندے ئَ کہ عربی اور فارسی گزرکثہ ہماں اکھر بر محل ایں کہ آنہی ئَ ژہ آنہی کلام ئِ اثر انگت گیش بی۔ ظاہریں کہ اے اثر والی شاعری باز مطالعہ گوں پیدا بیثہ بی ۔ ڈاکٹر ٹرمپ ئَ ہمے روایت رذ کثو ثابت کثہ کہ ” شاہ ئِ تعلیم یافتہ بیغ ئِ کلاں ژہ مزائیں ثبوت تہ آنہی شاعری ئِ کتاب ایں، کہ آنہی اندرا عربی او فارسی باز سنہڑائی ئَ گزر کنغ بیثغنت “۔ بیثہ بی کہ علم ئِ حاصل کنغ ئَ پہ شاہااستاذے ئَ ژہ باز کمک نہ گپتہ، بلکہ پوہ بیغ او سرپذ بیغ ئِ صلاحیت او شوق ئِ جذبگ ئِ بنیادا ظاہری او باطنی علم حاصل کثغنت ۔
شاہ ئَ امسرو ،مقالات الشعرا ئِ مصنف میر علی شیر قانع ٹھٹوی اے بارو ئَ لکھی کہ ” آنجناب لطیف اگر چہ اُمی بود اما علم بتمام بر لوخ محفوظ دل شاں مثبت بودہ“۔ مرزا قلیچ بیگ ،ڈاکٹر گربخشانی ، مولانا دین محمد وفائی ، پروفیسر جیٹھ مل ، ڈاکٹر سورلے ، پروفیسر کلیان آڈوانی ، او دوہمی ریسرچراں دِہ ہمے ٹوک ئَ چکاوثی رایہ داثغنت ۔ بہر صورت اے نتیجہ کشتہ کیث کہ شاہ ئَ اُمی گشغ ہچ ڈولا درست نہ ایں۔ اصل ٹوک اشیں کہ شاہ ئِ زمانہ ئَ اور شمانہی ئَ پیش سندھ ئَ اندرا عربی او فارسی زبانانی بادشاہی اث او ہماں مڑد عالم گنڑغ بیث آں کہ ہمے دوئیں زباناں اور خاص کں فارسی ئَ وستاذ بی۔ شاہ ئِ طبیعت کسن سنی ئَ ژہ درو کا جتا اث۔ ہمے خاطرئَ آنہی عقل مندی چھڑو رسمی ڈولا سِکھغ ئِ بھیرانہ یث ، بلکنا آں عامیں وڑو ڈولا ژہ دیر بیثﺅ وثار پہ نوخیں راہ ودگے پیدا کنغ ئَ کوشیشا ماناتکی ئَ بیثہ۔ بیثہ بی کہ ہمے انحراف ئَ سببا میر علی شیر قانع ئَ کہ شاہ ئِ عقیدت مند دِہ استہ گڑہ دِہ وثی فارسی دانی سببا شاہ اُمی مشہور کثہ ۔ بیثہ بی کہ آنہی چناں اے دِہ یک بھیریں عقیدت ئَ اظہار بی ، پردھموذ کہ شاہ ئِ کلام ئِ ڈونگھائی او فنی مال ومڈی ئِ ٹوکیں، تو اے منغی بی کہ ”قبول خاطر و لطف سخن خداد ادست “ ئِ شرط ئَ ابید ہم چیزے شعوری کوشیش ہمنگیں استنت کہ شاعری طبیعت ئَ چکا اثر ئَ پریننت۔ ہمے کوشیش تونڑیں کہ مجلسی علم ئِ ٹاہینتغیںبنت یا باقاعدہ علم ئَ حاصل کنغ ئِ تورہ مند ، بہر صورت آنہانی ارزشت ئَ ژہ انکار کثہ نہ یئے ۔ شاہ ئَ گوئر یک ودونہ بلکہ صذانی حسابا ہمنگیں مثال استنت کہ آنہانی اندرا ہماں علمی کوشیشانی عمل جوآنی ئَ دیثہ گیث آں کہ ”تانہ بخشد خداے بخشندہ “ ۔ اشی ئَ تونڑیں کرامت گشئے یا یک بڑزیں شاعرے ئِ حسیاتی ردعمل گشئے ، اصل معاملہ ئَ اندرا ہچی فرق نہ یئے ۔ خیال ایں کہ شاہا استیں علم و فن نہ چڑو فکر و گنڑتی ئَ ژہ حاصل کثغ ات ، بلکناڈونگھائی او مزں پاندی پجی پجی ئَ نوخیں چیزانی آرغ ئِ پیلویں قدرت دِہ پیدا کثغ اث۔
ہماں روشاں کہ شاہ حبیب بھٹ شاھہ نزیخا کوٹری نامیں میتگے ئَ آباد بیثہ ،ہموذا مرزا مغل بیگ ارغون نامیں یک معتبریں خاندانے آباداث ۔ شاہ حبیب ئِ نیکی او بزرگی مغل بیگ ئَ باز و ہش آتکہ۔ آں وثی پیلویں خانوادہ ئَ پجی ئَ شاہ حبیب ئِ مریذ بیثہ۔ ہروختیکہ مرزا ئے لوغ ئَ نادرا ہی اے بیث تو جھاڑ جنغ ئَ پہ شاہ حبیب لوٹائینت اش ۔ مرزائے لوغ ئَ پردہ باز سخت اث پرشاہ حبیب ئَ پہ ہمے بالکل دروغ کنغ بیثہ ۔ لوغ ئِ سجہ ایں جن آنہی دیم ئَ کاتکنت او وثی حاجتاں پہ دعا او تعویز گپت انت۔
یک روشے مرزا مغل بیگ ئِ ورنائیں جنک نادراہ بیثہ ۔ نوکرے شاہ حبیب ئَ نیغادیم دیغ بیثہ ۔ پر ہماں روشی شاہ حبیب نادرہ اث ہمے خاطر ا آنہی ئَ وثی نوخ ورنائیں بچ دیم داثہ ۔ مرزا سری تہ پریشاں بیثہ ، پر دیثئی کہ پیرومرشد ئِ بچ ایں تہ باز عزتا گوں دراہی کثئی او وثی پجی ئَ لوغ ئَ اندرا بڑتئی ۔ ورنائیں شاہ لطیفا ناغماں یک پری صورتیں نشتغیں جنکے وثی دیمادیثہ۔ دوئینانی چم یک دوہمی پلوا بڑزبیثغنت تو دوئینانی دلاں مہر ئِ آس روخ بیثہ ۔ مرزا ئَ ہماں وختا سما کپتہ پرہماں وختا ہچی نہ گوئشتئی ۔ شاہ لطیف گوں ناکامیں دلے ئَ دعا کثﺅ وثی لوغا شتہ پر مہر ئِ ہماں چڑنگ کہ دل و چماں ناغماں روخ بیثغ اث ، تسغ ئَ تیار نہ اث۔ بیثہ بی کہ مرزا ئِ، ورنائیں جنکئے دِہ ہمے حالت اث، او ہمے خاطرا مرزا ئِ شک اکھر گیش بیثہ کہ شاہ حبیب ئَ گوں سنگتی پروشغ ئَ پہ مجبور بیثہ ۔ ہمے ٹوک کہ شاہ حبیب ئَ دَہ پجثہ تہ آں باز ڈکھی بیثہ۔ بچ نصیحت کثئی پر ہچ اثر نہ ویثہ ۔ آخر کار آنہی ئَ کوٹری اشتہ ، او دوہمی ہندے ئَ ساہڑغ ئَ پہ مجبور بیثہ۔
شاہ لطیف ئِ مہر ئَ باروا اِنگادِہ گشنت کہ وختیکہ ورنائیں جنک ئِ دست کہ آنہی دستا آتکہ تو شاہ ئَ دفاژہ درکپتہ :” ہر کسے دست کہ سید ئَ دستاں آتکہ تہ گڑہ آنہی ئَ پہ چے دڑدے چے دورے !“۔ روایت چوشیں کہ ہمے ٹوکاں گوں مرزا ئَ زہر آتکہ او آنہی ئَ شاہ حبیب مجبور کثہ کہ کوٹری ئَ ژہ درکفی۔ بہر حال قصہ ہر ڈولے کہ بی حقیقت اشیں کہ ہمے حادثہ ئَ شاہ ئِ زیندھ ئَ چکا مزائیں اثرے پرینتہ۔ آنہی ئَ لوغ اشتﺅ جنگل و برّاں دیم داشتہ۔ 3سالا داں چروگڑد کثئی۔ آنہی شئیر ڈس انت کہ ہمے چروگڑداآں بازیں ڈیہاں شتہ۔ گشنت کہ چراناں چراناں ٹھٹھہ ئَ آتکہ۔
ہموذا مخدوم علامہ معین نامیں عالمے دیثئی کہ حضرت شاہ ابو القاسمئِ خلیفہ اث۔آنہی ئَ کہ شاہ ئِ حالت دیثہ تو باز دلدوری کثئی او کوشیش کثئی کہ وثی جوائیں سلوک ئَ گوں ڈولے نہ ڈولے ڈکھیائیں روح ئَ اندام بہ کنت۔ ہمانہی کوشیشاں گوں شاہ باز نرم بیثہ ۔ بیثہ بی کہ اے مخدوم معین ئِ صحبت ئَ اثر اث کہ شاہ ئَ اغدہ وثی ماث وپث ئِ خدمت او عبادت ئَ پلوا گھوئی کثہ ۔ شاہ گڑ تﺅ ماث وپثاگوئر شتہ۔ آں بازوہش بیثغنت ۔ شاہ حبیب تہ ہمکروہش بیثہ کہ گشئے نوخیں دھکاں ساہ ماں بیثئی ۔
شاہ ئِ واپسی ئَ ژہ کڑدے وخت رندا ”دل“ قوم ئِ سرکشیں مڑداں مرزا مغل بیگ ئَ ماڑی چکا حملہ کثہ (1713ئَ ) ۔مرزامغل بیگ ئَ لوغئے نریں مڑدکُشتغ انتش ، چڑویک کستریں چوروے اوزال سراتکغنت ۔ ہمے لٹ وپل او کشت کوشا ژہ ہمے زال و چک باز ویل و جنجالاں کپتغ انت ۔آنہاں وہم بیثہ کہ ہمے تباہی سیذانی رنجا کنغ ئَ سببا بیثہ۔ آں کل شاہ حبیب ئَ گوئر آتکغنت ، پاذاں کپتﺅ بشک لوٹثہ او لِیلڑی کُث ایش کہ آنہانی سرپرستی ئَ بہ کنت۔ آنہاں مرزا مغل بیگ ئِ جنک دِہ شاہ لطیف ئَ گوں سیر دیغ ئَ اقرار کثہ ۔ ہمے جنک ئَ نام سیدہ اث کہ پیش ئَ ژہ شاہ ئِ چمانی قرار اث او کہ ہمانہی خاطرا آں برّاں ٹِلہثہ۔ شاہ حبیبا مغل زالانی ہرڈولے مذت کثہ۔ شاہ لطیف ئِ سیر گوں سیدہ ئَ بیثہ۔ جنک ئِ لوغی تربیت ہمنگا بیثغ اث کہ دراہیں لوغ سنبھالتئی۔ عادت دِہ ہمکر جوان اثنتی کہ سیر ئَ رند شاہ ئِ مریذاں آنہی نام ”تاج المخدرات “ ایر کثہ ۔
سیر ئَ رند شاہ کوٹری ئَ ژہ چیار پنچ کوس دیر یک سوادہی ،پر غیر آبادیں ہندے ئَ جاہ منند بیثہ ۔ ہمے سوادہی ہندنِیں ”بھٹ شاہ“ ناما مشہوریں ۔ ہماں زمانہہ ئَ ہمیذا ریخ ئِ کڑدے ٹِبغ اثنت ۔ شاہ ئَ ہمیذا یک سہنڑائیں شہرے ٹاھینغ ئَ کار شروع کثہ۔ مریذو مرا دونداں بھڑائی داثہ۔ بیاناں بیاناں ہمے کستریں بولک عام و خاص ئِ دربار بیثہ۔ دیر دراژیں علاقہاں ژہ صذانی حسابا سازندہ ، سنیاسی او پخیرانی آغ روغ شروع بیثہ ۔ او ہمے ڈول ئَ آں دیر یں ڈیھاں دَہ مشہور بیثہ ۔ شاہ عبدالطیف دانڑتی بھٹ ئَ آباد کنغایث کہ عاریفیں پث ئِ نادراہی حال رستئی ۔ آنہی کوٹری پجغ ئَ ژہ پیشا شاہ حبیب سوب بیثہ ( 1731ئَ) ۔ پث ئِ موث ئَ شاہ ژہ کوٹری ئَ بالکل بے نیاز کثہ ۔شاہ حبیب ئِ کفن دفن دِہ بھٹ شاہ ئَ بیثہ اوپذا شاہ ئِ رضا ئَ گوں خاندان ئے باقی مڑدم دِہ لڈثﺅ ہموذا آتکغنت ۔
بھٹ شاہ ئَ آباد بیثی ئَ کمیں سال گوئستغث کہ شاہ لطیف اغدہ سیل وسواد ہا پہ درکپتہ۔ آنہی ارادہ پاکیں ہندانی زیارت ایغ اث، پر اسمانہ ئیں کہ پچے آنہی ئَ ارادہ پیلو کثہ نہ کثہ او گڑتﺅ بھٹ شاہ ئَ آتکہ او عبادتا ماناتکہ ۔ شاہ ئِ موڑی سروخت ایک و یکی ئَ گوئست ، فکر و گنڑتی ئِ عادت کستری ئَ ژہ استثی ،زانت ئِ پکوئی او بازیں دنیاوی تجربہ دِہ گوں بیثغ انتی ۔ شیئر و شاہری او سازو زیملا گوں کہ دل اثی آں شتہ ودھاناں ۔ آنہی ئَ گوں اکھر دل اثی کہ زیندھ ئِ آخری گھڑی آں ژہ معلوم بی۔ گشنت کہ سوب بیغاژہ گیست و یک روش ئَ پیش شاہ مخلوکا ژہ پیلوی ئَ جتا بیثہ ۔ ورغ چرغ ئَ ژہ دِہ بے نیاز ۔یک روشے جان ئَ شوذغاژہ رندئَ وثی پُشتی چکا کثئی، عقید تمندانی مچی ئَ آتکہ ، محفل سماع کنغ ئِ اشارہ کثئی او وث مراقبہ کنغا پہ حجرہ ئَ شتہ۔ پیلویں سے روشاداں باز شوق ئَ گوں محفل سماع برجاہ بیثہ۔ آخر سیمی روشا کڑدے عقید تمند کہ حجرہ ئَ شتہ تو دیث ایش کہ شاہ لطیف ئِ روحا کذی کہ بال کثغ اث ۔ کس ئَ سمانہ کپتہ کہ ہمنگا چہ وختا بیثہ ۔ عام ہسٹورین او ریسرچر آ نہی سوب بیغ ئَ روش 14صفر 1165ھ ( 1752) ئَ ڈسنت۔
1754ئَ غلام شاہ کلہوڑا یا وثی پث نور محمد ئِ حکم ئَ گوں شاہ ئِ قبر ئَ چکا یک زیبائیں گنبذے ٹائینائینتہ، کہ دانڑتی دَہ استیں او سندھی فن تعمیر ئِ یک شاہ کارے گنڑغ ئَ بی۔ دربار ئِ گیٹ ئَ چکا فارسی ئِ تاریخی شیئر لکھثی ئَ ینت کہ شماہاں اے شئیر ٹھٹھہ ئِ مشہوریں شاعر محمد پناہ رجا ایغیں:
زد نعرہ در فراق ، دگر کرد سینہ چاک
محو شددر مراقبہ جسم لطیف پاک
(1165 ھ)
گفت ایں رجا مریدین ارتحال پیر
گردیدہ محو عشق وجود لطیف میر
(1165ھ)
شاہ ئِ سیرت ئَ بار وا سندھی، فارسی ، انگلش ، ہندی او اردو ئِ عالماں وثی رایہ داثغنت ۔ مجموعی صورتاکلاں منثہ کہ شاہ چڑویک بڑز قامتیں خدا رسیدہ ایں بزرگے نہ یث ، آنہی تہ شاعری حیثیت دِہ دائما مشہوریئِ لائخ اَیں۔ شاہ باز سادہ ، پاک، سنگین بردبار، رحیم دل او عاجزیں مڑدے اث۔ ہمدردی او قربانی، بے طمع ایں رواداری ، وسیع الخیالی ، وش آﺅخیں دِیر گندی ، مہروانیں رحم دلی او ہمے ڈولیں جوآنہہ آنہی سیرت ئَ ”آنچہ خوباں ہمہ دارند تو تنہا داری“ ئِ سندھو ئَ دَہ برنت ۔
شاہ ئِ رذوم او ذہنی تربیت ہمنگیں شرفناخیں خانواد ہے اندرا بیثہ کہ زمانغے ئَ ژہ علم وعرفان ئِ ڈیوائَ بالثیئَ یث ، او کہ آنہی علم و فضل ئِ قصہ چار چودہارئَ داں پجثی ئَ یث۔ آنہی پث شاہ حبیب پریشتغ اے اث ، دیر نز یخا عزت ئِ نغاہاں چارغ بیث۔ ماث دِہ کاملیں عارفیں خانواد ہے ئَ ژہ اث۔ ہمے خاطرا شاہ ئَ کسن سالی ئَ ژہ وثی صلاحیتانی ترقی دیغ ئَ باز جوائیں موہ رستہ ۔ زانتی بیغ ئَ داں ہماں قابلیں جوہر دِہ اکّیلا بیاناں شتہ کہ شاعر طبیعتی ئَ رانوخیں تو آن وقوت دیغ ئَ پہ قدرت ئَ پلواژہ دیغ بیثغثی ۔ گڑہ عشق ئِ حادثہ ئَ ہمے شاعر طبیعتی ئَ آں سوزوساز کہ بشکثہ ، ہماں دِہ یک نوخیں ذہنی انقلابے ئِ پیژ گواث اث۔ براں بیواناں چرّغ و گڑدغ،قدرتی سوداہانی زبردستیں مشاہدہ کنغ ، باز نمونہ ایں تاریخی او غیر تاریخی ہندانی دَمباں گوں ذہن ئَ پجھاروکنغ ، ڈول ڈولیں سیناسی ، جوگی ، پخیر ، درویش ، قلندر او سیلانی ایں سا زندہ آں گوں نندغ کڑو بیغ، ہما نہانی عادت و خصلتاں ہیڑتی ئَ چاراناں، وثی وطن ئَ ژہ دِیریں علاقہاں آبادیں مڑدمانی کلچرل ہیری ٹیج ئِ تجزیہ کنغ ، گوئنڈ ایش کہ شاہ ئِ نوخ ورنائی ہمنگیں ڈولے ئَ گوئستہ کہ مزں شانیں محل وماڑیانی نندوخاں گِرداں بروبیوانی اندرا بے سامانی ئَ چرو خاں، مظلوم ایں راہک اوسادہ ایں پورہاتی آں ،بازیں ہمنگیں منزل آتکغنت کہ آنہاں شاہ ئِ سیرت ئَ راباطنی بصیرت ، او روحانی کیفیتانی اسرارداریں راز سرپد کنائینتہ ۔ او ہمے راز و رمزانی جادواث کہ ورنائی وختا کہ شاہ ئَ لوغ و آروسی زیندھا گام ایر کثہ ، گڑہ دہ یک ماورائی تُن اے نامعلومیں آبِ حیاتے تلاش ئَ اندرا بیثہ۔ ہمے تلاش شاہ ئِ مردم دوستی او خذا شناسی ٹھیثہ ، او ہمے تلاش ئَ آں عامیں انسانی نزوری آں ژہ بڑز داشتہ ۔ بغض و بدنیتی ،حرص ولالچ او ظلم وتشدد ئَ ژہ آں باز دیراث بلکہ یک ڈولے ئَ آں تہ وث یک ہمنگیں ایذا پسندی اے قائل اث آں کہ انسان ئِ مادہ پرستی ئَ گھٹ آراناں باڑت اوآنہی ئَ روحانیت ئَ پلوادیم داث۔ میٹریل زیندھ ئِ مقصد آنہی نزدیک ئَ اِش اث کہ آں یک بڑزیں مقصدے حاصل کنغ ئَ مں کمک ئَ داث۔
شاہ ئِ سیرت ئِ کلاں ژہ خاصیں ٹوک آنہی صوفی طرز ایں۔ آں قادری ٹک ئَ گون اث او شریعت ئِ تابعداری کنوخیں بزرگے اث۔ آنہی ئَ انسانیت ئِ دڑد بشکثی ئَ یث۔ ہمے سبب ایں کہ آں ہر مذہب وہر فرقہ ئِ مخلوک ئِ بزرگ اث۔ قادریہ مسلک ئَ اندرا محفلِ سماع ئِ موکل نَیں، پر ساز ئَ گوں شاہ ئِ اکھر دل اث کہ آنہی ئَ گوئر چڑو سندھ ئِ مشہوریں سازندہ نہ یا تکنت بلکنا قطبی ہند ئِ استاذیں ساز ندہ دِہ آنہی ئَ گوئر کا تکنت او محفل سماع ئِ، دل پذیری گیش کث اِش۔ پچیکہ ہمے ڈولیں محفل سماع نِیں چڑو چشتیہ طریقہ ئِ بزرگاں گوئر بی، ہمے خاطرا کڑدے مصنف گشی کہ شاہ قادریہ سلسلہ ئِ جوانی ئَ منوخے نہ اث۔ شاہ ئِ عاریفیں پث ہمے مسلک ئِ مڑدے اث ، شاہ ئَ تکّاں بیعت وثی جند ئَ پث ئَ دستا کثغ اث ہمے خاطر ئَ آں قادریہ طریقہ ئِ بزرگ منغ بی۔
کڑدے ئَ شاہ اویسی طریقہ ئَ گوں گنڈھثہ پچیکہ ظاہر اتہ آں ہچ شیخ اے دستاں بیعت نہ یث۔ ہمے مسلک ئَ بارہا شاہ لطیف ئَ مخدوم معین ٹھٹوی ئَ ژہ چیزے جست و پُرس دِہ کثغ اث ، کہ آنہی دراژیں ولدی مخدوم خواجہ معین ئَ ”رسالہ اویسیہ“ ئَ مں داثہ۔ اے رسالہ اصلا مں شاہ ئِ گشغ ئَ چکا نوشتہ کنغ بیثغ اث۔ اشی ئَ ژہ ظاہر بی کہ آں اویسی طریقہ ئَ گوں دِہ گون اث ۔ بہر حال بازیں پوہ و پہمیندغیں مڑدانی ٹوکاں گنداناںشاہ ئِ مسلک ئَ باروئَ اے گوئشتہ کیث کہ آنہی ئَ رسمی صورتا ہچ مسلک قبول نہ خثغ اث۔ آنہی ئَ وثی باطنی بصیرت ،او محنت ئَ ژہ یک ہمنگیں مزن پاندیں مسلکے بنیاد ایر کثغ اث کہ فرقہ گیری او تنگ نظری ئَ ژہ بڑز یں۔
شاہ ئِ دین ئِ آہری تہ آنہی کلام ئَ جندیں ۔آنہی شاعری اندرا ہماں اقدار کہ استنت آں آنہی دل پسندیں مسلک ئَ درشاں کننت۔ شاہ ئِ ہماں دل پسندیں مسلک چے اث ۔ آنہی ہیٹرتیں بیان ئَ ما دیم ئَ دوں، ایذا گوئنڈیں ٹوک اشیں کہ شاہ ئِ پولوخیں دل و دماغا حقیقی مطلوب ئِ گندغا پہ ہماں مسلک کہ زڑتہ آں روحانی اہلیت ئَ حاصل کنغ ئِ میٹریل ازبابانی نفی ئَ نہ خنت ، تونڑیں کہ آنہی چناں میٹریل زندگی وث ہچ مقصود ے نہ ایں بلکنا یک بڑز تریں مقصدے ئِ حاصل کنغ ئَ دگ اے۔
شاہ وثی منوخاں کم ورغ ، کم وفسغ ، وث منی ئَ ژہ پھجغ ، دوہمی آں گوں جو آں کنغ ، سادہ ایں پوشاک کنغ ،راضی بہ رضا بیغ او ذکرو فکر ئَ اندرا مشکول بیغ ئَ فرمائینی ۔ آں وث دِہ ہمے ٹوکانی چکا کار بنداث ۔ ظاہری عبادت ضروری گنڑاثی، پر اشی ئَ ژہ باز زیات ذاتی معاملہ فہمی او باطنی بصیرت ئَ چکا زور پرینتی ، اے خاطر ا کہ اغر انسان ئَ اندرا یک مقصدے زیرغ ئَ پہ حقیقی شوق پیدا مہ وی ،تو ظاہری عبادت وریاضت ئَ ژہ فائدہ مندیں نتیجہ درنہ کفنت ۔ پارسائی او تقوی ئِ غرور باز عیب گنڑثی ۔ آنہی ئَ ہماں عادت کہ بذ گنڑث انت، ہواں ہمنگیں اثرداریں ڈولے ئَ بیان کثنتی کہ دل ئَ نفرت دِہ درشاں بیث او پجی ئَ ہماں حل دہ اگھ ئَ کاتک کہ انسانی جبلت (اِنسٹنکٹ)ئَ قبول دِہ بیث۔ رحمدلی اے سندھو آ اث کہ مردم تہ مردم مُرگانی ڈکھی کنغ دِہ باز نُہرم گنڑثی۔ مزں پاندیں کائنات ئِ ذرہ ذرہ اکھر دوست اثی کہ ہماں کہ دیثی تہ آنہی جندئَ فکر و فن ئَ اندرئَ یک زیبائی اے پیدا بث ۔ ہمے سبب ایں کہ شاہ ئِ شاعری اندرا ہمنگیں بازیں چیزانی پیرا رسی آں کہ دنیائے بازجوائیں شاعراں دِہ ضروری نہ گنڑثغ اثنت۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*