بیا او مرید

بیا او مرید ، بیا او مرید، بیا او مرید دیوانگیں
بیا بیا کہ دیوانے کنوں ، مولانگ و مستانگیں
سوتکگ ترا عشق ئے زراب، مارا غماں کرتگ کباب
تو حانل ئِے درداں زرئے ، ماپہ وطن جانانگیں
چاکر تئی دوست ئَے پل اِت ، چما دگہ ڈنگاں وطن
تو سر پہ شیدائی شتئے ، ما پیھناں زندانگیں
تو حانل ئَے اِشت و شتئے، ماڑی ء میریں چاکر ئے
ما حانل ئے ملک ء ندوں ، جوریں بداں دلمانگیں
اِشتئے وطن پہ مکہ ء ، لوچیں ملنگاں گوں شتئے
مئے مکہ و ماس اِنت وطن ، نیلوں و طن شاہانگیں
پردیس تو ماں مکہ ء ، شیئراں زہیرنالیں جتئے
ماکپتہ زندان ئِے تہا، شیئراں جنوں رندانگیں
ہجر ئِے چہ درد و دوریاں، بند بند وتی داغ داتگ ئے
مئے بند و بنداں سوھتگنت ، جوریں بداں مستانگیں
تو زرتہ کچکول و عصا ، کوڑیں جہاں داتگ یلہ
در کپتگوں سربازی ء ، ما پہ پڑا مردانگیں
فرق ہچ نہ اِنت مئیگ و تئی ، درد ئَے و زرد ئے آچشا
تو حانل ئِے عشق ئَے گنوک ، ما پہ وطن دیوانگیں
ماں شیئر و عشق ئِے دپتراں ، دانکہ جہان ہست اِنت توئے
ما ہم جہان ئَے یات بوں ، ماں مجلساں پروانگیں
پُلیّں مرید، پُلیں مرید، بیا گوں فقیری باطنا
گوشدار شیئراں شکلیں ، گوشتگ نصیر دیر زانگیں

ماہتاک سنگت کوئٹہ

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*