غریو عوام

 

دڑداں مانیں غریو عوام

نَیں درکار مارا ہمے نظام

رمغیں ڈھوریں ڈولا کپتو

زندا گزارغیں تھیوغا عوام

ظلما زوراخ کھنغیں کپتو

لْچاں نیستیں ایذا لغام

جنگ و جدل لْٹ و پھل

ایذا استیں صحو شام

زوراخ وثی زر ئے زورا

غریوا کھنغیں کپتو قتلام

ڈیہے مڑدم گْڑنغ لافاں

دری آں ملغیں ایذا انعام

اُڑدو لشکر وزیریں استیں

نیستیں ایذا کھس حْکام

اولا غلام ذیں نی دے غلاموں

کھڑو بی نی تؤ ورنااو وریام

غیرت حمیت ہیچ نہ رھذا

خطرہ مانیں ننگ و نام

نیستیں قدر نیانڑیں ایذا

بے حیائی بیثہ نی عام وجام

دیثو حال غریو ایذا

واو استیں میئیں حرام

رفیق ؔدانہادیغیں تھرا

تئی گو استیں ہم کلام

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*