میر مٹھا خان مری

 

 

ہروہدیکہ من گوں میر مٹھا خان دو چار کپین، مدام من آئی استازی ووتی شاگردی ئے سرا پہر بندیں کہ من چشین استازے ئے شاگرد بوتگن۔ بلے میر صاحب چومہر بانیں مسترے آ منا چہ وتی اے حب ئے وشی ئے درشان کنگ منہہ کنت۔ بلے حقیقت ہمیش انت کہ منا میر مٹھا خان و آئی پیمیں وتی دگہ مہر بانیں استازانی سر اپہر انت۔

 

ایش انت منی و میر مٹھا خان ئے زند ئے اولی مستریں تعلق داری۔

 

میر صاحب1934آ ماں نوشکے ئے یکیں سرکاری مڈل اسکولا استاز (ماسٹر) ات و من کہ آوھد ا چہارمی کلاسا ونتن، میر صاحب ئے شاگرد اتن، ہمے اکولا منی وگہ مہربانیں استازے واجہ محمد ہاشم خان غلزئی ہیڈ ماسٹرات۔ہمے اسکولا منی مستریں براس حدا مرزی آزات جمالدینی ہم منی استازات۔

 

میر صاحب وش در و شمیں زیبائیں ورنائے ات کہ مدام بچکندو کیں ومہربانیں انسانے ات اووتی منصب و کار ا وتی مٹ وت ات۔ من کہ نوں پکر جنیں من آ گیر کیت کہ میر مٹھا خان مری چہ ہما وہدا زانت دوستیں برز حیا لیں رژن کار ے ات کہ آوہدی ئیں بلوچستانا اے ڈولیں ورناپہ حساب اتنت۔

 

مئے سکول ئے سالینہ ئے درگت ات۔ اہداں مدام سالے یک بر آ جلسہ بوتنت۔ میر صاحبا ساز ئے ہم شوق ات وگوں سازا شعر ہم گوشتی، پہ جلسہ ا شعرے ہم گوں ساز آ ہور جنگی ات۔ سہرائیں ہبرے کہ سکولا اے کار ا بیدچہ میر صاحبا کس کرت نہ کرت۔ من و منی ناکوزہکے محمد بلال صاحبازہگانی ہمرا ہی آ سکولا دعاونتن۔ زانا مئے تو اروش ات۔ میر صاحب مارا پہ جلسہ ئے شعر ا درچت و چہ جلسہ آ ساری مدام گوں آئی ہوار شعر ئے تیاری آ کرتن بزان ریہرسل۔مارا پہ شعرا پر ماتی اووت ہارمونیم  جتی  شعر علامہ اقبال ئے ات، فارسی شعرے کہ سری گلا ایش ات۔

 

کشادہ روزِ خوش و ناخوشے زمانہ گزر

 

جلسہ بوت و ما اے شعر ا جلسہ آ پہ گٹ گوں

 

میر صاحب ئے ہارمونیم ئے توار ا ہور ونت۔ بلے اے وہد ا کہ من میر مٹھا خان ئے زند ا چارین تہ اے سفر آئی زند ئے راہ نشان دؤک بوتہ، آئی زند ئے اصول، میر صاحب چہ زند ئے گرم سرداں مدام بچکنداناگوستہ وگوزان انت۔

 

میر صاحبا آوہداں قلمی نامے ہم پر ات کہ تاں بازو ہداں میر صاحبا مردم پہ ہما قلمی ناما یات کرتنت۔ آ قلمی نام خضراتؔ۔ بلکہ میر صاحبا شاعری کرتہ واے میر صاحب ئے تخلص ات۔بلے من میر صاحب و تی جند ئے شعر نہ ماں اردو آ، نہ ماں فارسی یا بلوچی آ ہچبر نہ اَشکتہ و نہ جاگہئے ونتہ۔

 

بلے چہ باز سالاں میر صاحب ئے ناما چہ خضر ئے لبز جتا بوتہ۔ نزانین کہ پرچے؟۔میر صاحب چہ نوشکے ئے سکولا بدل بوت ولہتیں سالاں رند من ہشت کلاسا پاس کرتن و پہ دیما وانگا پشین ورند آ اسلامیہ کالج پشاور ا شتن وہدیکہ من بی اے آ در برتن وپدا بلوچستانا آہتن و ما نوکری آ لگتن تہ میر صاحبا پدادیستن۔ اے1946سال ات۔ من مال سپلائی ئے محکمہ آ نائب تحصیلدار اتن و میر صاحب ہمے محکمہ آ اکاؤنٹ بزاں حساب و کتاب ئے شعبہ ئے کار مسترات۔ ہما میر صاحب ات آئی ہما پاگ و صدری و بیس، ہما وش دروشمیں سکہ ئے وبچکند گی ات کہ من سکول ئے وچکی زمانگا دیستگ و تامروچی ئیں روچا میر صاحب ہما یک پیما انت۔ بیدچہ اے ہبرا کہ میر صاحب ئے سن مزن بوتہ  لاگر اوریشے اسپیت انت۔

 

میر صاحب ئے سر ا سپلائی ئے منصب داری آ ہچ اثر نہ کرتت۔ نہ آزگاریں بیورو کریٹے بوت، نہ مگوزیں صاحب وپلنگے ات۔ میر صاحب ئے توکی بدل دوداں چہ کئے سئی ات؟۔

 

چارپنچ سالا رند من چہ سرکار ئے نوکری آ دوچار کرت میر صاحبا منا پداپہ نوکر بوٹگا منا ئینگ ئے جہد کرت۔ بلے من نہ منت۔ نوکری ئے یلہ دیگا رند زند ئے دگہ تاڑو تیلانک بنا بوتنت۔ منا ہم بلوچی زبان ولبزانک ئے گواتا گورجت ولبزانکی و ازم گرانی دیوان دوست بوتنت۔ ماں کوئٹہ آ ڈاکٹر عبدالحمید کاکڑ باز انسان دوستیں ولبزانت و ازم ئے شوقی ئیں مردے ات۔ میر صاحب ئے سک دوست ات۔ وہد وہدے ما ڈاکٹر حمید ئے لوگا بیگہاں شتن۔ تہ میر صاحب ہمودا ات۔ میر صاحب ئے ماں اے ڈولیں نندو نیاداں مزنیں عزتے ات و آئی زانت و لبزانک دوستی ئے ڈس منا چہ ہمے ڈولیں دیواناں رست۔

 

چہ اے دیواناں سئی و سر پد بوتن کہ میر مٹھا خان مری چہ بنداتا رژن کار ولبزانتے بوتہ۔ آئی وتی نوکری ئے مُد ا ہم اے درگتا مدام سرجتہ واردو وفارسی وانگریزی ئے نامی ئیں شاعر و دلبزانتانی شعر و نبشتانکانے ونتہ، ہمے دیوانان میر صاحب مدام غالب، میر، اقبال، حافظ، سعدی،بیدل، نظیری وبازیں د گرانی شعران و نتی ومن چہ میر صاحب ئے انکس شعرانی یات کنگا وچہ آئی شریں حافظہ آسک بہہ منتن زندا پد امنا تیلانک دات و سرمنی پہ کاراچی کپت۔ بازیں سالانی دراں ڈیہی آ رند 1972آ کہ من کوئٹہ آہتن تہ میر صاحب بلوچی اکیڈمی ئے کار دار ات۔ آئی وتی چاگرا نامی ئیں بلوچ لبزانت وقلمکارانِ نزآورتگ ات۔ اکیڈمی آ بازیں کتابے چھاپ کرتگت۔ اے چاگردوکار انِ آ کہ من دیستن سک وش بوتن ویک برے پداوتی مزن نامیں  استاذئے سر ا پہربستن۔

 

میر صاحب و آئی سنگتاں حدا مرزی ملک محمد پناہ، صورت خان و عطا شاد ا منا اکیڈمی ئے نیمگا آرگ ئے حب درشان کرت۔ دگہ گیگ نیستت۔اکیڈمی آ پٹ وپول ئے کارانا چارگزارکنوکے ئے گزرات، گوں اے واجہ کارانی جہد اں من پہ ہمے کار ا درچنگ بوتن۔

 

بلے بلوچی اکیڈمی ئے بدبختی ات کہ اے زانت کارانی تگویں دیوان لہتیں وہد ا رندپرشت۔میر مٹھا خان مری، صورت خان مری، عطا شاد، وبازیں لبزانتاں بلوچ اکیڈمی آ رایلہ وات۔ بلوچی اکیڈمی ئے کار بیران بوت کہ چوشیں زانتکاراں چہ زبہر بوت۔

 

میر مٹھا خان بلوچی زبان ئے نامی ئیں ردانکار، شرگدار وپٹ وپول کنوکے۔ آئی سے کتاب نچیں نبشتگ کرتہ کہ اگہ اے کتاباں چہ پد ا بلوچی آ پ ہچی نبشتگ مکنت، ماں بلوچی زبان ئے تاریخا آئی نام مدام شروک مانیت۔

 

آئی سری کتاب ”توکلی مست“ انت۔ اے کتابا میر صاحبا بلوچی زبان ئے یک بے مٹتیں شاعرے ئے شعراں یک ہند کرتہ وآئی زندئے بارو ا سرجمی آ نبشتگ کرتہ۔ میر مٹھا خانا مست ؔ ئے ہرچی شعر دست کپتگ انت کتابا مان انت۔ بلوچی لبزانک ئے اے بے وروریں کتابے۔

 

ہمے پیما میر صاحبا دگہ بے مٹیں، نامدار یں و بلوچی جنگی شاعری ئے مزنیں شاعرے ئے بارو ا کتابے نبشتگ کرتہ۔ اے کتاب و شاعر ”رحم علی“ انت، رحم علی ئے بار و اہم میر صاحبا باز سرجمیا آنہی زند ئے حالا روانیں شیرکنیں بلوچی آ بیان کرتہ۔ ارمان ایش انت کہ رحم علی ئے شاعری ئے باز کمیں بہرے میر مٹھا خانا دست کپتہ۔ واہم، اے کتاب بلوچی ئے بے مٹیں کتابے۔

 

سیمی کتاب میر مٹھا خان ئے ”درگال“ انت کہ علامہ اقبال ئے زند،  شاعری وفلسفہ ئے بارو آ انت۔ اے کتاب ماں بلوچی آ علامہ اقبال ئے بارو ا سرجمیں کتابے۔اے قابل قدریں جہدے کہ میر مٹھا خان ئے ڈولیں مردمش کرت کننت۔ میر صاحبا وتی وسا باز جوانیں ڈولے آ علامہ اقبال ئے باروا و آئی شاعری و فلسفہ ئے بارو ا بلوچی ئے وانوکانا سئی وسرپند کرتہ۔میر صاحب اقبال ئے درستیں تکان ماں اے کتابا دلگوش بوتہ۔

 

چہ اے کاراں ابید میر صاحبا بازیں ردانک کاری کرتہ۔ کہ چہ بازیں وہداں ماں بلوچی ماہتاکاں چھاپ بوتگنت۔

 

میر مٹھا خان ئے بلوچی نبشتگ کتگ ئے بھیر سک روان، سادہ ا ووش انت کہ آئی زانتکاری ئے ڈسا دنت۔ میر صاحب ئے نگا ہ تیز و پکر جہلِ انت۔ اے حبرا آئی ردانکاری شری آ پدراکنت۔

 

میر مٹھا خانا ماں لغت ئے تکا ہم باز کارکرتہ۔سری لغات کہ ”بلوچی اردو“ لغات ئے ناما بلوچی اکیڈمی ئے نیمگا چھاپ بوتہ آمیر مٹھا خان و صورت خان مری ئے ہورین و سری جہدے۔ ہانکہ اے واجہ کار وت شہ وتی کار ا دلجم نہ انت واے لغاتا کم لیکھنت۔ بلے منی خیالا اے بلوچی لغات ئے ردا بنگیجی شریں جہدے ہانکہ اے لغات ئے لبز گیشتریک نیمگ ئے بزاں رو در اتکی و مگا چہ انت۔ پداہم رو در اتکی زبانا چونا سر پدان سر پد کنت۔ میر صاحبا عطاشاد ئے پجی آ اردو بلوچی“ ہفت زبانی“  لغاتان ہم کار کرتہ۔ اے کاراں ہم میر مٹھا خانا نام و توار ئے واوندکرتہ۔

 

ٹیلی ویژن ور یڈیو آ گوں میر صاحبا ہواریں پروگراماں بہر زورگ ئے وہد ا مردم چہ میر صاحب ئے پوہی وزانت کاری آ شری آ سئی بیت۔

 

میر صاحب ئے ملوکیں تب، صبرو تامُل و سگ آئر ا  ہر پیم ئے پٹ ؔ وپول کاراں اے کابل کرتہ کہ بایدات چہ آئی آ پہ بلوچ زبان ولبزانک ئے دیمر ہی آ گیشتر کار گرگ بوتیں۔بلے بلوچی زبان ئے کم بختی انت کہ میر صاحبا چشیں کارانی پیلوآ موہ دیگ نہ بوت.

 

 

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*