پولھو

 

آں باز چپیں ورنائے اث۔ چھو مان کاخت کہ آں ہمختر چپوئے کہ نہ وثی دڑدے حال داث کنت نئیں وثی اندری خوشی ئے ئا پہ کندی یا بشکندغے داث۔ آنہی طبیعت جکثیں چھاث آف ڈولا اث۔ اگر کسے ئا پھوڑے چغل داثیں دہ بے چول اث۔
مزائیں وختے گوئستہ من آنہیا را شہرا نہ دیثغ اث۔ مئیں خاصیں سنگتے دہ نیّث۔ اے ڈولیں مڑدم سنگتے دارنت یا کسے ایشاں را سنگت کنت، مئیں نغاہا چھی یے مشکلیں ٹونکے اث،پر گشنت کہ ہر کسارا کسے دروشم دوست بنت۔ لازمیں ٹونکے کہ چھی یے نہ چھی یے آنہی سنگت دہ بنت۔
جوائیں وختے ئا پذا من نوخ ورنائیں مڑدے دیثہ۔ درا شہ آختغیں نوخیں مڑدمانی پجارغ مزائیں کارے نئیں۔۔۔من ہجے کثو دیثہ تہ من پجھہ آڑتہ اے ہماں مڑدیں۔آنہیا دہ مناں دیثہ۔ من دیرواری ئا حیر مہر کثہ۔ من خیال کثہ مزائیں وختے ئا پذا چھڑو مئیں نہ بلکہ آنہی دروشم دہ بذل بیثغ اثنت۔لسویں دیم سرا برنگلیں ریش و جوڑاں شہ بڑزا براتھانی سیاہغ اث۔ ایشی تب و ٹونک دہ اولا شہ بذل بیثغ اث۔
چھیئے روش پذا مناں تری زاختا گشتہ کہ ”بیگھنا مئیں اوتاقا بیا! چھیئے سنگت پیذاغنت۔۔۔بٹاں جنوں!“ من بیگھنا شثغاں تہ تری زاخت سنگت ہماں مڑد اث۔”تری زاخت اے مئیں سنگت حنیفو ایں،اے مڑد گومن اواریا پڑھثہ۔۔۔!“ من اولی دھکا ایشی نام اشکثغ اث۔مناں اے دہ سما نیّث کہ تری زاخت ئے کلاس فیلو ایں، ہماں روشی اے مڑد من دیثہ تہ من ایشی ئے اولی دروشم شموشتغ انت چھیاپکہ اولا اے مڑد چپوئینے اث۔۔۔مرشی تری زاخت و تھی سنگتاں گوں کند رہلایا سیر سرا کنغ اث۔ من وثی اندر شوہاذانی تھلا کپتغاں کہ اے چوں بیث بی مڑدمے عادت بذل بنت۔ گشے کہ ما ماستریں مڑدم دروغاں بندوں چکھاں را گشوں کہ ”رنگ بذل بی عادت بذل نہ بنت۔۔۔!“
پذا اے مڑد شہرا ڑہ نہ شثہ۔۔۔۔ایشی ئا رامن ہرّو کندانا دیث۔۔۔ایشی گندغا گوں،من سوچانی لافا کپت اثاں۔ من روشے ئا تری زاختا ڑہ پول کثہ کہ۔۔۔۔”آخر چوں حنیفو بذ ل بیثہ؟“تری زاختا حال داثہ کہ”یونیورسٹی زیند انسانا را باز بذل کنت،حنیفو یا گوں دہ ہمے رنگا بیثہ۔ حنیفو ئا لو میرج کثہ۔۔۔آنہی بذل بیئغا گوں آنہی زال ئے کرداریں۔۔۔!“من ہمے خیالانی تھلا کپتغاں کہ اے رنگیں حالاں انسانی طبیعت بذل بیث کننت۔
حیر نی اے ٹونک کہن بیثہ۔ تری زاختا گوں حنیفو لوغا آخت روغ بیئغ اث۔آنہی طبیعتا ڑہ چھو مان کاخت کہ آں چھیئے پریشانیں، اے مزائیں ٹونکے نیّث عمھیر گوئزغا گوں انسان ئے ذمہ داری و کار آنہیا را پریشان کننت۔۔۔۔!
پریشانیاں ڑہ باوجود دہ حنیفو او تری زاخت کند رہلا کننت۔۔۔! من ہڑدوئیناں گنداں، دروغیں بشکندغے دیاں۔!وختے مئیں سرا ٹونکے کننت۔”گند ماسٹرا۔۔! قسمتی ٹونکے کنت !“تری زاخت ٹونک ہماں اولی ایں کہ مئیں سرا گھڑثو گون انی۔۔”ماسٹرا چکاں گوں مغز جثو واڑتہ۔۔نی ایشی ئا را مغز نے کہ ٹونکے کنت۔۔! اے کندنت تہ من دہ ایشانی سنگتی ئا کندغ ٹہکائے جناں۔۔!
روشے ئا من گوں تری زاختا حنیفو لوغا شثغاں۔۔۔حنیفو ئا نغن آڑتغ اث۔۔۔تری زاختا نغنانی سرا سیاہ ح±شک دیثو حنیفو ئا گوں رہلایا کنانا گشتہ”حنیفو! تھئی لوغا پولھو نیستیں چھے؟“ حنیفوئا پھسو داثہ ”پولھو تہ استیں پر پھشوخ دیما مہنٹثی ایں!“ تری زاختا کندغ بستہ پر من حنیفو انیشغ دیثغ اث، آں ڈسغ اث کہ اے کند رہلائی ٹونکے نیّث۔۔۔! لوز پولھو ئا مہر ئے آنسر پھیداشتغ اث۔۔۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*