آگ اور برف کے درمیاں

 

دھواں ہے یا بادل
یہاں سر کے پچھلی طرف
کوئی شے پھیلتی ہی چلی جا رہی ہے
تناؤ۔۔۔۔ مسلسل تناؤ۔۔۔
ہٹاؤ مرے سامنے سے یہ لوگوں کا لشکر۔۔
یہاں بھیڑ کتنی ہے۔۔۔۔ ہنستا ہے کوئی۔۔۔
مرا غم تماشا نہیں میں اگر چیخ دوں
تو زمیں اپنی باہیں مرے واسطے کھول دے
آسماں گر پڑے۔۔۔
بند کر دو، بجھا دو یہ ہنسنے کی آواز۔۔۔
بادل کو روکو۔۔۔ جو سر کی نسوں میں اترتا چلا جا رہا ہے
خراشیں جماتی ہے سانسوں کی تلوار۔۔۔
چبھتی ہے سینے میں۔۔۔۔
دنیاالٹنے لگی ہے
یہ متلی۔۔۔ یہ اینٹھن۔۔۔
یہ کالی بلا کیوں رگیں نوچتی ہی چلی جا رہی ہے
کوئی تیز سیٹی کی آواز روکو
یہ دھرتی لرزنے لگی ہے
بہت سرد پانی کی گہرائی۔۔۔شعلے۔۔۔ بھڑکتے ہوئے سرخ شعلے۔۔۔ بجھا دو۔۔۔
مرا خون پینے لگی ہے
بچا لو مجھے اس بلا سے
مرے سر سے بادل کی کرچی نکالو۔۔۔
مجھے آگ میں آگ بننے سے پہلے بچا لو۔۔۔۔
مجھے برف کے ڈھیر میں ڈھیر ہونے پہلے اٹھا لو۔۔۔
اٹھا لو۔۔۔ اٹھا کر گلے سے لگا لو ۔۔۔
مجھے تم بچا لو۔۔۔۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*