*

بارگیں عُذرے بہ بَکشئے یا دگہ دردے پہ رَا
نِی تو ءُ تئی منصفی ءُ یار تئی کوہیں رضا

پٓلّویے اَرسے شہ عیناں پَلّویے آہے جزا
نِی ہما روچے مہ گردی کہ من گیراروں ترا

چاکر ءَ رِندی حسّد ءُ کِینگاں حونی کُتہ
اَنگہ براتی جیڑواں ہیسکارگا اِنت سَتگڑا

پیسر ءَ مِہراں مُلوکیں دل مئے تاراج اِت اَنت
گِلّو اِنت میراں نِی اَچ من ‘ زَہر گرداں من جُدا

محرمے ‘ نہ مردمے دوستیں ‘ نہ یادی ولّرے
من اُوں ویراناں چو تئیگا لا شریکیں اے حُدا !

 

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*