درد

درد کی کوئی شکل مُرتّب ہو پاتی تو
درد کوئی آہو ہی ہوتا
درد کوئی قطرہ ہوتا تو
ممکن تھا آنسو ہی ہوتا
درد کی کوئی شکل مُرتّب ہو پاتی تو
درد دِیا یا مندر ہوتا
درد مسیت یا کوئی گرجا یا پِھر شاید منبر ہوتا
درد کوئی موسم ہوتا تو پَت جَھڑ ہوتا
درد کوئی معمورہ ہوتا
تو ممکن تھا سَتگھر ہوتا
درد ملک میراں یا شاید چاکر ہوتا
درد کی کوئی شکل مُرتّب ہو پاتی تو
درد قلندر ‘ وارث ‘ بُلّھے ‘ شاہ لطیف یا باھو ہوتا
درد مُرید یا جاڈو ہوتا

درد کی کوئی شکل مُرتّب ہو پاتی تو
درد کوئی بھکشو ہی ہوتا
یا مُجھ سا بابو ہی ہوتا
درد کی کوئی شکل مُرتّب ہو پاتی تو

 

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*