شئیر

 

روچے کہ من تو یارتیں
یک دومی آ گموارتیں
مہرئے ذراَ گم گارتیں
دل پہ دلاَ بے سارتیں
ہر چے کہ تو واہارتیں بے مہتلی من بیارتیں۔

نوں آ دماناں تو شموش
آ پیشی تراناں تو شموش
عہد و کراراں تو شموش
پلیں نیاداں تو شموش
وھدےکہ دل پلگارتیں روچے کہ من تو یارتیں۔

یل دات عالم من تمام
ہم دین وہم دنیا او نام
بوتاں تئی د±رگوشیں گلام
تہنا ستا انت تئی مدام
تئی گرستے من مارتیں روچے کہ من تو یارتیں۔

سر شت منی بیگواہ بوت
بازیناں زار واہ بوت
نئی کہ ترا پرواہ بوت
شکراِنت تئی جنددراہ بوت
دائم وت ات گیمارتیں روچے کہ من تو یارتیں۔

نوں کہ پرنگا َ نشتگاں
ہر چیزے آ َ سر گوئستگاں
لجّ ئے دسگ من سستگاں
البت کہ تو پِر بستگاں
موجیں دل ات پلگارتیں روچے کہ من تو یارتیں .

نوں بے منیگی شرترئے
ہر کاری آتو گہترئے
زندئے گراں زانو گرئے
پیش چہ اشی کہ ہوژگرئے
آ دوشی ات ہم مارتیں روچے کہ من تو یارتیں۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*