ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : ستمبر 2020

غزل

اب ایک دوسرے کی ضرورت نہیں رہی جب فاصلے نہیں تو محبت نہیں رہی اس گھرسیاب یہ نقل مکانی کاوقت ہے دل میں اگر کسی کی سکونت نہیں رہی آغازِ عشق میں بڑے ثابت قدم تھے ہم اب وہ شکست و ریخت سلامت نہیں رہی جتنے بھی جاں نثار تھے ...

مزید پڑھیں »

غزل

مھربان تئی مھر داں کجائیں ما ھَم بزان اِنہ گشے تئی بے وپائی روچ مہ روچ گیش بیان اِنہ وپا آں مئے بے وپا پراموش اِنت اَنچوش اڈیت گوں سنگے ء َ سرا مئے زھر وران اِنہ اپ مباتاں تئی انارکانی اناریں رنگا کہ چادر تئی سیاھیں سْھریں رنگ چنان ...

مزید پڑھیں »

ایرانی شاعرہ کی ایک نظم‎

میں کہ اک شادی شدہ عورت ہوں میں کہ اک عورت ہوں ایک ایرانی عورت رات کے آٹھ بجے ہیں یہاں خیابان سہروردی شمالی پر باہر جا رہی ہوں روٹیاں خریدنے کو نہ میں سجی بنی ہوں نہ میرے کپڑے جاذب نظر ہیں مگر یہاں سرعام یہ ساتویں گاڑی ہے ...

مزید پڑھیں »

خواب کی شیلف پر دھری نظم

گر سمندر مجھے راستہ دیتا تو سفر کرتی اس قندیل کے ساتھ جو شام کا ملگجا پھیلتے ہی ساحل پر روشن ہو جاتی ہے اڑتی ققنس کے ہمرکاب افق کی مسافتوں میں تیرتی مچھلیوں کے سنگ کھوجتی ریگ زاروں میں نیلگوں پانیوں کو سرمئی پہاڑوں میں جادوئی سرنگوں کو لیکن ...

مزید پڑھیں »