ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : اگست 2020

Trimmers

St Augustine turf is best when you want to help make your garden search very g Its value is in the midsection for pot and give merchandise roughly, while its highly-effective solution is excellent at controlling weeds. The powerful engine means that you get increased cutting speed and can perform ...

مزید پڑھیں »

ڈاکٹر سلیم الزماں صدیقی پر ڈرامہ نہیں بن سکتا!

’’کیا مشہور پاکستانی سائنسداں، پروفیسر ڈاکٹر سلیم الزماں صدیقی کی زندگی پر ڈرامہ نہیں بن سکتا؟‘‘ یہ سوال گزشتہ دنوں کراچی ادبی میلے (کے ایل ایف) میں ’’پاکستانی ڈرامے کا عروج و زوال‘‘ کے عنوان سے ایک نشست میں کسی خاتون نے کیا۔ اسٹیج پر براجمان، نابغہ روزگار پاکستانی ہدایت ...

مزید پڑھیں »

‎غزل

سامنے اک دوسرے کے کوئی بھی آتا نہیں ‎پھول اور خوشبو کے نظّارے میں آئینہ نہیں ‎پڑھ لیے ہیں غور سے یادوں کے مٹتے حاشیے ‎ داستانوں میں کسی کا نام بھی لکھا نہیں ‎ دور جانا چاہتا ہوں دل کے قبرستان سے ‎پر یہاں سے سیلِ یادِ رفتگاں جاتا ...

مزید پڑھیں »

کتا

صبح کافی دیر تک سونے کے بعد وہ بے دلی سے اٹھا ۔ اسے اپنا سر بھاری سا لگنے لگاتھا۔ جیسے اس پر بھاری وزن لاد دیا گیا ہو۔ رات کو شراب بھی کچھ زیادہ ہی ہو گئی تھی۔اسنے سستی دور کرنے کے لئے انگڑائیاں لیں، تبھی اسکی نظر کھڑکی ...

مزید پڑھیں »

غزل

(یہ غزل  ہیمنگوئے  کے  مشہور ناول  دی اولڈ  مین  اینڈ  دی  سی‘  سے  متاثر  ہو  کر  لکھی ہے)۔ ارنسٹ  ہیمنگوئے  کے  لیے دکھ  سکھ  دونوں  جھیل  چکے تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ساحل   پہ   اکثر    ملتے    تھے   ،    بوڑھا   اور  سمندر وقت کی  کھڑکی  میں  بیٹھی تھیں حیرانی  کی  جل  پریاں دو  شہزادے  ساتھ  کھڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ماتھے  پر  لہریں  تھیں  جیسے   اور  لکیریں   پانی  میں دو   ملتے   جلتے   چہرے   تھے  ،   بوڑھا  اور  سمندر سدا  بہار  جوانی   جانے  کب   لہروں  سے   نکلے  گی سب حیرت سے سوچ رہے تھے ،  بوڑھا اور سمندر  ! سورج  اور  سیاروں  نے  جب  پہلی  پہلی  ہجرت  کی اک  دوجے  میں  ڈوب  چکے  تھے ،  بوڑھا  اور  سمندر صبح  سویرے   دونوں  مل   کر  اپنے  آنسو   پیتے   تھے رات کے  سارے  دکھ سانجھے  تھے ،  بوڑھا  اور سمندر  صدیوں  کی  رفتار  کو  اک  لمحے  کی  تھکن  نے  زیر  کیا وقت سے ٹھوکر  کھا کے گرے تھے  ،  بوڑھا  اور سمندر شام  کو  جب  طوفاں  تھما  تو  دیکھا  بستی  والوں  نے ریت  پہ  دونوں مرے  پڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر

مزید پڑھیں »

غزل

(یہ غزل  ہیمنگوئے  کے  مشہور ناول  دی اولڈ  مین  اینڈ  دی  سی‘  سے  متاثر  ہو  کر  لکھی ہے)   ارنسٹ  ہیمنگوئے  کے  لیے دکھ  سکھ  دونوں  جھیل  چکے تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ساحل   پہ   اکثر    ملتے    تھے   ،    بوڑھا   اور  سمندر وقت کی  کھڑکی  میں  بیٹھی تھیں حیرانی  کی  جل  پریاں دو  شہزادے  ساتھ  کھڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر ماتھے  پر  لہریں  تھیں  جیسے   اور  لکیریں   پانی  میں دو   ملتے   جلتے   چہرے   تھے  ،   بوڑھا  اور  سمندر سدا  بہار  جوانی   جانے  کب   لہروں  سے   نکلے  گی سب حیرت سے سوچ رہے تھے ،  بوڑھا اور سمندر  ! سورج  اور  سیاروں  نے  جب  پہلی  پہلی  ہجرت  کی اک  دوجے  میں  ڈوب  چکے  تھے ،  بوڑھا  اور  سمندر صبح  سویرے   دونوں  مل   کر  اپنے  آنسو   پیتے   تھے رات کے  سارے  دکھ سانجھے  تھے ،  بوڑھا  اور سمندر  صدیوں  کی  رفتار  کو  اک  لمحے  کی  تھکن  نے  زیر  کیا وقت سے ٹھوکر  کھا کے گرے تھے  ،  بوڑھا  اور سمندر شام  کو  جب  طوفاں  تھما  تو  دیکھا  بستی  والوں  نے ریت  پہ  دونوں مرے  پڑے  تھے  ،  بوڑھا  اور  سمندر عابد  رضا دوسری  غزل  بھی  یونہی  ارسال  کر  رہا  ہوں۔  آپ  کو  پسند  آئے تو  اگلی  بار  کے  لیے  رکھ  لیجیے۔ صبر  کے  دشت  میں  اُگ  آئی  ہے  فریاد  کی  رات جانے  کب  گزرے  گی  اس   قریۂِ   برباد   کی  رات آسمانوں     سے     برستے     ہوئے   ...

مزید پڑھیں »

مسرت

اٹھارویں صدی کا جام ( درک) محبوبہ کو دیکھ کر: موژیں دل منی باغ بیثا یک شاخا ہزار شاخ بیثا ہر شاخا وتی گل بیثا گلاں تازغیں رنگ بیثا میرا موجی دل باغ باغ ہوگیا ہر شاخ کے ہزار شاخ ہوگئے ہر شاخ کا اپنا پھول ہوگیا پھول تازہ رنگوں ...

مزید پڑھیں »