ماہانہ محفوظ شدہ تحاریر : جولائی 2020

دم گھٹتاہے

ہتھکڑیوں اور طوق سے بڑھ کر بھاری بوجھ گھونٹ رہا ہے دم میرا ماں سانسیں میری روک رہا ہے دم گھٹتا ہے ماں آہ یہ گھٹنا کیوں نہیں ہٹتا صدیوں کے ہر ظلم سے بھاری اس کا گھٹنا میری سانسیں روک رہا ہے آہ مجھے یہ مار رہا ہے ماں ...

مزید پڑھیں »

جنین ئے زندگی او مئے عجبیں دنیا

مئے دنیا بلاہیں، مئے دنیا ءَ چہ منی مطلب بلوچستان۔۔۔ بلوچستان مزن انت۔۔۔ بزانکہ سئے بلوچستان۔۔۔ ہما بلوچستان کہ افغانستان ءُ ایران ءَ انت آیانی چاگردی زند ءِ باروا منی کِرّا سرپدی نہ بوہگ ءِ برابر انت۔ منی دل ءِ مراد بوتگ کہ من بگرداں، اے جاہاں بگنداں، بلے کسانی ...

مزید پڑھیں »

میں عورت ہوں

زخم دل،اشک اور یہ لب کسں قدر ویران ہوں میں کیا ہوں۔۔۔۔۔؟ کیوں ہوں میں۔۔۔۔۔؟ سخت پریشان ہوں میں پری پیکر ہوں یا بسں نشان کہیں بے سخن، بے کلام ہوں میں کیا ہوں۔۔۔۔۔؟ کیوں ہوں میں۔۔۔۔؟ سخت پریشان ہوں میں… کئی گمنام القاب ہیں پیوست کئی خیال میرے نازاں ...

مزید پڑھیں »

چشم بینا

ہم ماں، باپ اور بہن بھائی کے علاوہ بھی بہت کچھ ہیں؛ اس کا احساس گواہیوں کے زمانے سے قبل ہو جائے تو تمام گواہیاں سچ ہوں اور گناہ کی جھولی خالی برتن جیسی پڑی رہے گی۔ بس ایسی صورت میں مالک جو چاہے اپنی freewill سے اس کی بھرائی ...

مزید پڑھیں »

امن

۔ بہت سال بیتے ہمارے گھر میں ایک رسالہ چین با تصویر کے نام سے آیا کرتا تھا۔ اس کے ایک شمارے میں ٹرین کا ذکر تھا جو شنگھائی سے کینٹن جا رہی تھی۔ لمبا سفر تھا راستے میں طلوع آفتاب کی گھڑی آئی۔ ٹرین کو روک دیا گیا اور ...

مزید پڑھیں »

چیخ سے چیخ تک

صبح صادق کا وقت ہے، آسمان کے سینے پر چھائے بادل اپنی سرخی سے سورج کی آمد کی اطلاع دے رہے ہیں۔ وہ حویلی میں ادھر سے ادھر بے چینی سے پھر رہی ہے اور ایسا لگ رہا ہے کہ اس پر ایک عجیب خوف و ہراس کا غلبہ ہے۔ ...

مزید پڑھیں »

ضیاء کا مارشل لاء ، مائنس ون اور پھلجڑیاں

حقیقت فقط اتنی ہے کہ گزرے اتوار کی صبح اُٹھا تو احساس ہوا کہ آج 5جولائی ہے۔اس حوالے سے جولائی 1977کی یاد آگئی۔ذہن میں کسی فلم کے سین کی طرح وہ لمحات گھومنا شروع ہوگئے جب تین ’’دانشور‘‘ بزرگوں کے ہمراہ بیٹھ کر جنرل ضیاء کی ’’میرے عزیز ہم وطنو…‘‘ ...

مزید پڑھیں »