Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » غزل ۔۔۔ بلال اسود

غزل ۔۔۔ بلال اسود

کسی بھی شخص کے شانے پہ بار ِ غیب نہیں

لگی ہے بھیڑ انا کی، قطار ِغیب نہیں

 

نظر کے سامنے کم ہے زیادہ اوجھل ہے

حسابِ ہست ہے ممکن، شمار ِغیب نہیں

 

ہماری روح کی کیسے ہو آب یاری، یہاں

پناہِ نفس میسّر، جوار ِ غیب نہیں

 

ہمیں اجل جو بلاتی ہے وقتِ شام، اِسے

صدائے خاک سمجھیے، پکار ِغیب نہیں

 

خدا خفا ہے زمیں سے، زمین والوں سے

یہ وہم ِ قلب ِ بشر ہے، غبار ِ غیب نہیں

 

ملی تھی ہم کو جو دنیا بہ اسم ِموسیقی

ہے اس پہ صور مسلط، ستارِ غیب نہیں

 

یہ لفظ مان لو غائب کا استعارہ ہے

یہ کہکشائیں، فلک اور ستارے غیب نہیں

 

چہار سمت سے مجھ پر ہے نور کی بارش

میں مرکزے میں ہوں اسود، کنارِ غیب نہیں

Check Also

بانجھ بنجھوٹی ۔۔۔ انجیل صحیفہ

میں نے  کثرت سے آنکھوں کی بینائی خوابوں پہ خرچی ہے سو آنکھ اب کوئی ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *