Find the latest bookmaker offers available across all uk gambling sites www.bets.zone Read the reviews and compare sites to quickly discover the perfect account for you.
Home » شیرانی رلی » ملک الموت سے ایک مکالمہ ۔۔۔ رضوان علی

ملک الموت سے ایک مکالمہ ۔۔۔ رضوان علی

کیا تجھے ہے خبر

کتنی چپْ

کس کے اندر

کہاں قید ہے؟

میرے کتنے  نئے روپ  ہیں

کتنی سانسیں ابھی چل رہی ہیں

مرے  دل کی اس تھاپ پر

کتنے چہروں پہ جا کے رکی ہے نظر

کتنے پیروں میں ٹہرا ہوا ہے سفر

 

میں ازل سے ابد تک ہوں پھیلا ہوا

میں وجود و عدم  سے کہیں دْور ہوں

 

لے لہو کی مرے بھینٹ لے

مجھ کو مسمار کر

میرے ٹکڑوں کو جاکر کہیں پھینک دے

یا جَلا دے مجھے

 

اپنی مٹھی میں بھِینچے میَں خاکِ نمو

بس ذرا دیر میں

پھر سے اْٹھ جاؤں گا

 

میں ستاروں پہ واپس چلا جاؤں گا

پھر سے آکے بساؤں گا تازہ جہاں

پھر سے آکے جگاؤں گا تارِ نَفَس

پھر سے کْن کی سناؤں گا مَیں داستاں

 

میں کہ مَٹی سے نکلا ہوا پْھول ہوں

میں کہ پانی کے قطروں میں ہوں منجمد

میں کہ تاروں کی بکھری ہوئی دْھول ہوں

 

تو وباؤں کے گرداب کا

کوئی چکر چلا

جا کے تحت الثریٰ

کوئی آسیب لا

 

تو مجھے ختم کر ہی نہیں پائے گا

Check Also

کورا کاغذ! ۔۔۔  امداد حسینی

(“آصف فرخی“ کے لیے)   وہ جو کورا کاغذ میز پر پڑا ہوا ہے اس ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *